Let we struggle our way

Archive for the ‘Baloch Martyers’ Category

Pakistan continues abductions, kill and dump policy of Baloch student and political activists

In abductions, Baloch genocide, Baloch Martyers, Disappearences, FC on February 11, 2011 at 10:05 am

Two bullet-riddled bodies found near Turbat, three missing person found in severely injured condition, BRP member attack and wounded in Mashky, a resident of Pasi town of Balochistan has been abducted from Hub town.

Occupied Balochistan: Pakistan’s spy agencies tortured to death another two Baloch missing persons whose bodies were found from the Herrnok area, around 40 kilometres away from Turbat city, on Thursday morning. The incident triggered violence in Awaran, Mashkey and Turbat where two government offices and a Balochistan Rural Support Programme (BRSP) office were set on fire.

According to sources, a passer-by spotted the bodies and informed the Turbat Levies Thana. Levies official rushed to the spot and took the bodies to the Civil Hospital Turbat, where they were identified as comrade Abdul Qayyum, leader of the Baloch Student Organization (BSO-Azad) in Gwadar, and Jamil Yaqoob, a member of the Turbat zone of Balochistan National Party (BNP -Mengal). Hospital sources said comrade Qayyum received five bullets in his upper torso while Jamil Ahmed received three bullet wounds.

Family sources said Qayyum was taken from his residence in Gwadar on December 11. “Security personnel had arrested Qayyum and killed him during his illegal detention,” they said, adding that the case was also registered against FC personnel in the Gwadar Police Station.

Meanwhile sagaar publications, BSO-Azad’s official website, reported that the Organisation’s CC member Comerade Qayum Baloch was abducted on December 11, 2010 by Pakistan army from his house in Gawader and he was kept in segregation for 61 days. During the two months his whereabouts remained unknown to the BSO-Azad and his family members neither did he had any access to a legal representation. His brutally tortured and riddled with bullets body was found on Thursday Morning (10/02/2011) in herronk area near Turbat. “Marks of horrific torture on body of Qayum Baloch prove that during his detention period he had been subjected to severe torture and inhuman treatment”, sagaar reports read.

Qayum Baloch was one of the most politically conscience and active member of BSO-azad in Gwader area. Apart from being politically active Mr Baloch was also an active social worker and an advocate of human rights, a friend to almost every resident in his home city, Gawader.

Apart from this murder, another body was found in Heronk, which was identified as Jameel Yaqoob Baloch, who was abducted by Pakistan on 28th of August 2010, from Turbat. Jameel Yaqoob Baloch was a labor, working on wages to help his family. His body was severely tortured as Qayum Baloch’s was.

The statement published on the official website of BSO-azad further read that “Qayum Baloch’s murder certainly raises serious questions on the willingness or ability of the international peace rights campaigners to bring an end to the Human Rights abuses in Balochistan. Baloch Student Organization (Azad) believes that each of its activist, along with the support of the Baloch masses would continue the struggle of Kamber Chaker, Qayum Baloch, Sohrab Marri Baloch, Sami Baloch, Bebagr Baloch, Zahoor Baloch, Abid Rasool Baloch, Asim Kareem Baloch, young Majeed Baloch, Sikander Baloch, Junaid Baloch, Ilyas Nazar Baloch and all other prestigious names who have sacrificed their lives for liberation of their motherland and for creating a society based on justice and equality.

Three missing persons found in severely injured condition: Three Baloch disappeared person have been found in a critically wounded condition on National high at Jeewa Cross between Tuesday and Wednesday night. The victims hands were tied behind and they were blind folded. Levis staff has brought them to Suraab Police station.

The three badly injured youth have been identified as Sohrab Khan S/O Mir Jan Samali of Nemurgh region of Kalat town who has been abducted from Hub Chowki about one month ago, Shahzad Nadeem S/O Khan Mohammad Essazai as resident of Besima who had been abducted from a Hotel in Quetta along with Balochi folk singer Ali Jan Essazai Baloch in second week of January. The third victim has been named as Wali Mohammad S/O Mohammad Ismael Miragi a resident of Saarona area of Khuzdar. He was also abducted from Hub industrial town of Balochistan about one month ago.

On one their alive recovery send waves of happiness to their families whereas on the other hand all three youth are stated to be in critical condition. It must be mentioned here that last monthMr.Nasir Dagarzai was also found in a severely injured condition. According online Radio Gwank Balochistan, Nasir Baloch had been shot in the neck and legs but he survived miraculously. However, he had later succumbed to his injuries due to constant bleeding.

BRP member attacked in Mashky: unknown armed men open fire at a member of BRP (Baloch Republican Party), Liaqat Baloch here on Wednesday on his way back from Gujar Bazaar. The masked man fired live rounds at the BRP leader; Mr Baloch was immediately taken to Mashky’s Gujar Hospital where according doctor his condition is critical but stable.

Resident of Pasni abducted from Hub: Mr Abid Bashir Baloch a resident of Pasi town of Balochistan has been abducted by Pakistani security forces from Hub town. According to detail Mr Abid along with a cousin was travelling by his own car from Karachi to Pasi on Thursday night. When they arrived at Baba-e-Balochistan roundabout in Hub industrial town of Balochistan their car was stopped by personnel of security forces.

The forces after checking the IDs of both men have dragged Mr Abid out of his car and put him into another vehicle already parked alongside the road. They, however, allowed his cousin Mr Dad Baksh to continue his journey. The family of detained Baloch youth have register a case against his abduction at Hub police station.

Advertisements

شہید بالاچ مری – بلوچ چہ گویرہ

In Baloch Freedom movement, Baloch Martyers, BLA, bnf, bra, bso on January 18, 2011 at 11:16 pm

شہید بالاچ مری – بلوچ چہ گویرہ

تحریر نواز بگٹی

 

١٧ جنوری ١٩٦٥ کو بلوچستان کے معروف مری قبیلے کے سردار نواب خیر بخش مری کے ہاں بلوچ مستقبل کے درخشاں ستارے میربالاچ مری کی پیدائش ہوئی-  نواب صاحب نے بلوچ تاریخ کے مثالی بلوچ گوریلا بالاچ گورگیج کے نام پر اپنے بیٹے کا نام رکھتے ہوۓ شاید اپنے ذہن کے کسی گوشے میں اپنے فرزند کے مستقبل کے کردار کا کوئی تعین کر رکھا ہو ، لیکن انکے وہم و گمان میں بھی نہ ہو گا کہ انکا بالاچ بلوچ قوم کی آزادی کے راہ میں اپنے پیش رو بالاچ گورگیج کو بہت پیچھے چھوڑ دے گا

ابھی میر بالاچ کا بچپنا ہی نہیں گزرا تھا کہ نواب خیر بخش مری نے بلوچوں پر ہونے والے ریاستی مظالم کے خلاف بلوچ قومی آزادی کا علم بلند کیا – اپنے اس عظیم مقصد  کے لئے انھوں نے قید و بند کی صعوبتوں کے ساتھ ساتھ ہجرت کی اذیت بھی برداشت کی
کہتے ہیں کہ بچوں کی تربیت میں ماؤں کا کردار کلیدی اہمیت رکھتا ہے – اور بلوچ ماں کی لوری تو اپنے بچے کے لئے چاکرا عظم  سے کسی کم کردار پر رضا مند ہی نہیں ہوتی- میر بالاچ مری بھی بہادر ماں کی عظمت بھری لوریوں اور روایتوں کے امین ، عظیم باپ کے زیر تربیت پروان چڑھتے ہیں- انتہائی کم عمری ہی میں بلوچ اپنے گھر میں بلوچ آزادی کے شمع سے روشنی حاصل کرنے کا شرف بھی حاصل رہا – بلوچ قوم پر روا رکھے جانے والے انسانیت سوز مظالم اور بلوچوں کی جبری ہجرت ، دوران جدوجہد یش آنے والے دلخراش واقعات کے چشم دید گواہ بھی رہے

اپنی ابتدائی تعلیم بلوچ گلزمین سے دور افغانستان میں حاصل کی ، جبکہ اعلیٰ تعلیم روس کے دارلحکومت ماسکو  اور برطانیہ کے دارلحکومت لندن سے حاصل کی – پاکستان کی پارلیمانی سیاست میں بھی جلا وطن رہ کر حصّہ لیا – بلوچستان صوبائی اسمبلی کے رکن منتخب ہوۓ – اور حلف برداری کی تقریب میں ” پاکستان سے وفاداری ” کے منافقانہ الفاظ استعمال کرنے سے یکسر انکار اور بلوچستان سے وفاداری کے تاریخی الفاظ کی گونج  ریاستی اسمبلی میں سنائی دی

جب ریاستی نظام میں رہتے ہوۓ بلوچ قومی حقوق کے حصول کو نا ممکن جانا تو نواب اکبر خان بگٹی شہید کی معیت میں بلوچ آزادی و خود مختاری کے لئے ہتھیار اٹھاتے ہوۓ یہ تاریخی کلمات کہے ” میں نے اپنے لئے جس راہ کا انتخاب کیا ہے اس کے لئے اکثر و بیشتر ون وے  ٹکٹ ہی دستیاب ہوتا ہے ” . بلوچ قوم کی جدوجہد آزادی میں جس محنت اور جانفشا نی  سے حصّہ لیا اسکی بدولت انھیں بلوچ تاریخ کے چہ گویرہ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے

ریاستی چیرہ دستیوں کے خلاف مسلح جدوجہد منظم کرنے کی وجہ سے ریاستی ادارے بہت عرصے سے میر بالاچ کی جان کے درپے تھے ، اور آخر کار ٢١ نومبر ٢٠٠٧ کو ریاست اپنے اس مذموم مقصد میں کامیاب ہوا ، اور بلوچ مجاہد میر بالاچ شہادت سے سرفراز ہوۓ – ریاستی افواج میر بالاچ مری کی شہادت کو اپنے لیۓ بہت بڑی فتح سمجھتی ہے ، ہر سال خصوصاً  میر بالاچ شہید کی روز پیدائش ١٧ جنوری ، اور روز شہادت ٢١ نومبر کو ریاستی افواج بلوچ قوم پر ظلم و بربریت کی انتہا کر دیتے ہیں . اپنی اسی روایت کو برقرار رکھتے ہوۓ اس سال بھی ١٧ جنوری کے دن ٥ بلوچ نوجوانوں کو اغوا کر کے اذیت ناک تشدد کے بعد انکی مسخ شدہ لاشیں وطن عزیز کے طول و عرض میں پھینک دی گئیں- بلوچ قوم پر چڑھائی کر کے گھروں کو جلایا گیا ، نوجوان شکل بگٹی کو شہید اور ٤٠ سے زائد بزرگوں اور جوانوں کو گرفتار کر کے نا معلوم اذیت گاہوں میں منتقل کیا گیا- تا کہ بلوچ قوم اپنے قومی ہیرو کو خراج تحسین پیش نہ کر سکیں

بالاچ شہید کی شہادت کا واقعہ اگرچہ بلوچ تحریک آزادی کے لئے انتہائی بڑا نقصان ہی رہا ، لیکن انکی شہادت نے بلوچ تحریک کو مزید مہمیز کر دیا . آج بلوچستان کے کونے کونے سے بلوچ نوجوان اپنا سر ہتھیلی پر رکھے میر بالاچ کے مقصد کی تکمیل کے راہ پر گامزن ہیں

 

ایک اور سانحہ – الیاس نذر شہداء کے قافلوں سے جا ملے

In Baloch Martyers on January 6, 2011 at 2:55 am

ایک اور سانحہ – الیاس نذر شہداء کے قافلوں سے جا ملے

تحریر نواز بگٹی

ابھی سوئی میں پنجابی فوجی سربراہ کے نا پاک قدموں کے نشان مٹ نہیں پاۓتھے کہ بلوچ قوم کے لئے تربت سے ایک لرزہ خیز خبرجوانسال بلوچ طالبعلم  الیاس نذر بلوچ کے شہادت کی موصول ہوئی-
الیاس نذر بلوچ کو ٢١ دسمبر ٢٠١٠ کو کوئٹہ سے تربت جاتے ہوے راستے میں قابض افواج نے اغوا کر لیا تھا – الیاس نذر شہید کہ جسے شہید لکھتے ہوے ہاتھ تک کانپ جاتے ہیں ، جامعہ بلوچستان کے ہونہار طلباء میں شمار ہوتے تھے ، وہ بچوں کے لئے شایع ہونے والے  ایک بلوچی رسالے کے مدیر بھی تھے –  انکا قصور تو شاید انکے قاتلوں کو بھی معلوم نہیں ، شاید کہ تعلیم نے اس کے سر کو آقاؤں کی درگاہ پر سجدہ ریز ہونے کے قابل نہیں چھوڑا تھا- کل کو یہ اکڑی گردن شاید پنجابی استعمار کو کھل کر چیلنج کرتی ، صرف یہی اس کا جرم تھا – شاید وہ  پنجابی استعمار کے پالتو احسان شاہ نامی درندے کے دروازے پر ماتھا ٹیکنے کا روادار نہیں تھا-   بلوچ حلقوں میں شروع دن سے اغوا شدہ بلوچوں کی زندگیوں کے بارے میں تشویش پائی جاتی تھی ، اور پنجابی وحشیوں سے کسی بھی انسانی روش کا توقع نہیں تھا – اور یہ خبر ہم سب پر بجلی بن کر گری – لیکن استعماری طاقتوں کو اندازہ نہیں کہ قلم تھامنے والی انگلیاں جب بندوق کے گھوڑے پر دھری جاتی ہیں تو تاریخ ہمیشہ ارنستو چہ گویرا کو جنم دیتی ہے-
میں سوئی میں ملٹری کالج کے آڑ میں فوجی اڈے کے افتتاح  کے موقع پر پنجابی افواج کی فروغ تعلیم کی کوششوں اور علم دوستی کی شان میں قصیدہ خواں امرا و وزراء کے لاؤ لشکر،گورنر ، وزیر اعلیٰ، اور نام نہاد وڈیروں کو صرف اتنا کہنا چاہوں گا کہ ان میں اگر ذرا بھی غیرت ، تھوڑی سی بھی حمیت ، بلوچ ماؤں کے پاک دودھ کا ذرا بھی اثر ہے تو جامعہ بلوچستان کے ہونہار شاگرد الیاس نذر بلوچ کی والدہ ماجدہ سے جا کر معافی مانگیں ، اس کے پاؤں پکڑیں اور گڑگڑائیں کیونکہ اس کے لال کو کسی اور نے  نہیں انہی کے مربی افواج نے اغوا کر کے بیدردی سے قتل کر دیا ، اور ویرانے میں بے گور و کفن پھینک کر فرار ہو گۓ – ورنہ بلوچ قوم اپنے قومی مجرموں کا جہنم کی گہرائیوں تک پیچھا کرے گی –
میں یہ کہتے ہوے ایک لمحے کو بھی تذبذب کا شکار نہیں ہوتا کہ تم سب مردود بے گور و کفن مر جاؤ گے اور الیاس ایسے سپوت قوم کی یادواشتون میں ہمیشہ ہمیشہ کے لئے جیتے رہیں گے –