Let we struggle our way

Archive for the ‘isi’ Category

The Occupying States’ Ongoing Crimes in Baluchistan

In abductions, baloch, Disappearences, FC, isi, mi on February 7, 2011 at 12:05 pm
The Occupying States’ Ongoing Crimes in Baluchistan

(International Voice of Baloch Missing Persons )


In the artificially structured boundaries of the states of Pakistan and Iran one thing that has no value is human lives. Both states are equipped to their teeth with modern armaments, Jihadist mercenaries and a medieval religious creed. They have used this cocktail of destruction to justify their untold atrocities. The Baluch people under illegal occupation of these unruly states have been among those who have suffered the most. Many hundreds and thousands of Baluch political and social activists have been abducted, displaced, tortured, disappeared and killed by these occupying states.

Enforced disappearance has become the daily experience of Baluch people living under occupation of these Islamic fundamentalist states. Over 8,000 Baluch activists have been abducted and disappeared in Eastern occupied Baluchistan since the year 2000. Families of these victims are not provided with any information about the missing persons. The families are threatened by security forces with dire consequences if they highlight the plight of their loved ones. From the last six months Pakistani state and military establishment have altered their policy about the abducted Baluch political and human rights activists. They have been imitating the policy of their replica counterpart, the Islamic regime of Iran. Ever since its creation, the Iranian Islamic government has been employing the ‘kill and dump’ policy against many of its opponents.

As result of this policy from July 2010 up to the present day Pakistani military agencies have killed and dumped over 100 Baluch activists. The victims of this policy for the year 2011, which barely a month is passed, are over 15 persons.

On 3 January 2011 five Baluch youths after leaving a public meeting were followed and attacked by Pakistani agencies in Karachi. Faraz Baluch, a member of BSO-Azad died in hospital from his injuries and Bilal Baluch, Umair Baluch, Salman Baluch and Saddam Baluch were kept under intensive care and survived this vicious attack.

On 4 January 2011 Pakistani security forces abducted Haji Nasir, and two teenage students, Ehsanullah and Khair Jan in Gawader. On the same day the severely tortured bodies of two prominent young Baluch political leaders were found in Pedarak area of Turbat. The victims were identified as Qamber Chakar Baluch 24 and Ilyas Nazar Baluch 26. Both victims were MSc students and a member of BSO- Azad. Qambar Chakar was abducted by Pakistan secret forces before on 10 July 2009 but was released without any charges on 22 April 2010. He was re-abducted on 26 November 2010 from Shai Tump Turbat. Ilyas Nazar Baluch was a Journalist for a Baluchi language magazine Dhorant. He was abucted on 22 December 2010 from a coach at Badok near Pasni.

Mohammad Sadiq Langov was abducted on 12 January 2011 and the bullet-riddled bodies of two Baluch traders, Taj Mohammad Marri and Meer Jan Marri were found from Bal Ghatar area of Panjgur on 8 January 2010. Pakistani security forces shot dead Sarvar Jamaldini and injured his companion in the same day in Taftan.

On 15 January 2011 Hashim Baluch, another Baluch teenage student, was abducted from an internet cafe in Hub. In the same day the body of the teenage member of BSO-Azad, Zakaria Zehri was recovered from Soorab area of Kalat. He was only 15 years old and was missing for over a month. Another victim whose body was recovered on the same day was Ghulam Hussain Mohammad Hasani. His body was found under a bridge in Singdaas area of Kalat.

The body of Mumtaz Kurd was found in Mastung on 20 January 2011. The two bodies of Baluch missing persons, Ahmed Dad Baluch and Naseer Kamalan, were found near Syedabad 23 miles away from Ormara on 17 January 2010. Ahmed Dad Baluch was abducted on 3 October 2010 and Naseer Kamalan on 5 November 2010. Both victims were well known Baluch political leaders. Naseer Kamalan was a senior leader of Baluch National Movement and he was also an inspiring Baluchi language poet. On the same day of discovery of the bodies of these two Baluch political leaders, Pakistan Frontier Corps (FC) attacked Kashi Nulla area of Dera Bugti. During the attack they killed Shakeel Baluch and injured and arrested Gabro and Sabz Ali Baluch.

Pakistani security forces raided the house of Mr Awal Khan Bugti on 21 January 2011. As he was not at home at the time of the raid Pakistan military officials abducted his wife Mai Hanifa.

Mohammad Azam Baluch was abducted by Pakistani secret agencies around 20 January 2011 from Suraab and his bullet riddled body was found near Kalat in Marjan National Highway on 25 January 2011. On the same day Abdul Rauf Qambari was abducted from Wahero area of Wadh in Balochistan. Abdul Rauf is the cousin of Waheed Qambarani, a Baluch teacher, whose mutilated body was found a month earlier.

On Monday 24 January 2011 four more Baluch youths were abducted from Tasp area of Panjgur. They were named as Waqeer, Shamsheer, Sagaar and abdul Malik. These teenage Baluch students were released few days after suffering violent physical and psychological ordeal. A day earlier, on 23 January 2011 the body of Ali Jan Kurd was recovered from Aktharbad area of Quetta, the capital of Balochistan. He was abducted by Pakistan security forces on 23 November 2010 near Sibbi. Ali Jan Kurd was only 18 years old and was a regional president of Baluch Students Organization – Azad.

Two lifeless Baluch youths were recovered on Thursday morning of 27 January 2011 in Gwargo area of Panjgur. The youths were shot and severely tortured. One of the victims, Abid Rasool Baksh Baluch a 17 year student and member of BSO-Azad, was already dead but Nasir Dagarzai was still alive. These two Baluch students were abducted along their fellow students Mehrab Baluch and Abid Saleem Baluch from the residence of Naser Dagarzai Baluch on 23 January 2011.

On 4 February 2011 three bodies were recovered from Khuzdar. The victims were identified as Hamid Issazai, Lal Khan Sumalani and Mir Khan Sumalani. Few days earlier also, on 1 February, the body of the Baluch popular singer Ali Jan Issazai was discovered in Kanak area of Khuzdar. Ali Jan and Shahzad Nadeem were abducted by Pakistani secret agencies from a hotel in Quetta on 10 January 2011.

The occupying states have increased their systematic brutality against the Baluch to an alarming level. Baluch children are not even spared from the wrath of the fundamentalist states of Iran and Pakistan. In the Western occupied Baluchistan, Amin Noraee a 16 year student was killed by the Islamic regime of Iran security forces in 1980 in Sarawan. Another teenage Baluch political activist, Khosro Mobarki, was arrested and after enduring months of torture was executed in 1981. In March 2008 Iranian security abducted Ebrahim Mehrnehad age 16. Ebrahim is the brother of Baluch journalist and civil rights activist Yaguob Mehrnehad who was executed by the Iranian government on 4 August 2008. Another Baluch child who has been abducted by the Islamic regime security forces is Mohammad Saber Malk Raisee. At the time of his arrest on 24 September 2009 he was only 16 years old.

In the Eastern occupied Baluchistan the Pakistani rulers have launched an open war against the Baluch youths and children. Large number of Baluch political and human rights activists who have been made disappeared tortured and killed have been among Baluch children.

In addition to the names of the Baluch youths cited above, Pakistani security forces abducted 17-year old Jamal Baluch on 4 October 2010. He was injected with unknown substance and subjected to extreme torture to such an extent that he has become partially paralyzed.

Abdul Majeed Baluch, a member of BSO-Azad was abducted by Pakistani Frontier Corps on 18 October 2010. Pakistani security forces murdered him and dumped his tortured body in the Koshak River at Khuzdar district on 24 October 2010. Another Baluch child and political activist, Mohammad Khan Zohaib was abducted in July 2010 by the same agencies. His mutilated body was found in Khuzdar on 20 October 2010. They were both 14 years old.

The house of Mir Ayub Gichiki was attacked by occupying security forces on 1 December 2010. In the attack Pakistani forces killed five Baluch political activists in the house. Among the victims were two of Mr Gichiki’s teenage sons, Murad Jan and Zubiar Gichki.

This policy is the natural outcome of the forceful occupation of Baluch homeland and the resistance of the native Baluch against occupying states. The most valuable assets of a society are its inspiring and forward-looking children. Premeditated and systematic infliction of pain to the tender body of a child and then murdering him or her in the most gruesome way, by organised state sponsored military forces, is only done and justified by these and similar occupying fundamentalist fascist states. We urge all Baluch to recognise the gravity of situation in Baluchistan and get united to put an end to occupying state barbarism against our people and children.

Advertisements

شہید علی جان بلوچ – میں کس کے ہاتھ پہ اپنا لہو تلاش کروں

In Baloch Freedom movement, Baloch genocide, FC, isi, mi on January 24, 2011 at 3:52 am
شہید علی جان بلوچ – میں کس کے ہاتھ پہ اپنا لہو تلاش کروں
تحریر نواز بگٹی
آج پھر بلوچ شہداء کے قافلے میں ایک اور معصوم علی جان بلوچ کا اضافہ ہوا – اطلاعات کے مطابق ، آج صبح کوئٹہ کے نواحی علاقے اختر آباد کے قریب ایک اٹھارہ سالہ نوجوان کی مسخ شدہ لاش ملی ، جسے مقامی پولیس نے بولان میڈیکل کالج ہسپتال منتقل کیا – ہسپتال ذرائع کے مطابق متوفی کے جسم پر شدید تشدد کے شواہد ملے ہیں ، اور سر میں گولی کا واضح نشان بھی دیکھنے میں آیا ہے – بعد ازاں متوفی کی شناخت مچھ کے رہائشی  بی-ایس-او آزاد کے شہید راہنما ممتاز کرد کے چھوٹے بھائی کی حیثیت سے ہوئی – متوفی کو خفیہ اداروں نے  گزشتہ سال 23 نومبر کو سبی سے گرفتار کیا تھا – واضح رہے کہ متوفی کے بڑے بھائی ممتاز کرد کو بھی اسی انداز میں خفیہ اداروں نہیں گرفتار کر کے اپنی عقوبت گاہوں میں شدید تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد اس کی مسخ شدہ لاش بے گور و کفن سڑک کنارے پھینک دیا تھا –
18 سالہ علی جان کا گناہ شاید بلوچ ہونا ہی تھا ، ورنہ ایک معصوم بچہ پاکستان کے تخت و تاج کے لئے اتنا خطرناک تو یقیناً نہ تھا کہ بغیر کسی عدالتی کاروائی کے اسے یوں قتل کر کے لب سڑک پھینکنے کی ضرورت محسوس ہوتی – نام نہاد پاکستانی میڈیا بلوچ نوجوانوں کے گمراہ ہونے اور انکا غیر ملکی ہاتھوں میں کھیلنے کا پروپگینڈہ بہت زور شور سے کرتی ہیں – کیا ان کے پاس اس طرح کے بہیمانہ نسل کش اقدامات کے بعد کوئی توجیہ موجود ہے کہ علی جان بلوچ کے ورثاء و رفقاء کیونکر پاکستان زندہ باد کا نعرہ لگائیں- علی جان بلوچ کے ہم جماعت کیونکر اپنے اسکول میں پاکستان کا قومی ترانہ گائیں، اور پاکستان کے پرچم کو سربلند دیکھنا ان کے لئے نا ممکن نہیں؟ یہ قتل ہندوستان کی را یا امریکی سی-آئی-اے کا کارنامہ نہیں بلکہ آپ کے ریاستی اداروں کی سیاہ کاری ہے-
آج حضرت داتا گنج بخش کا عرس منانے والے منافق کیا جانتے ہیں کہ داتا صاحب انکے کارناموں سے کتنے خوش ہو کر فردوس برین میں بھنگڑے ڈال رہے ہونگے – شاید اس بے حس قوم پر لعن تعن کرنا بھی شاید فضول ہی ہے –
علی جان  بلوچ کی والدہ کے غم میں شریک ہونا اور اسے کم کرنا تو شاید کسی زی روح کے بس کی بات نہیں ، اور اسے زمانے کی ستم ظریفی کہیے کہ اس موقع پر بھی اسے بیساختہ مبارکباد دینے کو جی کر رہا ہے کہ یہ اسی ماں کا اعزاز ہے جس کی کوکھ سے دو دو شہیدوں نے جنم لیا –  ہم ایسے بے وقعت لوگوں کے سلام کی وہ محتاج تو نہیں ، پھر بھی انھیں فرشی سلام –
الله کرے بلوچ قوم اپنے اس معصوم لہو کا پاس رکھتے ہوے اپنی جدوجہد کو مزید تیز کر دے ، تا کہ پاکستان کی وحشی ، درندہ صفت ، غیر انسانی ریاست سے نجات حاصل کر پائیں – تا کہ اپنی آئندہ نسلوں کو ان کی چیرہ دستیوں سے محفوظ رکھ سکیں –

ھون زرور کار ءَ کئیت یک روچے مئے قوم ءِ –  تاوان نہ بنت ھچبر نازیک مئے ماسانی

کہاں تک سنو گے – کہاں تک سناؤں

In Baloch genocide, Disappearences, FC, isi, mi on January 18, 2011 at 3:30 am

کہاں تک سنو گے – کہاں تک سناؤں


تحریر نواز بگٹی

آج کا دن صبح ہی سے بلوچ عوام کے لئے غم و اندوہ کا سامان لئے ہوۓ تھا ، جب پہلی خبر ڈیرہ بگٹی سے شکل بگٹی کی غاصب فوج کے ہاتھوں شہادت کی خبر آئ – ابھی دہشت زدہ ہی بیٹھے تھے کہ پچھلے دنوں کوئٹہ کے ایک مقامی ہوٹل سے گرفتار کیے جانے والے دو نامور بلوچ گلوکاروں ، علی جان ثاقب ، اور شہزاد ندیم کی مسخ شدہ لاشیں بیسیمہ کے پاس سڑک کنارے مل گئیں – ماتم کناں آنکھوں کی نمی خشک ہونے ہی نہیں پائی تھی کہ اورماڑہ کے پاس گزشتہ دنوں اغوا کیے گۓ دو بلوچ رہنماؤں نصیر کمالان ، اور احمد داد بلوچ کی مسخ شدہ لاشیں ملیں – بلوچ قوم کے لئے ١٧ جنوری کی سیاہ صبح کا خونی اختمام یہاں بھی نہیں ہوتا ، ابھی ایک اور لاش بھی ملنی تھی ، اور وہ لاش تھی شہید نثار بلوچ کی جنھیں لسبیلہ سے اغوا کیا گیا تھا
کہاں ہیں وہ نواز شریف و الطاف حسسیں نام کے ڈرامے باز ، جو ہر روز جعلی انقلاب کی باتیں کرتے ہیں – جو عوام کو اپنی طاقت گردانتے ہیں ، کہاں ہیں پیپلز پارٹی کے چور اچکے ، کہاں ہیں اسفند یار والی اور اسکے حواری ؟ کراچی کے نا معلوم قاتلوں کے خلاف انکا غصہ ہے کہ تھمتا نہیں ، اور بلوچ عوام کے قاتلوں کو جانتے ہوۓ بھی ایک لفظ تک انکے منہ سے نہیں پھوٹتا
کیا سمجھتے ہیں یہ پاکستانی بزدل افواج کہ اپنی اذیت گاہوں میں بلوچ نوجوانوں کو قتل کر کے اپنی غاصبانہ قبضے کو دوام دے پائیں گے ، یا پاکستان کی بیغیرت عوام اس لئے آنکھیں بند کیے بیٹھی ہے کہ انکی افواج انکے لئے بلوچستان کو فتح کر لیں گی ؟ کیا یہ سمجھتے ہیں کہ بلوچوں کا خون بہا کر اپنے لئے لعل و گہر کا بندوبست کر پائیں گے ؟ یہ سب ان کی بھول ہے – بلوچ اپنے بلند و بالا پہاڑوں کی طرح پرعزم قوم ہے – بلوچوں سے ٹکرانے والے یہ ظالم و جابر ، جدید ترین ہتھیاروں کے زور پر بلوچوں کو نقصان تو پہنچا سکتے ہیں لیکن انکے اپنے سر کا پھوٹنا بھی تقدیر کا فیصلہ ٹھہرا
بلوچ شھداء کو خراج تحسین پیش کرنا میرے بس کی بات نہیں – بس اتنا جانتا ہوں کہ وطن عزیز کو اپنے خون سے سیراب کرنے والے یہ محسن ہمیشہ بلوچ قوم کے دلوں پر راج کرتی رہے گی – اور انکی عظمت پر آسمانوں کو بھی رشک آ رہا ہوگا – آج موت کا فرشتہ بھی اپنے کیے پر نادم ہوگا ، لیکن عظمتوں کی معراج ہمیشہ جانی قربانیوں سے ہی حاصل کی جاتی ہیں

ایاز بلوچ – ایجنسیوں کا ایک اور شکار

In abductions, Disappearences, FC, isi, mi on January 14, 2011 at 10:25 am

ایاز بلوچ – ایجنسیوں کا ایک اور شکار


تحریر نواز بگٹی

مقامی اخبارات کی اطلاع کے مطابق گزشتہ روز بلوچستان یونیورسٹی کے ، ایم – بی- اے – کے طالبعلم ایاز بلوچ کو یونیورسٹی کے باہرخفیہ  ایجنسیوں کے اہلکاروں نے اغوا  کر لیا- ایاز بلوچ کا تعلق تربت کے “بگی ” قبیلے کے ایک خاندان سے ہے ، وہ کوئٹہ میں تعلیم کے حصول کی خاطر مقیم تھے
بلوچستان میں بلوچ طلباء کی پراسرار گمشدگیوں کا سلسلہ اس تیزی سے جاری ہے کہ اب کسی کے بارے میں لکھتے ہوے خود سے شرم آنے لگی ہے – محسوس ہوتا ہے کہ گوشہ نشین ہو کر نا مردی کا شکار ہم جسے منشی ٹائپ بلوچ کسی بہت برے گناہ کا مرتکب ہو رہے ہیں- بس جناب حیدر بخش جتوئی صاحب کے چند اشعار ہی لکھنے کی ہمّت ہو رہی ہے

بھرو تم قید خانوں کو

کرو قابو جوانوں کو

بجھاؤ شمع دانوں کو

اڑا دو نقطہ دانوں کو

لاؤ رشوت ستانوں کو

جو بنگلے اور محل جوڑیں

شرم آے آسمانوں کو

پڑھو قومی ترانوں کو

کہ پاکستان زندہ باد

(حیدر بخش جتوئی)

بلوچ فن اور ثقافت کو پابزنجیر کرنے کی ایک اور واردات

In abductions, baloch, Current Political, FC, isi, mi on January 12, 2011 at 11:19 pm

بلوچ فن اور ثقافت کو پابزنجیر کرنے کی ایک اور واردات

تحریر نواز بگٹی

اطلاع آئ ہے کہ بلوچستان کے دو معروف گلوکار علی جان اور شہزاد ندیم کو پاکستان کی خفیہ ایجنسیوں نے کوئٹہ کے ایک ہوٹل سے اغوا کر لیا – فن و ثقافت کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ دو چیزیں فطرت نے ابتداء ہی سے انسان کو تحفے میں دی ہیں – انسان پیدائشی طور پر بولنے اور رابطہ رکھنے کی صلاحیتوں کا مالک ہے – انسان اپنے ابتدائی دنوں سے ہی آواز اور تصویری ذرائع کو باہمی رابطے کے اوزاروں کی حیثیت سے بخوبی استعمال کرتا آیا ہے – شعر و شاعری کا استعمال  اپنے ماحول کی بھر پور  عکاسی اور  معاشرے کی ان سنی آواز کی نمائندگی کے حوالے سے فنون لطیفہ میں اپنا ایک خاص مقام رکھتے ہیں – کہتے ہیں کہ اچھا شاعر وہ ہوتا ہے جس کا ہاتھ معاشرے کی نبض پر ہو

شاعری کو عوامی زبان اور مقبولیت ہمیشہ گلوکاری کے صنف نے دی- یعنی اگر شاعر معاشرے کی آواز ہے تو  گلوکار شاعر کی زبان- قومی احساسات اور شعور کو اجاگر کرنے میں سب سے اہم کردار  شاعری اور گلوکاری نے ادا کیا- اور فن کو ثقافت کا درجہ ہمیشہ فن کے معاشرے میں رچ بس جانے کے بعد حاصل ہوتا ہے – جب ہم  فن و ثقافت کی بات کرتے ہیں تو اس سے مراد ایسا فن ہوتا ہے جو مکمل طور معاشرے کے دوسرے اجزاء میں تحلیل ہو کر روز مرہ زندگی کا حصہ بن جاۓ
اگر قوم اپنے جہد آزادی کے ایک تاریخی دور سے گزر رہی ہو تو یہ کیسے ممکن ہے کہ شاعر معاشرے کے ان احساسات کی عکاسی میں کسی کوتاہی کا مرتکب ہو – اور ایک ایماندار شاعر کو نظر انداز کرنا کسی بھی گلوکار کے بس کی بات نہیں – ایسے میں قابض قوتوں کا یہی وطیرہ رہا ہے کہ کسی بھی طرح معاشرے کے ان اجتماعی آوازوں کو خاموش کروا دیا جاۓ
بلوچ گلوکار علی جان اور شہزاد ندیم کا اغوا بھی انہی غاصبانہ حکمت عملیوں کا نتیجہ ہے – لیکن تاریخ سے بے بہرہ ، سماجی سائنس سے نا بلد ، طاقت کے نشے میں چور ان ریاستی افواج کو نہیں معلوم کہ تنگ و تاریک کوٹھریوں سے گونجنے والی آوازیں اس قدر طاقتور ہوتی ہیں کہ پہاڑوں کو اپنی جگہ سے ہلا دیں – دو معصوم گلوکاروں کو اغوا کرنے ، انھیں انسانیت سوز مظالم کا شکار بنانے سے ایک قوم کی آواز دبے گی تو کیا بلکہ مزید اونچی ہو کر ان کے ایوانوں کو زمین بوس کر دے گی
ہم مغوی علی جان اور شہزاد ندیم کی با سلامت واپسی کی دعا ہی کر سکتے ہیں

 

نوٹ ( ١٧ جنوری ٢٠١١) :  بلوچ قوم کی دعاؤں میں بھی شاید کوئی اثر نہیں رہی ، متذکرہ بالا بلوچ گلوکاروں کی مسخ شدہ لاشیں بسیمہ ( بلوچستان ) کے پاس مل گئی ہیں