Let we struggle our way

Archive for February, 2011|Monthly archive page

Pakistan FC Kills 2 BSO – Azad Activists, Arrests 30, and Burns Homes in Khuzdar

In Baloch genocide, BSO-AZAD, FC on February 19, 2011 at 11:54 pm

Occupied Balochistan: The Pakistani Frontier Corps (FC) killed two activists of the Baloch Students Organization (BSO-Azad), arrested more than two dozen of innocent civilians and burned several homes in a massive search operation in Totak locality of Khuzdar district on Friday. According to the details, the FC unleashed the operation in the early hours of Friday, killing two people Yahya Baloch and Mohammad Naeem Baloch. They were both reportedly close relatives of Sardar Ali Mohammad Qalandarani, a tribal influential figure. BSO-Azad spokesman Salam Sabir said that the slain youth were members of the Baloch Students Organization (Azad). Local sources said that the FC had cordoned off the entire area early on Friday morning and disconnected all forms of telecommunication contacts in the area. As a result of the firing initiated by the FC, several people were injured as well. The operation continued until 4:00 p.m. “The forces also whisked away around thirty people with them, “confirmed a local residence,” those who were detained and taken away included three sons of Ali Mohammad Qalandarani.” The arrested men have been named as: Aftaf, Wasim, Mir Atiq, Khaleel, Mir hussain ahmed, Ubaid ullah, Niaz Ahmed, Maqsod, Khan jan, Masood, Lawang khan, Haroon Rasheed, Siraaj, Mula Hussain, Adaam, Ayub, Abdullah, Waheed, Mujeeb, Anees, Nasib, Ahmed khan, Abdul Rasool,Rashid mengal, Ata Usamad, Zia ulah, Faizullah, Yasir, Manzurullah, Kadir Buksh , Zubair, Shoaib, Aziz Ahmed, Shafi, Naseer. The dead bodies of the victims were taken to the hospital after the completion of the operation. Eyewitnesses said hundreds of security personnel riding on around sixty vehicles participated in the operation which mainly targeted the Balochs hailing from Qalandarani tribe. “Naib Tasildhar Baghbana Mohammad Azam Bajowi took the dead bodies to the hospital along with Levies personnel,” said a local journalist,” Dr. Somar Khan who attended the bodies refused to talk with Media regarding the twin killing. “The doctor even misbehaved with journalists and threatened to not cover the incident otherwise he will call the forces”. Journalists in Khuzdar have strongly condemned the behaviour of the doctor and asked the health department officials to take action against him for misbehaving with the journalists on duty. The reporters’ community in Khuzdar has warned to launch a province-wide protest against the doctor with the help of journalists from other parts of Balochistan. They demanded his immediate transfer. Sources said the security forces had also burnt scores of homes belonging to the local Baloch population in order to scare the people living in the area. The area remained cordoned off for many hours while all forms of communication with the township were suspended as forces continued their activities. The operation in Thotak has been widely condemned by the Baloch Students Organization, Baloch National Voice (BNV), Baloch Republican Party (BRP) and Baloch National Front (BNF). Open in new windowBaloch Student Organization (BSO-Azad) held protest demonstrations in Quetta, Naushki and Pasni condemning the killings of its activists. They accused the Pakistani security forces of carrying out massive operation in Baloch populated area. “The security personnel had violated the sanctity of homes and even misbehaved with Baloch women and elders during the search operation in Tutak area,” protestors alleged. BSO spokesman said that 30 members of his organization had been arrested and many were injured during the search operation. “The forces set six houses on fire,” they charged. Activists of BSO Azad also protested in Karachi, the largest joint city of Sind and Balochistan with a sizable Baloch population, to vent their anger against the use of brute force against the civilians by the security forces. Akbar Hussian during the Home Secretary of Balochistan has out an operation in Khuzdar by saying that the FC had been attacked by the local residents and it had only defended itself in the exchange of fire which killed two people. (Courtesy: Daily Tawar, The Balochhal and Daily Balochistanexpress)

Advertisements

Perception is never Perfection

In Baloch Freedom movement, Baloch genocide, balochistan, Global Perspective on February 16, 2011 at 9:37 am
Perception is never Perfection
By: Diagoh Murad

Quote:

“Justice if served with silence, it is the derision of Justice”

It is believe to be 21st century where science has its way to prove analytical reports on various projects, where once people thought earth to be flat science made their perceptions to see the earth and the surrounding planet in their true forms, but in all these happenings we never thought that some perception can make us go wrong, can let us decide something which is not true at all. If science has proved many of the mistaken theories of mankind as wrong and illusionary then it has done this in an explanatory way, everything we defined from the solar system to the galaxies all were in details when science came with the total studying of these natural structures, through investigation that is what makes one’s perception to be in true form of perfection.

For centuries people were arrogant by their own judgment that what ever seems to be happening must be real, the people who thought earth to be flat, people who think all Muslims are terrorist, people who thought Black people have no honor, people who think Pakistan is an Islamic State and people who think Baloch to be part of this unethical state, From all these perceptions not even a single came under microscope to be analyzed only one was solved the others are self made illusions from different mindset of peoples.

It is these illusions that have caused them to be ignorant to redefine their perception because what they see is not in its perfect form, If all Muslims were terrorist then the population of Muslims around the world (In Billions) would have caused the doom of civilization, if Black people had no honor then white folks have no regard for humanity either, If Pakistan is an Islamic State then the genocide of 3 Million Bengalis wouldn’t have occurred and another million of Bengali women wont have lost their honor to these savage beasts and last but not the least which was never given any chances to speak for their heart are the Baloch people taken forcefully under the claws of this immoral state, obsolete theory that Baloch are part of this State have caused the population of world to really believe this saying while if one ask the Baloch population that do they love to be called Pakistani, the answer will surely come in negative.

The false allegations that in today are believed to be written truths while the documents and reports are written by those personalities whom had no sense of history or the nature of the inhabitants. A Christian or Jew will always claim and malign the Muslims for the terrorist attacks and charge all the Muslim population to be guilty but if a Christian or Jew murder hundred of Muslims then what that Jew or Christian will be called “Messiah” (Hundred of Palestine Peoples are murdered by the State of Israel), if one Baloch signed an annexation document with Pakistan then that signed documents seals the faith of million other Baloch what if all these millions of Baloch have not accepted the merger and have revolted time by time (Which Baloch nation did from Prince Karim Khan to Brahamdagh Bugti) duly it was the duty of International powers to redo the case of Baloch nation by giving them a chance to speak for themselves but a black response came from these international powers, the boundaries that Pakistan claim as its own are forged by the watchmen of British servitude, the slave of British were given shares and bounties while the aggressors were thrown down.

The wrong perception created by the oppressors shows Baloch to be a patriot Pakistani by giving way to those Baloch who are less important in Baloch politics and nationalism, it has always been the case with the oppressor giving media coverage to those personalities who were never nationalist and never took the interest of nation has their own, same method is applied here in this occupied state of Balochistan. The nationalist are being killed and many are still languishing inside the torture cells while the so called leaders of Balochistan and so called nationalistic parties NP, BNP are making claims of zero atrocities committed.

The centuries old Baloch nation is being annihilated in a slow genocide way and the outside world have no queries over what Pakistan has planned for Baloch nation, from systematic abduction to dumping of bodies non have been shown in international level. Pakistani media proclaims itself to be free from any boundary while it still serves the army like all the other militant states, Pakistani media records “A Man marrying 2 Women at the same day” they can telecast “A sheep carrying four horns” but they never try to show the Pakistani people or the international media of what the Pakistani army is doing in Balochistan.

Pakistan print and electronic media is very much steady and aware of the regional dispute but it keeps its distance from the burning lava so that the wrath of Pakistani army won’t touch them or their profitable marketing business. They can broadcast Punjabis getting attacked in Balochistan but they never publish that Baloch activists and missing persons are being killed by the Pakistani army, remembering one Baloch leader who once said that “If I am being killed then how can I insure their safety”.

The Punjabis who gets killed are working for the intelligence agencies and yet Pakistani media transform them to be innocent and civilized while the local Baloch who has nothing to do with any thing is abducted, tortured for days (In some cases for years) & later family members find him dead and dumped then why the silence, why the lips are sealed and pens are halted, double standard media can never do justice so do the judiciary on which Chief Justice Iftikar Chaudhry keeps on repeating that “Justice will be served”.

From Human rights organizations to International Media none has permission to cross into the boundaries created by the army and paramilitary forces of Pakistan and yet the International powers are dumbfounded over the case of Balochistan, Obama administrations pressured to solve the case of missing persons has led the Pakistani forces to increase their phase in killing the missing persons, contract killers like the “Death Squad” are being given task to eliminate the remaining missing persons one body at a time. “Kill and Dump” policy is such cold-blooded that it shows the behavior of the state with the Baloch population, for the Pakistani forces this game is not new they had played it with Bengali nation and now they are doing it with Baloch nation.

Pakistani forces for mere fun kidnap teenagers, chokes them with ropes, burns their bodies with cigarettes, bash their toes with hammers, breaks their inner bones, puncture their minds and lungs with injections & after they have their ways with the person they carry them to their execution place and squad fires them on that place. Many bodies carried letters in their pockets where the killers write the identity of the bodies or worse they write abusive words for Baloch nationalism.

Arms Bounded, Head Bent, Knees broken, eyes gouged, tongue sliced & carved with markings are the identifications of a severe torture and beatings of Baloch political activists, if these are not eye openers then what will cause them to react, do they want all Baloch nation to be Bounded, Bended, Broken, Gouged, Sliced & Carved so that they can see what is happening in Balochistan, the interesting part of the story is that knowing every detail and inscriptions of many Baloch abductees the organizations working for human betterment doesn’t show any remorse to these victims instead they proclaim the victim to hush-up and work out their differences with the criminals.

In just recent days Dera Bugti, Sibi & Bolan were plunged in a grand operation and thousands of Bugti tribesmen were rounded up for interrogation and never returned their homes taken to unknown location (Military Cantonments), Sibi & Bolan operation led many Baloch locals to become homeless when Pakistani army bulldozed the whole town in retaliation of the attack from the Baloch freedom forces. Is justice being served? Question arises many times because justice in Pakistan is for sale whoever gives a higher bid, justice will be served according to his will, like in just recent days Chief Justice of Balochistan comfortably announced that missing Baloch persons are released and have returned to their homes while the family members of those missing persons claimed that their loved ones are still going through the worse kind of treatment and the justification which Chief justice of Balochistan provided is actually rubbing salt over the wounds of the family members.

International Powers have to correct their perception and do the thinking of what to do with Pakistan and its policies on Balochistan and Baloch nation, the program and developments which Pakistan keeps on repeating as Baloch perspective is different, Nawab Khair Bux Marri once put this as “Anti-Baloch Perspective” which is overall true, parliamentary baloch leaders have already shook their tails and sagged their tongues out but those who are opposing these projects are abducted, tortured & killed.

Forced projects and development can never develop the local Baloch nation because these developments have never been profitable for Baloch nation one fine example is the “Sui Gas Plant” built in the year 1958 it is going through many channels and reaching the deep regions of Punjab but Dera Bugti still suffers from gas supply, from 26 districts of Balochistan only 4 districts have fully stable gas supply while the rest uses the old method. Gwadar port projected as a grand employment opportunity lacks local people recruitment, from top engineers to labors all are employed from Islamabad because of the head quarter situated there.

If these are not Anti-Baloch perspective then what profit did the Rekodik or Saindek has given to Baloch nation, big chunk of profits are going to the foreign investors and companies, remaining chunk goes to the federal Government and in return dog bones are given to Balochistan Government.

Judicial Inquiries, Commissions & Packages all are dramas created by those who are in support of these extra judicial abductions and killings, the panel judges of the commission created for the recovery of missing persons registered 20 cases of Baloch missing while the census of missing persons is in thousand, if this is justice serving then it is better to protest and fight with the uncivilized institutions rather exclaiming for justice.

The reason Baloch nation is appealing to the international powers, human rights organizations and freedom loving people is because they are depressed that not only the Pakistani military forces but the democratic and civilian forces are also against them and both these institutions are working hand to hand to draw Baloch nation to their brink of extinction. While both these institutions stamp the Baloch movement for independence as foreign created but the truth is Baloch nation is the sole owner of this revolution and this movement is being run by Baloch nation, no foreign influence has created this movement, Baloch protested and fought for their independence when they were taken by force & occupied and they are still fighting for their autonomous state.

From top civilian officials to military generals all have the same reason of Baloch uprising that is its “Foreign Influenced” while concealing their brutality with Baloch nation, from abduction, harassment, killing, & military operations every possible torture has been implemented on Baloch nation. Pakistani government cries of Indian involvement, Israeli Involvement & American involvement in Balochistan but would never say that “We occupied Balochistan, We killed Millions of Baloch in the wake of five operations, We snatched their rights to live, We bombarded their towns & cities, We killed mothers, sisters & children of Baloch nation & We are now trying to annihilate Baloch nation”, keeping silence over the extra judicial killings and marking the Freedom fighters has miscreants wont wash away the crimes Pakistan and its forces have done inside Balochistan.

Now its upto the International powers to halt Pakistan’s barbarism and hear the requests of Baloch nation & do justice according to their perceptions and not from the false theories & reports summarized by Pakistan for their own purposes.

 

 

Pakistan continues abductions, kill and dump policy of Baloch student and political activists

In abductions, Baloch genocide, Baloch Martyers, Disappearences, FC on February 11, 2011 at 10:05 am

Two bullet-riddled bodies found near Turbat, three missing person found in severely injured condition, BRP member attack and wounded in Mashky, a resident of Pasi town of Balochistan has been abducted from Hub town.

Occupied Balochistan: Pakistan’s spy agencies tortured to death another two Baloch missing persons whose bodies were found from the Herrnok area, around 40 kilometres away from Turbat city, on Thursday morning. The incident triggered violence in Awaran, Mashkey and Turbat where two government offices and a Balochistan Rural Support Programme (BRSP) office were set on fire.

According to sources, a passer-by spotted the bodies and informed the Turbat Levies Thana. Levies official rushed to the spot and took the bodies to the Civil Hospital Turbat, where they were identified as comrade Abdul Qayyum, leader of the Baloch Student Organization (BSO-Azad) in Gwadar, and Jamil Yaqoob, a member of the Turbat zone of Balochistan National Party (BNP -Mengal). Hospital sources said comrade Qayyum received five bullets in his upper torso while Jamil Ahmed received three bullet wounds.

Family sources said Qayyum was taken from his residence in Gwadar on December 11. “Security personnel had arrested Qayyum and killed him during his illegal detention,” they said, adding that the case was also registered against FC personnel in the Gwadar Police Station.

Meanwhile sagaar publications, BSO-Azad’s official website, reported that the Organisation’s CC member Comerade Qayum Baloch was abducted on December 11, 2010 by Pakistan army from his house in Gawader and he was kept in segregation for 61 days. During the two months his whereabouts remained unknown to the BSO-Azad and his family members neither did he had any access to a legal representation. His brutally tortured and riddled with bullets body was found on Thursday Morning (10/02/2011) in herronk area near Turbat. “Marks of horrific torture on body of Qayum Baloch prove that during his detention period he had been subjected to severe torture and inhuman treatment”, sagaar reports read.

Qayum Baloch was one of the most politically conscience and active member of BSO-azad in Gwader area. Apart from being politically active Mr Baloch was also an active social worker and an advocate of human rights, a friend to almost every resident in his home city, Gawader.

Apart from this murder, another body was found in Heronk, which was identified as Jameel Yaqoob Baloch, who was abducted by Pakistan on 28th of August 2010, from Turbat. Jameel Yaqoob Baloch was a labor, working on wages to help his family. His body was severely tortured as Qayum Baloch’s was.

The statement published on the official website of BSO-azad further read that “Qayum Baloch’s murder certainly raises serious questions on the willingness or ability of the international peace rights campaigners to bring an end to the Human Rights abuses in Balochistan. Baloch Student Organization (Azad) believes that each of its activist, along with the support of the Baloch masses would continue the struggle of Kamber Chaker, Qayum Baloch, Sohrab Marri Baloch, Sami Baloch, Bebagr Baloch, Zahoor Baloch, Abid Rasool Baloch, Asim Kareem Baloch, young Majeed Baloch, Sikander Baloch, Junaid Baloch, Ilyas Nazar Baloch and all other prestigious names who have sacrificed their lives for liberation of their motherland and for creating a society based on justice and equality.

Three missing persons found in severely injured condition: Three Baloch disappeared person have been found in a critically wounded condition on National high at Jeewa Cross between Tuesday and Wednesday night. The victims hands were tied behind and they were blind folded. Levis staff has brought them to Suraab Police station.

The three badly injured youth have been identified as Sohrab Khan S/O Mir Jan Samali of Nemurgh region of Kalat town who has been abducted from Hub Chowki about one month ago, Shahzad Nadeem S/O Khan Mohammad Essazai as resident of Besima who had been abducted from a Hotel in Quetta along with Balochi folk singer Ali Jan Essazai Baloch in second week of January. The third victim has been named as Wali Mohammad S/O Mohammad Ismael Miragi a resident of Saarona area of Khuzdar. He was also abducted from Hub industrial town of Balochistan about one month ago.

On one their alive recovery send waves of happiness to their families whereas on the other hand all three youth are stated to be in critical condition. It must be mentioned here that last monthMr.Nasir Dagarzai was also found in a severely injured condition. According online Radio Gwank Balochistan, Nasir Baloch had been shot in the neck and legs but he survived miraculously. However, he had later succumbed to his injuries due to constant bleeding.

BRP member attacked in Mashky: unknown armed men open fire at a member of BRP (Baloch Republican Party), Liaqat Baloch here on Wednesday on his way back from Gujar Bazaar. The masked man fired live rounds at the BRP leader; Mr Baloch was immediately taken to Mashky’s Gujar Hospital where according doctor his condition is critical but stable.

Resident of Pasni abducted from Hub: Mr Abid Bashir Baloch a resident of Pasi town of Balochistan has been abducted by Pakistani security forces from Hub town. According to detail Mr Abid along with a cousin was travelling by his own car from Karachi to Pasi on Thursday night. When they arrived at Baba-e-Balochistan roundabout in Hub industrial town of Balochistan their car was stopped by personnel of security forces.

The forces after checking the IDs of both men have dragged Mr Abid out of his car and put him into another vehicle already parked alongside the road. They, however, allowed his cousin Mr Dad Baksh to continue his journey. The family of detained Baloch youth have register a case against his abduction at Hub police station.

The Occupying States’ Ongoing Crimes in Baluchistan

In abductions, baloch, Disappearences, FC, isi, mi on February 7, 2011 at 12:05 pm
The Occupying States’ Ongoing Crimes in Baluchistan

(International Voice of Baloch Missing Persons )


In the artificially structured boundaries of the states of Pakistan and Iran one thing that has no value is human lives. Both states are equipped to their teeth with modern armaments, Jihadist mercenaries and a medieval religious creed. They have used this cocktail of destruction to justify their untold atrocities. The Baluch people under illegal occupation of these unruly states have been among those who have suffered the most. Many hundreds and thousands of Baluch political and social activists have been abducted, displaced, tortured, disappeared and killed by these occupying states.

Enforced disappearance has become the daily experience of Baluch people living under occupation of these Islamic fundamentalist states. Over 8,000 Baluch activists have been abducted and disappeared in Eastern occupied Baluchistan since the year 2000. Families of these victims are not provided with any information about the missing persons. The families are threatened by security forces with dire consequences if they highlight the plight of their loved ones. From the last six months Pakistani state and military establishment have altered their policy about the abducted Baluch political and human rights activists. They have been imitating the policy of their replica counterpart, the Islamic regime of Iran. Ever since its creation, the Iranian Islamic government has been employing the ‘kill and dump’ policy against many of its opponents.

As result of this policy from July 2010 up to the present day Pakistani military agencies have killed and dumped over 100 Baluch activists. The victims of this policy for the year 2011, which barely a month is passed, are over 15 persons.

On 3 January 2011 five Baluch youths after leaving a public meeting were followed and attacked by Pakistani agencies in Karachi. Faraz Baluch, a member of BSO-Azad died in hospital from his injuries and Bilal Baluch, Umair Baluch, Salman Baluch and Saddam Baluch were kept under intensive care and survived this vicious attack.

On 4 January 2011 Pakistani security forces abducted Haji Nasir, and two teenage students, Ehsanullah and Khair Jan in Gawader. On the same day the severely tortured bodies of two prominent young Baluch political leaders were found in Pedarak area of Turbat. The victims were identified as Qamber Chakar Baluch 24 and Ilyas Nazar Baluch 26. Both victims were MSc students and a member of BSO- Azad. Qambar Chakar was abducted by Pakistan secret forces before on 10 July 2009 but was released without any charges on 22 April 2010. He was re-abducted on 26 November 2010 from Shai Tump Turbat. Ilyas Nazar Baluch was a Journalist for a Baluchi language magazine Dhorant. He was abucted on 22 December 2010 from a coach at Badok near Pasni.

Mohammad Sadiq Langov was abducted on 12 January 2011 and the bullet-riddled bodies of two Baluch traders, Taj Mohammad Marri and Meer Jan Marri were found from Bal Ghatar area of Panjgur on 8 January 2010. Pakistani security forces shot dead Sarvar Jamaldini and injured his companion in the same day in Taftan.

On 15 January 2011 Hashim Baluch, another Baluch teenage student, was abducted from an internet cafe in Hub. In the same day the body of the teenage member of BSO-Azad, Zakaria Zehri was recovered from Soorab area of Kalat. He was only 15 years old and was missing for over a month. Another victim whose body was recovered on the same day was Ghulam Hussain Mohammad Hasani. His body was found under a bridge in Singdaas area of Kalat.

The body of Mumtaz Kurd was found in Mastung on 20 January 2011. The two bodies of Baluch missing persons, Ahmed Dad Baluch and Naseer Kamalan, were found near Syedabad 23 miles away from Ormara on 17 January 2010. Ahmed Dad Baluch was abducted on 3 October 2010 and Naseer Kamalan on 5 November 2010. Both victims were well known Baluch political leaders. Naseer Kamalan was a senior leader of Baluch National Movement and he was also an inspiring Baluchi language poet. On the same day of discovery of the bodies of these two Baluch political leaders, Pakistan Frontier Corps (FC) attacked Kashi Nulla area of Dera Bugti. During the attack they killed Shakeel Baluch and injured and arrested Gabro and Sabz Ali Baluch.

Pakistani security forces raided the house of Mr Awal Khan Bugti on 21 January 2011. As he was not at home at the time of the raid Pakistan military officials abducted his wife Mai Hanifa.

Mohammad Azam Baluch was abducted by Pakistani secret agencies around 20 January 2011 from Suraab and his bullet riddled body was found near Kalat in Marjan National Highway on 25 January 2011. On the same day Abdul Rauf Qambari was abducted from Wahero area of Wadh in Balochistan. Abdul Rauf is the cousin of Waheed Qambarani, a Baluch teacher, whose mutilated body was found a month earlier.

On Monday 24 January 2011 four more Baluch youths were abducted from Tasp area of Panjgur. They were named as Waqeer, Shamsheer, Sagaar and abdul Malik. These teenage Baluch students were released few days after suffering violent physical and psychological ordeal. A day earlier, on 23 January 2011 the body of Ali Jan Kurd was recovered from Aktharbad area of Quetta, the capital of Balochistan. He was abducted by Pakistan security forces on 23 November 2010 near Sibbi. Ali Jan Kurd was only 18 years old and was a regional president of Baluch Students Organization – Azad.

Two lifeless Baluch youths were recovered on Thursday morning of 27 January 2011 in Gwargo area of Panjgur. The youths were shot and severely tortured. One of the victims, Abid Rasool Baksh Baluch a 17 year student and member of BSO-Azad, was already dead but Nasir Dagarzai was still alive. These two Baluch students were abducted along their fellow students Mehrab Baluch and Abid Saleem Baluch from the residence of Naser Dagarzai Baluch on 23 January 2011.

On 4 February 2011 three bodies were recovered from Khuzdar. The victims were identified as Hamid Issazai, Lal Khan Sumalani and Mir Khan Sumalani. Few days earlier also, on 1 February, the body of the Baluch popular singer Ali Jan Issazai was discovered in Kanak area of Khuzdar. Ali Jan and Shahzad Nadeem were abducted by Pakistani secret agencies from a hotel in Quetta on 10 January 2011.

The occupying states have increased their systematic brutality against the Baluch to an alarming level. Baluch children are not even spared from the wrath of the fundamentalist states of Iran and Pakistan. In the Western occupied Baluchistan, Amin Noraee a 16 year student was killed by the Islamic regime of Iran security forces in 1980 in Sarawan. Another teenage Baluch political activist, Khosro Mobarki, was arrested and after enduring months of torture was executed in 1981. In March 2008 Iranian security abducted Ebrahim Mehrnehad age 16. Ebrahim is the brother of Baluch journalist and civil rights activist Yaguob Mehrnehad who was executed by the Iranian government on 4 August 2008. Another Baluch child who has been abducted by the Islamic regime security forces is Mohammad Saber Malk Raisee. At the time of his arrest on 24 September 2009 he was only 16 years old.

In the Eastern occupied Baluchistan the Pakistani rulers have launched an open war against the Baluch youths and children. Large number of Baluch political and human rights activists who have been made disappeared tortured and killed have been among Baluch children.

In addition to the names of the Baluch youths cited above, Pakistani security forces abducted 17-year old Jamal Baluch on 4 October 2010. He was injected with unknown substance and subjected to extreme torture to such an extent that he has become partially paralyzed.

Abdul Majeed Baluch, a member of BSO-Azad was abducted by Pakistani Frontier Corps on 18 October 2010. Pakistani security forces murdered him and dumped his tortured body in the Koshak River at Khuzdar district on 24 October 2010. Another Baluch child and political activist, Mohammad Khan Zohaib was abducted in July 2010 by the same agencies. His mutilated body was found in Khuzdar on 20 October 2010. They were both 14 years old.

The house of Mir Ayub Gichiki was attacked by occupying security forces on 1 December 2010. In the attack Pakistani forces killed five Baluch political activists in the house. Among the victims were two of Mr Gichiki’s teenage sons, Murad Jan and Zubiar Gichki.

This policy is the natural outcome of the forceful occupation of Baluch homeland and the resistance of the native Baluch against occupying states. The most valuable assets of a society are its inspiring and forward-looking children. Premeditated and systematic infliction of pain to the tender body of a child and then murdering him or her in the most gruesome way, by organised state sponsored military forces, is only done and justified by these and similar occupying fundamentalist fascist states. We urge all Baluch to recognise the gravity of situation in Baluchistan and get united to put an end to occupying state barbarism against our people and children.

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare on February 6, 2011 at 11:16 am
چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا
مترجم نواز بگٹی
حصّہ (XI )
باب دوئم – چھاپہ مار گروہ

چھاپہ مار سپاہی – ایک جنگجو ( قسط – ١)

چھاپہ ماروں کی زندگی اور سرگرمیوں کا عمومی خطوط پر جائزہ لیا جاۓ تو معلوم ہوتا ہے کہ  مخصوص حالات میں تفویض کردہ مہم کی  بخوبی انجام دہی ، جسمانی ، ذہنی اور اخلاقی خصوصیات کے تسلسل کی متقاضی ہوتی ہے –
اگر پوچھا جاۓ کہ چھاپہ مار جنگجو کیسا ہونا چاہیے تو اس کا پہلا جواب یہی ہوگا کہ ترجیحی طور پر اسے ، اسی علاقے کا باشندہ ہونا چاہیے – اگر ایسا ہی معاملہ ہے تو اس کے کچھ دوست ہونگے جو اسکی مدد کر سکتے ہیں ، اگر وہ اسی علاقے سے تعلق رکھتا ہے تو اسے علاقے سے بھی بخوبی واقفیت ہوگی ( زمینی حقائق کا گہرا علم چھاپہ مار جنگ کا ایک اہم ترین پہلو بھی ہے ) ، اور جیسے کہ وہ مقامی عادات و اطوار کا عادی ہوتا ہے وہ بہتر طور پر کام کر سکتا ہے ، یہ بتانے کی چنداں ضرورت نہیں کہ اپنے لوگوں کے دفاع اور اپنی دنیا کو تکلیف میں مبتلا کیۓ رکھنے والی سماجی اقدار کی تبدیلی کے لئے لڑنے میں وہ کتنا پرجوش ہوتا ہے-
چھاپہ مار جنگجو راتوں کا مجاہد ہوتا ہے ، ایسا کہتے ہوۓ یہی کہنا چاہیۓ کہ اسے (چھاپہ مار کو ) ان جنگوں کے لیۓ ضروری تمام خصوصی صفات کا حامل ہونا چاہیۓ- وہ اسقدر شاطر ہو کہ میدانوں یا پہاڑوں میں پھیلے دشمن پر حملے کے جگہ تک اس انداز میں پہنچے کہ کوئی اس پر توجہ نہ دے سکے ، پھر اچانک دشمن پر ٹوٹ پڑے ، اس طرح کی لڑائیوں میں اچانک حملے کی اہمیت اس بات کی حقدار ہے کہ اس پر دوبارہ زور دیا جاۓ – اچانک حملے سے دہشت پیدا کرنے کے بعد اسے چاہیۓ کہ اپنے ہمراہیوں کو کوئی بھی کمزوری دکھاۓ بغیر شدید جنگ چھیڑ دے ، اور دشمن کی ایک ایک کمزوری سے بھرپور فائدہ اٹھا ۓ- ایک طوفان کی طرح حملہ آور ہو تے ہوۓ ، ہر چیز کو تباہ کرتے ہوۓ ، کوئی بھی کونہ چھوڑے بغیر ( تا وقتیکہ حکمت عملی کا کوئی تقاضا نہ ہو ) ، ہر اس شے کی شناخت کرتے ہوۓ کہ جن کی شناخت ضروری ہو ، دشمن سپاہ میں دہشت پھیلاتے ہوۓ ، آگے بڑھنا چاہیۓ ، اگرچہ اسے لاچار قیدیوں سے اچھے سلوک اور ( دشمن سپاہ کی ) نعشوں کا احترام کرنا چاہیۓ-
ایک زخمی دشمن کا خیال رکھا جاۓ اور اس سے احترام کا برتاؤ ہونا چاہیۓ ، تاوقتیکہ اس کی پچھلی زندگی اسے سزاۓ موت کا حقدار نہیں ٹھہراتا ، ایسی صورت میں اس کے ساتھ برتاؤ اس کے اعمال کے مطابق کیا جاۓ – جو کام ہرگز نہیں کرنی چاہیۓ ، وہ ہے دشمن سپاہیوں کو قیدی بناۓ رکھنا، تا وقتیکہ دشمن کی دست برد سے محفوظ مستقر  کا قیام یقینی نہیں ہوجاتا – ورنہ یہی قیدی (خدا نخواستہ ) دوبارہ اپنے ساتھیوں سے مل کر نہ صرف مقامی آبادی کے تحفظ کے لیۓ بہت بڑا خطرہ  ثابت  ہو سکتے ہیں ، بلکہ (دوران قید اپنے مشاہدات کی رو سے حاصل کردہ ) معلومات دشمن تک پہنچا کر چھاپہ مار گروہ کی بقاء و کارکردگی کے لیۓ بھی انتہائی خطرناک ثابت ہو سکتے ہیں – اگر وہ ( قیدی ) کوئی خطرناک مجرم نہیں تو اسے مختصر اخلاقی درس کے بعد آزاد کر دینا چاہیۓ-
چھاپہ مار جنگجو سے یہی توقع کی جاتی ہے کہ وہ ہمیشہ اپنی زندگی کا خطرہ مول لیتا ہے ، اور ضرورت پڑنے پر اپنی زندگی قربان کرنے سے سر مو دریغ نہیں کرتا ، لیکن بیک وقت اس سے انتہائی احتیاط کی بھی توقع کی جاتی ہے اور اسے بغیر کسی خاص ضرورت کے سامنے نہیں آنا چاہیۓ- شکست و بربادی سے بچنے کے لیۓ لازمی ہے کہ تمام ممکنہ احتیاتی تدابیر اختیار کی جائیں – اسی لیۓ ضروری ہے کہ ہر لڑائی میں ان تمام مقامات پر نظر رکھنی چاہیۓ جہاں سے دشمن افواج کو کمک مل سکتی ہو ، اور محاصرے میں آنے سے بچنے کے لیۓ ہر ممکن احتیاط کی جانی چاہیۓ ، اس ( محاصرے ) کے نتائج ضروری نہیں کہ بہت بڑی جانی نقصان کی صورت میں سامنے آئین ، لیکن جدوجہد کے تناظر میں، اعتماد کا  فقدان پورے عمل کی حوصلہ شکنی کا سبب بن سکتا ہے –
بہر حال اسے بہادر ہونا چاہیۓ ، اور کسی بھی کاروائی کے دوران تمام ممکنہ خطروں کا تجزیہ کرنے کے بعد ، اسے حالات کے تناظر میں پرامید طریقہ کار اپناتے ہوۓ کسی موافق فیصلے تک پہنچنے کے وجوہات تلاش کرنے چاہیئں ، حتیٰ کہ ایسے اوقات میں بھی جب موافق و نا موافق کے تجزیے میں کوئی حوصلہ افزاء توازن تک نظر نہ آۓ-
زندگی اور دشمن کی کاروائیوں کے درمیان پیدہ شدہ حالات میں زندہ رہنے کے قابل رہنے کے لیۓ ، چھاپہ مار جنگجو کو چاہیۓ کہ وہ مطابقت کے ایسے نقطے تک پہنچ جاۓ جو اسے ان حالات میں شناخت کی اجازت دیں جن میں وہ رہتا ہے ، وہ ان (مخصوص حالات )  کا حصّہ بن جاۓ ، اور اپنے اتحادی کی حیثیت سے ان (حالات )  کا زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھاۓ-اسے تیز فہم ، جدت اور فوری فیصلے کی صلاحیت سے لیس ہونا چاہیۓ ، تا کہ وہ کاروائی کے غالب پہلو کے تناظر میں اپنی حکمت عملی کی مناسب تبدیلی کے قابل ہو –
چھاپہ مار جنگجو کو اپنے کسی زخمی ساتھی کو کبھی بھی دشمن افواج کے رحم و کرم پر کبھی بھی نہیں چھوڑنا چاہیۓ ، کیونکہ اس کا مطلب ہوگا اسے تقریباً یقینی موت کے حوالے کرنا- اسے ہر قیمت پر دشمن کے علاقے سے کسی محفوظ مقام پر منتقل کیا جاۓ – اس انخلاء میں زیادہ سے زیادہ خطرہ بھی مول لیا جا سکتا ہے- چھاپہ مار جنگجو کا ساتھ بھی یقیناً غیر معمولی انسان ہوگا-
بیک وقت چھاپہ مار کو اپنا منہ بند رکھنا ہوگا ، جو کچھ بھی اس کے سامنے کہا یا کیا جاۓ اسے اپنے ذہن تک محدود رکھنا ہوگا – اسے کبھی بھی اپنے آپ کو کسی غیر ضروری لفظ کی ادائیگی کی اجازت نہیں دینی چاہیۓ ، حتیٰ کہ اپنی صفوں میں اپنی سپاہ کے سامنے بھی ، کیوں کہ دشمن کی ہمیشہ کوشش ہوتی ہے کہ چھاپہ مار گروہ کی صفوں میں اپنے جاسوس داخل کیۓ جائیں تاکہ انکے منصوبوں ،محل وقوع  ، اور انکی زندگی کے ذرائع کے بارے میں معلومات حاصل کر پائیں-
متذکرہ اخلاقی صلاحیتوں کے  ساتھ ساتھ ، چھاپہ مار جنگجو کا بہت ساری جسمانی صلاحیتوں کا حامل ہونا بھی ضروری ہے- اسے ہر حال میں نہ تھکنے والا ہونا چاہیۓ -جب تھکن نا قابل برداشت ہو تو ایسے میں اسے لازمی طور پر  نئی کوشش کرنی چاہیۓ – اسکے چہرے سے جھلکتا گہرا اعتقاد ، اسے ایک اور قدم اٹھانے پر مجبور کرتا ہے ، اور یہ آخری قدم نہیں ہوتا بلکہ ایک اور پھر ایک اور حتیٰ کہ وہ اپنی قیادت کی جانب سے نامزد جگہ تک پہنچ جاتا ہے –

اسے انتہاؤں کو بھی برداشت کرنے کے قابل ہونا چاہیۓ ،انھیں ( چھاپہ ماروں کو )  نہ صرف کم خوراکی، پانی ، کپڑوں اور چھت کی کمی  کے ساتھ گزارا کرنا ہوتا ہے (کہ ان حالات کا تو انہیں اکثر سامنا ہوتا ہی ہے ) ، بلکہ  ان میں بیماری اور زخموں کو برداشت کرنے کی بھی غیر معمولی صلاحیت ہونی چاہیۓ جو کسی جرا ح/ طبیب کی خاص مدد کے بغیر فطری طور پر مندمل ہوتے ہیں- یہ بہت ضروری ہے ، کیونکہ دشمن ہمیشہ ان افراد کو قتل کرتے ہیں جو زخموں یا بیماری کی صورت میں علاج کے لیۓ چھاپہ ماروں کے زیر تسلط علاقے سے باہر نکل آتے ہیں-
ان شرائط کو پورا کرنے کے لیۓ اسے ( چھاپہ مار کو ) آہنی اعصاب کا مالک ہونا چاہیۓ ، جو اسے بیمار ہوۓ بغیر ان تمام مشکلات سے نبرد آزما ہونے کے قابل بنا دیتی ہے ، اور اسکی ، شکار کیۓ ہوۓ جانور کی زندگی سے مماثل کمزوریوں کو طاقت میں بدلنے میں مدد دیتی ہیں – مطابقت پیدا کرنے کی اپنی فطری صلاحیت کے بدولت ، وہ اس زمین کا حصّہ بن جاتا ہے جس پر وہ برسر پیکار ہوتا ہے-

(…… جاری ہے )

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare on February 3, 2011 at 3:35 pm
چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا
حصّہ (x )
مترجم نواز بگٹی
باب دوئم – چھاپہ مار گروہ
چھاپہ مار جنگجو – سماجی مصلح

ہم پہلے ہی بیان کر چکے ہیں کہ چھاپہ مار جنگجو عوامی آزادی کے خواہش میں ساجھے دار کی حیثیت سے ، ( جدو جہد آزادی کی ) پر امن راہوں کے مسدود ہونے کی بناء پر  ، عوام کے ہر اول دستے کے مسلح سپاہی کی حیثیت سے جنگ کا آغاز کرتا ہے – جدوجہد کے با لکل ابتداء ہی سے اسکی نیت ظلم و جبر کو نیست و نابود کرنے کی ہوتی ہے ، اسکی اس نیت میں قدیم کو جدید سے بدلنے کا ارادہ پوشیدہ ہوتا ہے –

ہم یہ بھی پہلے بتا چکے ہیں کہ امریکہ میں ، بلکہ ناقص اقتصادی ترقی کے حامل  تمام  ممالک میں اندرون ملک ( دیہی ) علاقے ہی جنگ کے لئے مثالی حالات مہیا کرتے ہیں – اسی لئے چھاپہ مار اپنے سماجی ڈھانچے کی بنیادیں رکھنے کا آغاز زرعی زمین کے ملکیت کی تبدیلی سے کرتا ہے –

ابتداء میں چاہے اپنے اصلاحاتی اہداف کا جامع اظہار ہو پاۓ یا نہ ہو پاۓ ،یا پھر  یہ بے زمین کسانوں کی صدیوں پرانی  خواہش یعنی اپنی زیر کاشت زمین کی ملکیت کے مالکانہ حقوق کا سادہ سا حوالہ ہی ہو ، لیکن اس پوری مدّت میں جنگی پرچم  زرعی اصلاحات کے بنیادوں پر ہی بلند کیا جاۓ  گا –
اب زرعی اصلاحات کے نفاز کی صورت کیا ہو ، اس کا انحصار جنگ شروع ہونے سے پہلے کے حالات اور جدوجہد کی سماجی گہرائی پر ہوتا ہے – لیکن چھاپہ مار جنگجو کو ، بلند مرتبہ اخلاق کا مظاہرہ کرتے ہوۓ ثابت کرنا ہوگا کہ وہ جن مقاصد کی نگہبانی کے لئے عوام کے ہراول دستے کا کردار نبھا رہا ہے ، ان مقاصد کا حقیقی داعی وہی ہے – جنگ کے مشکل حالات کی مسلط کردہ خوشی اور غم کی کیفیات میں اسے خود پر سختی سے قابو رکھنا ہوگا ، تا کہ وہ (اپنے مقصد سے ) ذرا بھی روگردانی کا شکار نہ ہو ، ذرا سی بھی زیادتی کا مرتکب نہ ہو – چھاپہ مار جنگجو کو چاہیے کہ وہ  اپنے آپ کو ( اپنے مقصد کی حصول کے لئے ) وقف کر دے –
جہاں تک سماجی تعلقات کا سوال ہے ، یہ رشتے بڑھتے ہوۓ جنگ کے ساتھ ساتھ تبدیل ہوتے رہتے ہیں – ابتداء میں تو چھاپہ مار جنگجو کے لیۓ ممکن ہی نہیں ہو گا کہ وہ کسی سماجی تبدیلی کی کوشش بھی کرے –
ایسی اشیاء جن کی خریداری میں نقد ادائیگی نہ کی جا سکتی ہو ، انھیں ضمانتوں کے عوض خریدا جا سکتا ہے ، اور ان ضمانتوں کو موقع ملتے ہی چھڑا لینا چاہیے –
کاشتکاروں کی ہمیشہ ، تکنیکی ، اقتصادی ، اخلاقی اور ثقافتی مدد کرنی چاہیے – غریبوں کے لیۓ ہمیشہ مددگار ، اور جنگ کے ابتدائی مرحلے میں  امراء کو حتیٰ الا مکان کم سے کم پریشان کرتے ہوۓ ، چھاپہ مار جنگجو کو  ہمیشہ زمین پر اترنے والے ایک راہنماء فرشتے کی مانند ہونا چاہیے – لیکن یہ جنگ اپنی متعین کردہ راہ پر جاری رہے گی ، تضادات مسلسل بڑھتے رہیں گے ، اور ایک وقت ایسا آۓ گا جب کچھ لوگ جن کا رویہ انقلاب کے لیۓ ہمدردانہ تھا ، اب انقلاب کی مخالفت پر کمر بستہ نظر آئین گے ، اور یہی لوگ مقبول عوامی قوت کے مقابلے میں سب سے پہلے محاظ بنا لیں گے – ایسے وقت میں چھاپہ مار جنگجو کو چاہیے کہ وہ اپنے بنیادی مقاصد سے اعلیٰ وابستگی کا مظاہرہ کرتے ہوۓ ہر قسم کی غداری کو منصفانہ سزا دے- جنگ زدہ علاقے کی شخصی جائدادیں سماجی مقاصد کے حصول کے ذرائع کی شکل دینی چاہیے ، مثال کے طور پر اضافی زمین ، یا مویشیوں کی کثیر تعداد کسی مخصوص خاندان کی امارت کا سبب ہونے کی بجاۓ ، انھیں منصفانہ طور پر برابری کی بنیاد پر غرباء میں تقسیم کیے جانے چاہیئں –
سماجی مقاصد کے لیۓ حاصل کی جانے والی اشیاء کے مالکان کے معاوزے کی خواہش کا ہمیشہ احترام کرنا چاہیے – اور اس معا وزے کی ادائیگی ہمیشہ ضمانتی ہوگی ( امید کی ضمانت ! جسے ہمارے استاد جنرل بایو قرض دینے والے اور قرض خواہ کے باہمی مفادات کے حوالوں سے بیان کرتے تھے )   – بد معاشوں اور انقلاب دشمنوں کی زمین و جائداد کو فوری طور پر انقلابی قوتوں کے ہاتھوں میں منتقل کر دینا چاہیے – مزید برآں جنگ کی حدّت سے فائدہ اٹھاتے ہوۓ ، جب عوام میں برادرانہ تعلقات اپنے عروج پر پہنچ جائیں ، تو مقامی اقدار کے تناظر میں امداد باہمی کے تمام امور کی حوصلہ افزائی کی جانی چاہیے –
چھاپہ مار جنگجو کو ایک سماجی مصلح کی حیثیت میں  صرف اپنے زندگی کی مثال فراہم نہیں کرنی چاہیے ، بلکہ اسے نظریاتی مسائل سے بھی آگاہی فراہم کرنی ہوگی ، اسے وضاحت کرنی ہوگی کہ وہ کیا کچھ جانتا ہے اور صحیح وقت میں کیا کرنا چاہتا ہے- اس نے جو کچھ سیکھا ہوتا ہے اسے استعمال کرنا ہوگا ، جنگ کے ماہ و سال سے اس کے نظریات میں جو پختگی آئی ہے ، ہتھیاروں کی صلاحیت کا مظاہرہ اس کی انتہا پسندی میں جس اضافے کا سبب بنی ، عوامی نقطہء نظر جو اس کے روح ، اس کی زندگی کا حصّہ بن چکی ہے ، اور اسے جو انصاف کی سمجھ ملی ہے ، وہ تبدیلی کے تسلسل کی اہمیت کا جو ادراک رکھتی ہے ، اور ان سب عوامل کیجو اہمیت اس کے سامنے واضح ہوئی ، اور ان سب سے فوری محرومی کی حقیقت ، ہر شے میں دوسروں کو شریک کرنا ہوگا –
ایسے حالات اکثر پیدا ہونگے ، کیونکہ چھاپہ مار جنگ کے سپاہی ، یا چھاپہ مار جنگ کے ہدایتکار ان لوگوں میں سے نہیں جو کسی کے اشارہ ابرو پر جھکے ہوں – یہ تو وہ لوگ ہیں جو ضروری نہیں کہ خود اپنی ذاتی زندگی میں کسی ایسے  کڑوے تجربے سے گزرے ہوں ، بلکہ یہ لوگ  کھیت مزدوروں / کاشتکاروں کے نقطہء نگاہ سے ، سماجی رویوں میں  تبدیلی کی ضرورت کو سمجھتے ہیں -جب ایسا ہوتا ہے ( کیوبا کے تجربے کی روشنی میں بات کو آگے بڑھاتے ہیں ) تو ان راہنماؤں کے درمیان حقیقی روابط پیدا ہوتے ہیں ، وہ جو اپنے عمل سے لوگوں کو مسلح جدو جہد کی بنیادی اہمیت کی تعلیم دیتے ہیں ، اور وہ  لوگ جو بغاوت کی پیداوار ہوتے ہیں اور اپنی قیادت کو ان عملی ضروریات  کی تعلیم دیتے ہیں جنکی ہم بات کر رہے ہیں – پس چھاپہ مار جنگجو اور اوکے لوگوں کے درمیان ان روابط کے نتیجے میں ایک ترقی پسند انتہا پسندی جنم لیتی ہے ، جو تحریک کی انقلابی خصوصیات پر زور دیتے ہوۓ اسے قومی تحریک کی حیثیت دیتی ہے-

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare on February 2, 2011 at 1:41 pm
چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا
(حصّہ IX )
مترجم نواز بگٹی
مضافاتی جنگ

اگر دوران جنگ چھاپہ مار کسی مضافاتی مقام تک پہنچ جاتے ہیں ، اور شہروں میں گھسنے کی کوشش کرتے ہیں ، انھیں حفاظتی نقطہء نگاہ سے مناسب صورتحال پیدا کرنے کی ضرورت پیش آتی ہے – ایسے میں ضروری ہے کہ ان مضافاتی چھاپہ مار گروہوں کو خاص تعلیم دی جاۓ بلکہ خاص انداز میں منظم کیا جاۓ –

یہ سمجھنا ضروری ہے کہ مضافاتی چھاپہ مار ایک خود رو مخلوق نہیں ہے – یہ صرف اس وقت پیدا کیے جا سکتے ہیں جب اس کی بقاء کے لیۓ ضروری حالات تیار کیۓ جائیں – اسی لیۓ مضافاتی چھاپہ مار ہمیشہ کسی دوسرے علاقے میں موجود قیادت سے براہ راست ہدایات لیتے ہیں  – یہ مضافاتی چھاپہ مار آزادانہ حیثیت سے کوئی سرگرمی  نہیں دکھا سکتے ، بلکہ یہ اپنی سرگرمیوں کی منصوبہ بندی کچھ اس انداز میں کرتی ہیں کہ یہ بڑی حکمت عملی کے حصّے کے طور پر  کسی دوسرے علاقے کے عوامی مفادات کی کاروائیوں میں معاونت کا کردار ادا کرتی ہیں ، کیونکہ یہاں کسی دوسرے چھاپہ مار گروہ کو اپنی سرگرمیاں جاری رکھنے کی آزادی حاصل نہیں ہوتی ، اس طرح کی کاروائیوں کا  مقصد مخصوص اہداف کا حصول ہوتا ہے – مثال کے طور پر مضافاتی چھاپہ مار گروہ اس قابل نہیں ہوتی کہ ٹیلیفون لائنوں کی تباہی ، کسی دوسرے علاقے میں جا کر حملہ کرنے ، یا پھر دور دراز سڑکوں پر دشمن افواج کے کسی گشتی پارٹی پر اچانک حملہ کرنے جیسی اہداف میں سے اپنے لیۓ کوئی انتخاب کر سکیں ، یہ صرف وہی کچھ کرتے ہیں جس کے بارے میں انھیں کہا جاتا ہے – اگر اس کو دیا ہوا ہدف ٹیلیفون کے کھمبے گرانے ، بجلی کی تاریں کاٹنے ، نکاسی کے نظام کو تباہ کرنے ، ریل کے راستوں یا پھر پانی کے ذخیروں کی تباہی ہو ، یہ ( مضافاتی چھاپہ مار ) خود کو اسی حد تک محدود کر لیتے ہیں تا کہ مخصوص ہدف کو بہتر طور پر حاصل کیا جا سکے –

انہیں چار سے پانچ افراد سے زیادہ نہیں ہونا چاہیۓ – یہاں محدود تعداد کی اہمیت بہت زیادہ ہوتی ہے کیونکہ مضافاتی چھاپہ مار کی تعیناتی کو انتہائی نا موافق حالات کے تناظر میں دیکھنا ہوگا ، جہاں دشمن کی نگرانی کے امکانات بہت زیادہ ہوتے ہیں ، اور یہاں شدید رد عمل کے ساتھ ساتھ دھوکا دہی کے امکانات بھی بہت زیادہ ہوتے ہیں -ایک اور مشکل صورتحال کا بھی ذکر کرتے چلیں کے مضافاتی چھاپہ مار گروہ جس علاقے میں سرگرم ہوتے ہیں وہاں سے دور بھی نہیں جا سکتے – کاروائی اور انخلاء کی رفتار کے سلسلے میں ، کاروائی کی جگہ اور کمین گاہ میں فاصلے کو بھی محدود کیا جانا چاہیۓ ، اور دیں کے وقت مکمل اخفاء / روپوشی بھی ایک اہم ضرورت ہوتی ہے – یہ انتہائی حد تک رات کی تاریکی میں سرگرم رہنے والا چھاپہ مار گروہ ہوتا ہے ، تا وقتیکہ حالات ایسے ہو جائیں کہ یہ کسی شہر کے محاصرے کے دوران جھڑپ میں براہ راست حصّہ لینے کے قابل ہوں –

ان حالات میں چھاپہ ماروں کی ضروری خصوصیات ہوتی ہیں ، تنظیم ( شاید یہاں اس خصوصیت کی انتہائی حد تک ضرورت ہوتی ہے ) اور صوابدیدی صلاحیتیں – خوراک کی فراہمی کے معاملے میں وہ دو سے تین دوست گھرانوں سے زیادہ پر انحصار نہیں کر سکتا ، اور یہ بات تقریباً یقینی ہے کہ ان گھروں کے محاصرے کا نتیجہ موت ہی ہوگا – مزید برآں ان کا اسلحہ بھی دوسرے چھاپہ ماروں کے زیر استعمال اسلحے سے مختلف نوعیت کا ہوتا ہے – یہ اسلحہ کچھ اس طرح کا ہونا چاہیۓ جسے ذاتی حفاظت کے مقاصد کے لیۓ استعمال کیا جا سکے ، جس سے فوری انخلاء کے راستے میں کوئی مشکل نہ  پیش آۓ، اور نہ ہی چھاپہ مار کے خفیہ کمین گاہ کی نشاندہی کا سبب بنے – ہتھیاروں کے معاملے میں یہ گروہ اپنے ساتھ زیادہ سے زیادہ ایک کاربائن یا پھر ایک یا دو مخفی شاٹ گن ، اور باقی اراکین کے لیۓ پستول رکھ سکتا ہے –

انہیں محض مخصوص سبوتاژ کی کاروائی پر اپنی تمام تر توجہ مرکوز رکھنی چاہیۓ ، اور مسلح حملے کبھی نہیں کرنے چاہیۓ ، سواۓ دشمن  کے ایک یا دو سپاہیوں یا دشمن کے ایک آدھ ایجنٹ پر اچانک حملے کے-

سبوتاژ کے لیۓ چھاپہ ماروں کے پاس جامع اوزاروں کا ہونا بہت ضروری ہے – چھاپہ ماروں کے پاس بہترین آری ، دھماکہ خیز مواد کا بڑا ذخیرہ ، پکس اور شاولز ( بھاری وژن اٹھا نے کی جدید مشینیں ) ، ریل کی پٹریوں کو اکھاڑنے کے مناسب اوزار ، غرضیکہ اپنے ہدف کے حصول کے لیۓ تمام میکانیکی اوزار اس کے پاس ہونے چاہیئں – ان اوزاروں کو محفوظ جگہوں پر بڑی احتیاط سے چھپانا چاہیۓ ، اور ان افراد کے آسان دسترس میں جنھیں یہ سب استعمال کرنا ہے ( چھاپہ ماروں کے سرگرم اراکین کے ) –

اگر وہاں ایک سے زیادہ چھاپہ مار گروہ سرگرم ہیں تو وہ سب ایک ہی قیادت تلے ہونگے ، جو انھیں عام زندگی جینے والے قابل بھروسہ افراد کے ذریعے کسی مخصوص کاروائی کے بارے میں ہدایات کاری کرے گا – مخصوص معاملات میں چھاپہ مار اپنے زمانہ امن کی سرگرمیوں کو جاری رکھنے کے قابل تو ہوتا ہے ، لیکن ایسا بہت مشکل ہوتا ہے – عملی طور پر کہا جاۓ تو ” مضافاتی چھاپہ مار گروہ ایسے افراد پر مشتمل ہوتا ہے ، جو پہلے ہی قانون کے دائرہ کار سے نکل چکے ہوتے ہیں ، حالت جنگ میں رہتے ہوۓ ، انتہائی نا موافق حالات میں سرگرم رہتے ہیں ، جنکا ہم پہلے احاطہ کر چکے ہیں “-

مضافاتی چھاپہ ماروں کے کردار کی اہمیت کو عام طور پر کم تر بنا کر پیش کیا جاتا ہے ، بہت خوب – اس طرح کی اچھی کاروائیاں  ، جو بہت بڑے علاقے تک پھیلاۓ جائیں ، تقریباً پورے علاقے کی تجارتی و صنعتی زندگی کو مفلوج کر دیتے ہیں ، جس کے نتیجے میں پوری آبادی میں بے چینی اور غم و غصّے کی کیفیت  پیدا ہوتی ہے ، پرتشدد حالات کے معاملے میں عدم برداشت جنم لیتی ہے ، جس سے غیر یقینی صورتحال کا خاتمہ ہو جاتا ہے – اگر جنگ کے ابتدائی دنوں ہی سے ، مستقبل میں اس طرح کی جنگی حکمت عملی کے امکانات کو مد نظر رکھتے ہوۓ ، ماہرین کو منظم کرنا شروع کیا جاۓ ، تو تیز ترین کاروائیوں کو یقینی بنایا جا سکتا ہے ، اور اس سے نہ صرف انسانی جانوں کو محفوظ بنایا جا سکتا ہے بلکہ قوم کے انمول وقت کو بھی بچایا جا سکتا ہے –

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare on February 2, 2011 at 4:30 am

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا
حصّہ ( VIII )

مترجم نواز بگٹی

ناموافق میدانوں میں نظام جنگ

ایسے علاقے میں چھاپہ مار جنگ کو لڑنے کے لئے ، جہاں کچھ زیادہ پہاڑ نہیں ، جنگلات کی کمی ہے ، بہت زیادہ روڈ رستے ہیں ، چھاپہ مار جنگ کی تمام بنیادی ضروریات کو مد نظر رکھنا چاہیے ، صرف صورتیں تبدیل ہونگی – چھاپہ مار جنگ کی ، صرف اور صرف عددی تبدیلی ہوگی نہ کہ معیاری تبدیلی – مثال کے طور پر ، پچھلی روایات کو برقرار رکھتے ہوۓ ، اس طرح کے چھاپہ ماروں کی نقل و حرکت غیر معمولی ہو ، رات کے وقت حملوں کو ترجیح دینی چاہیے ، حملوں کا تسلسل انتہائی تیز ہونی چاہیے ، لیکن چھاپہ ماروں کو چاہیے کہ وہ مسلسل متحرک رہیں ، جہاں سے آتے ہوں واپسی کے لئے وہاں جانے کی بجاۓ کسی دوسرے راستے سے نکل جائیں ، اس بات کو ذہن میں رکھتے ہوۓ کہ قرب و جوار میں ایسی کوئی بھی جگہ نہیں جو غاصبوں کی دست برد سے محفوظ ہو ، جسے وہ ( چھاپہ مار ) اپنی چھاؤنی یا عارضی آرام گاہ کے طور پر استعمال کر سکیں ، انہیں   کاروائی کے علاقے سے جتنا ممکن ہو دور نکل جانا چاہیۓ .
ایک جوان رات کے اوقات میں تقریباً تیس سے پچاس کلو میٹر تک سفر کر سکتا ہے ، اور ضرورت کے مطابق صبح سویرے تک سفر کو جاری رکھنے کا فیصلہ کیا جا سکتا ہے ، بشر طیکہ کاروائی کے علاقے پر گہری نظر نہ رکھی جا رہی ہو ،علاقے کی مقامی آبادی سے کوئی خطرہ درپیش نہ  ہو ، نہ ہی آتے جاتے کسی گشتی دستے کی نظروں میں آنے کا خطرہ ہو کہ جس سے چھاپہ ماروں کی محل وقوع اور  آمد و رفت کے راستے دشمن کے نظروں میں آ سکتے ہوں –  حملوں کے لئے رات کی تاریکی کو ترجیح دینی چاہیۓ ، کاروائی سے قبل اور کاروائی کے بعد ممکنہ حد تک خاموشی کو برقرار رکھا جاۓ -حملوں کے لئے رات کے ابتدائی اوقات بہترین تصور کیے جاتے ہیں – حالات کو مد نظر رکھتے ہوۓ ، بنیادی قوائد سے روگردانی بھی کی جا سکتی ہے -حملے کے لئے  پو پھٹنے ( صبح سویرے ) کے وقت کا انتخاب بھی کیا جا سکتا ہے- دشمن کو مخصوص جنگی حالات کا عادی بنانا عقلمندی نہیں ہوگی ، لہٰذا ضروری ہے کہ اہداف ، اوقات اور طریقہء کار میں مسلسل تبدیلی جاری رکھی جاۓ –
جیسے کہ ہم پہلے بتا چکے ہیں کہ اکثر کاروائیاں زیادہ لمبے وقت تک نہیں جاری رکھی جا سکتیں ، لیکن کاروائیوں کی تعداد میں تیزی لانی چاہیۓ ، انھیں زیادہ سے زیادہ مؤثر  ہونا چاہیۓ ، ان کا دورانیہ چند لمحوں پر مشتمل ہو ، اور پھر اسی تیزی سے فرار بھی اختیار کیا جاۓ –  یہاں ہتھیار بھی موافق میدانوں میں مستعمل ہتھیاروں سے مختلف ہونگے ، خود کار ہتھیاروں کی بارے تعداد کو ترجیح دی جاۓ گی- رات کی تاریکی میں نشانہ بازی کی صلاحیت کوئی فیصلہ کن کردار نہیں ادا کرتی ،بلکہ فائر پر زیادہ توجہ مبذول کرنی چاہیۓ ، کم فاصلے سے خود کار ہتھیاروں سے جارحانہ حملوں میں دشمن کو زیادہ سے زیادہ تباہی سے دو چار کرنا ممکن ہو جاتا ہے –
یہاں سڑکوں اور پلوں کوبارودی سرنگوں کے زریعے تباہ کرنے کی حکمت عملی بھی انتہائی اہمیت کی حامل ہے – تسلسل اور مستقل مزاجی حوالے سے دیکھا جاۓ تو چھاپہ مار جارحیت کم ہی نظر آۓ گی ، لیکن یہ بہت پر تشدد ہوتے ہیں ، اور وہ ( چھاپہ مار ) مختلف ہتھیار استعمال کر سکتے ہیں ، جیسے بارودی سرنگیں یا شاٹ گن وغیرہ – کھلی گاڑیوں میں موجود سپاہ ، جو کہ سپاہیوں کی نقل و حرکت کا عمومی طریقہ بھی ہے ، حتیٰ کہ بند گاڑیوں یا بسوں وغیرہ کی حفاظت کا اہتمام نا ممکن ہوتا ہے ، لہٰذا انکے خلاف شاٹ گن کا استعمال بہت مؤثر ثابت ہو سکتا ہے – لمبی شاٹ کا حامل شاٹ گن بہت مؤثر ہو سکتا ہے – یہ صرف چھاپہ ماروں کی خصوصیت نہیں بلکہ بڑی روایتی جنگوں میں بھی یہ ایک آزمودہ طریقہ ہے – مشین گنوں کے ٹھکانوں کو تباہ کرنے کے لیۓ امریکیوں نے ، شاٹ گنوں کو بہتر گولہ بارود سے لیس  ، سنگین بردار فوجی ٹکڑیوں کا کامیاب استعمال کیا ہے –

یہاں گولہ بارود کے حوالے سے ایک اہم وضاحت بھی ضروری سمجھتے ہیں ، یہ تقریباً ہمیشہ دشمن ہی سے حاصل کیۓ جاتے ہیں -اس لیۓ ضروری ہے کہ ایسی جگہوں پر جارحانہ حملے کیۓ جائیں جہاں سے اسلحہ و گولہ بارود کا خاطر خواہ ذخیرہ ہاتھ لگنا یقینی ہو ، تا وقتیکہ ( چھاپہ مار ) اپنے محفوظ ذخائر کو بہت بڑھا نہیں لیتے – دوسرے الفاظ میں دشمن کے کسی گروہ کو برباد کرنے کے لیۓ اپنی گولہ بارود کو اس وقت تک داؤ پر نہیں لگانا چاہیۓ ، تا وقتیکہ اس ( اسلحہ ) کے متبادل کا حصول یقینی نہیں ہو جاتا – چھاپہ ماروں کو جنگ جاری رکھنے کے لیۓ اسلحہ کے حصول کی راہ  میں درپیش مشکلات کو ہمیشہ مد نظر رکھنا چاہیۓ – اس مقصد کے لیۓ چھاپہ ماروں کے لیۓ ضروری ہے کہ وہ بھی وہی ہتھیار استعمال کریں جو دشمن کے زیر استعمال ہیں ، سواۓ چند مخصوص اقسام کے ہتھیاروں کے ، جیسے کہ ریوالور یا شاٹ گن وغیرہ کہ ان کی گولیاں علاقے میں بآسانی دستیاب ہوتی ہیں یا پھر شہروں سے حاصل کی جا سکتی ہیں –
یہاں چھاپہ مار گروہ میں شامل جوانوں کی تعداد دس – پندرہ سے زیادہ نہیں ہونی چاہیۓ  – کسی بھی ایک جھڑپ کے لیۓ جوانوں کی تشکیل  میں محدود تعداد کو ہمیشہ مد نظر رکھنا چاہیۓ ، دس-بارہ- پندرہ لوگ کہیں بھی آسانی سے چھپ سکتے ہیں ، اور بوقت ضرورت ایک دوسرے کی بہتر مدد کر دشمن کے مقابلے میں شدید مزاحمت کا مظاہرہ کر سکتے ہیں- چار یا پانچ کی تعداد شاید کم ہو ، جبکہ اگر یہی تعداد دس سے تجاوز کر جاۓ تو اس بات کے امکانات زیادہ ہیں کہ یہ (چھاپہ مار ) اپنی کمین گاہوں میں ہی دشمن کی نظروں میں آ جائیں یا پھر (ہدف کی جانب ) پیشقدمی کے دوران دشمن ان کی نشاندہی کر لے-
یاد رکھیں کہ چھاپہ مار گروہ کی سرعت رفتار ہمیشہ گروہ میں شامل کمزور ترین شخص کی رفتار کے برابر ہوتی ہے – اس لیۓ مشکل ہے کہ بیس ، تیس ، یا چالیس افراد پر مشتمل گروہ کا رفتار ، دس افراد پر مشتمل گروہ کے برابر ہو – اور میدانی علاقوں میں تو چھاپہ مار کو بنیادی طور پر بہترین بھاگنے والا ہونا چاہیۓ – یہاں مارنے اور بھاگنے کی بنیادی مشق کا استعمال کا بہترین مظاہرہ ہوتا ہے – میدانی علاقوں کے چھاپہ ماروں کے پاس چونکہ جم کر مزاحمت کرنے کے لیۓ کسی بھی مقام کے انتخاب کے لیۓ غیر یقینی کی سی کیفیت ہوتی ہے ، اسی لیۓ انھیں ( چھاپہ ماروں کو ) ہر وقت محاصرے میں آنے کے شدید خطرات لاحق ہوتے ہیں ، اسی لیۓ انھیں چاہیۓ کہ لمبے عرصے تک رازداری سے روپوش رہیں ، کسی بھی ہمساۓ پر بھروسہ کرنا انتہائی خطرناک ثابت ہو سکتا ہے ، تاوقتیکہ ان کی وفاداریوں کا واضح تعین نہ کیا جاۓ – دشمن کا جبر اتنا پرتشدد ہوتا ہے ، عام طور پر اتنا ظالمانہ ہوتا ہے ، کہ نہ صرف خاندان کا سربراہ ، بلکہ بچے اور خواتین بھی ان کی دست برد سے محفوظ نہیں رہتے ، اس قدر شدید دباؤ میں کوئی بھی ایسا فرد جس کی وابستگی متزلزل ہو ، کسی بھی موقع پر دشمن کو ایسی معلومات دے سکتا ہے جس سے چھاپہ ماروں کے کمین گاہوں کی نشاندہی ہو سکے یا ان کے طریقہء کار کی ،کہ وہ کس طرح کام کرتے ہیں- جس کے نتیجے میں ہمیشہ محاصرے کا خطرہ سر ابھارتا ہے ، جو ہمیشہ  غیر متوقع نتائج کا حامل ہوتا ہے ، اگرچہ ضروری نہیں کہ محاصرے کے نتیجے میں بھاری نقصان بھی ہو – جب اسلحہ کی فراوانی ہو ، لوگوں میں بغاوت کا شدید جزبہ ہو، اور چھاپہ مار گروہ میں جوانوں کی تعداد بڑھانا نا گزیر ہو ،  تو ایسے حالات میں چھاپہ مار گروہ کو تقسیم کر دینا چاہیۓ -اگر ضرورت محسوس کی جاۓ تو یہ منقسم گروہ کسی مخصوص کاروائی کی انجام دہی کے لیۓ اکٹھے ہو جائیں ، اور کاروائی کے مکمل ہوتے ہی دوبارہ دس-بارہ- پندرہ کی تعداد میں منتشر ہو کر الگ الگ مقامات کی جانب نکل جائیں –

یہ بالکل ممکن ہے کہ تمام چھوٹی بڑی  (چھاپہ مار ) افواج کو ایک قیادت کی چھتری تلے جمع کیا جا سکے ، اوراس قیادت کے احترام اور اسکی تابعداری کو یقینی بنایا جا سکتا ہے ، بغیر اس سوال کے کہ تمام افواج (چھاپہ ماروں ) کا تعلق ایک ہی گروہ سے ہے یا نہیں – اسی لیۓ چھاپہ ماروں کے سربراہوں کے انتخاب میں ضروری ہے کہ اس کی  (منتخب سربراہ کی ) نظریاتی اور شخصی حیثیت میں تمام علاقائی سربراہان سے ہم آہنگی کو مد نظر رکھا جاۓ –

بزوکه اگرچہ ایک بھاری ہتھیار ہے لیکن نقل و حمل میں آسانی اور آسان طریقہء استعمال کی بناء پر اسے چھاپہ مار استعمال کر سکتے ہیں – آج کل کے رائفل کے ذریعے فائر ہونے والے اینٹی ٹینک گرنیڈ، اس (بزوکه ) کا بہتر متبادل ہو سکتے ہیں- ظاہر ہے یہ وہ ہتھیار ہیں جنھیں دشمن ہی سے حاصل کیا جا سکتا ہے – بزوکه ایک ایسا ہتھیار ہے جس سے بکتر بند گاڑیوں کو نشانہ بنایا جا سکتا ہے ، اور غیر بکتر بند ایسی گاڑیوں کو بھی جو دشمن افواج سے بھری ہوئی ہوں ، یا پھر کم جوانوں کی مدد سے کسی بھی (دشمن کے ) مرکز پر کم سے کم وقت میں قبضہ کیا جا سکتا ہے ، لیکن یہاں یاد رکھنے کا نقطہء یہ ہے کہ کوئی بھی جوان تین سے زیادہ (بزوکه کے ) گولے نہیں اٹھا سکتا ، اور اس یہی نقطہ ہمیشہ مد نظر رہنا چاہیۓ –

دشمن سے چھینے ہوۓ بھاری ہتھیاروں کا استعمال کسی عار کی بات نہیں ، لیکن کچھ بھاری بھرکم ہتھیار جیسے ٹرائی پاڈ مشین گن ، یا بھاری  پچاس ملی میٹر مشین گن 3  جیسے ہتھیاروں کے ہاتھ آنے کے بعد ان کے  استعمال کا مطلب ہوگا دوبارہ ان سے ہاتھ دھو بیٹھنا – دوسرے الفاظ میں نا موافق حالات جنگ ، جنکا ہم تجزیہ کر رہے ہیں ، ٹرائی پاڈ مشین گن یا اس طرح کی دوسری بھاری ہتھیاروں کا دفاع کرنے کی اجازت نہیں دیتے – انھیں (بھاری ہتھیاروں کو )  با لکل بھی استعمال نہیں کرنا چاہیۓ ، تا وقتیکہ  کسی اہم موقع کے پیش نظران ہتھیاروں سے دست بردار ہونا ضروری نہیں ہو جاتا – ہمارے کیوبائی جنگ آزادی میں ، ہتھیاروں سے دست برداری کو سنگین جرم سمجھا جاتا تھا ، اور کبھی بھی ایسی صورتحال نہیں پیدا ہوئی کہ ان ہتھیاروں سے دست بردار ہونا پڑتا – پھر بھی ہم نے ایسے حالات  کی واضح نشاندہی کر دی ہے جب ہتھیاروں سے دست برداری کو قابل ملامت عمل نہیں سمجھنا چاہیۓ- ناموافق میدانوں میں چھاپہ مار سپاہی کا ہتھیار ، تیز فائر کرنے والا ذاتی ہتھیار ہی ہوتا ہے –

کسی بھی علاقے میں آسان رسائی کا مطلب ہوتا ہے کہ  وہاں آبادی ملے گی ، کاشتکار بھی خاصی تعداد میں ہونگے ، یہی سہولیات رسد میں حیران کن آسانی کا سبب ہوتے ہیں – قابل اعتماد لوگوں ، اور علاقے کو خوراک و رسد پہنچانے والے ذرائع سے اچھے روابط استوار کر کے ،رسد کے طویل اور پر خطر روایتی ذرائع پر وقت صرف کیۓ بنا ، بھاری بھرکم رقم خرچ کیۓ بغیر ہی  چھاپہ مار گروہ کو بہترین حالت میں برقرار رکھا جا سکتا ہے -یہاں اس بات کا اعادہ کرنا مناسب ہوگا کہ تعداد جتنی کم ہو خوراک کا حصول اتنا ہی آسان ہوگا – بنیادی ضروریات جیسے ، بستر، واٹر پروف سامان ، مچھر دانیاں ، جوتے ، ادویات ، اور خوراک وغیرہ تو علاقے ہی سے براہ راست  دستیاب ہو سکتی ہیں ، کیونکہ یہ مقامی آبادی کی  روز مرّہ استعمال کی اشیاء ہی ہیں-

زیادہ افرادی قوت اور زیادہ سڑکوں پر انحصار کر کے روابط کو تو بہتر بنایا جا سکتا ہے ، لیکن ایسے میں دور دراز مقامات تک پیغامات کی حفاظت کے سنگین سوال ابھر سکتے ہیں ، اس لیۓ ضروری ہے کہ قابل بھروسہ روابط کا ایک سلسلہ قائم کیا جاۓ – دشمن کی صفوں میں مسلسل آمد و رفت کی وجہ سے کسی بھی پیغام رساں کی اچانک گرفتاری کا خطرہ پیدا ہو سکتا ہے – اگر پیغام کم اہمیت کا حامل ہے تو یہ زبانی ہونا چاہیۓ ، اگر اس کی اہمیت بہت زیادہ ہے تو لکھنے کے لیۓ مخصوص مخفی طریقہ استعمال کرنا چاہیۓ – تجربےسے ظاہر ہوتا ہے کہ لفظ بہ لفظ پیغامات اکثر روابط کو بگاڑ نے کا سبب بنتے ہیں –

اسی طرح کی  وجوہات کی بناء پرصنعتکاری کی اہمیت کم ہو جاتی ہے ، اور بیک وقت اسے آگے بڑھانا بھی بہت مشکل ہو جاتا ہے -اسلحہ اور جوتا سازی کے کارخانے لگانا نا ممکن ہے – عملی بات ہے کہ کاریگروں کو چھوٹے دوکانوں کی حد تک محدود کیا جاۓ ، ایسے دوکانوں میں جنھیں مخفی رکھنے میں انتہائی احتیاط برتی گئی ہو، جہاں شاٹ گن کی گولیوں کو دوبارہ بھرا جا سکے ، بارودی سرنگیں اور گرنیڈ وغیرہ ،اور اس وقت کی  دوسری کم از کم ضروریات کی تیاری ممکن ہو  دوسری طرف یہ بھی ممکن ہے کہ علاقے میں موجود دوستانہ دوکانوں کو اسی مقصد کے لیۓ حسب ضرورت  استعمال کیا جا سکتا ہے –

ہم اس منطقی گفتگو سے دو طرح کے نتائج اخذ کرتے ہیں – ایک یہ کہ چھاپہ ماروں کے لیۓ جوعلاقے موافق میدان کہلاتے ہیں، اور جہاں چھاپہ مار اپنے مضبوط مراکز قائم کرتے ہیں وہ علاقےعام طور پر اپنے کم  پیداوار اور غیر آباد کاری کی وجہ سے مشہور ہوتے ہیں ، جبکہ ایسے علاقے جہاں زندگی کے پنپنے کو تمام  موافق حالات ،اور آباد کاری کے تمام ضروری سہولیات موجود ہیں وہاں چھاپہ ماروں کے لیۓ صورتحال بالکل برعکس ہے – (انتہائی دلچسپ اور غور طلب صورتحال ہے )- یعنی جتنی زیادہ سہولیات ، جتنی اچھی سماجی زندگی ہو گی ، وہاں چھاپہ ماروں کو اتنی ہی غیر یقینی اور خانہ بدوشی کی سی صورتحال کا سامنا ہوگا – یہ درحقیقت اس ایک ہی سادہ سی اصول کا نتیجہ ہے – اس باب کا عنوان ہے ” نا موافق میدان میں نظام جنگ ” ، یعنی ہر وہ چیز جو انسانی زندگی کے موافق ہو ، ذرائع رسل و رسائل ،بڑی تعداد میں شہری و نیم شہری آبادی ، مشینوں سے ہموار کیا گیا زمین ، یہ تمام حالات چھاپہ ماروں کو نا موافق صورتحال سے دو چار کرتے ہیں –

دوسرا نتیجہ ، اگر چھاپہ مار طرز جنگ کے لیۓ عوامی راۓ عامہ کو ہموار کرنا ضروری ہے تو نا موافق میدان میں تو اس کی اہمیت بہت بڑھ جاتی ہے ، جہاں دشمن کا ایک حملہ بہت زیادہ تباہی کا سبب بن سکتا ہے – یہاں اپنے نظریے کی تبلیغ جاری رکھنی  چاہیۓ اور اس کے ساتھ ساتھ کارکنوں ،کاشتکاروں اور اس علاقے میں رہائش پذیر دوسرے تمام طبقوں کی ، یکجہتی کی جدوجہد بھی کی جاۓ تا کہ چھاپہ مار گروہوں کی یکجہتی کو برقرار رکھا جا سکے – عوامی رابطوں کے اس مہم میں ، چھاپہ ماروں اور مقامی آبادی کے رشتوں کے اس مشکل مہم میں ، اگر دشمن کے کسی اڑیل سپاہی سے سامنا ہو جاۓ، اور وہ خطرناک محسوس ہو تو اسے ختم کرنے میں با لکل بھی  ہچکچاہٹ کا مظاہرہ نہیں کرنا چاہیے – ان معاملات میں چھاپہ مار گروہ کو انتہائی سختی کا مظاہرہ کرنا ہوگا ، ایک غیر محفوظ علاقے میں اپنے درمیان دشمن سپاہی کی موجودگی کو کسی بھی صورت میں برداشت نہیں کیا جا سکتا –

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare on February 1, 2011 at 1:04 pm

 

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا
(حصّہ VII )
مترجم نواز بگٹی
موافق میدان کا نظام جنگ

جیسا کہ ہم پہلے کہہ چکے ہیں کہ ضروری نہیں کہ ہمیشہ چھاپہ مار جنگ ، ایسے موافق میدان میں لڑی جاۓ جہاں انہیں ( چھاپہ ماروں ) کو اپنی حکمت عملیاں اختیار کرنے میں آسانی ہو ؛ لیکن ایسا تب ہوتا ہے جب چھاپہ مار جنگ دشوار گزار علاقوں میں لڑی جا رہی ہو ، اسکی وجہ چاہے گھنے جنگلات ہوں ، بلند و بالا پہاڑ ہوں ، یا پھر بے آب و گیاہ میدان ، چھاپہ مار جنگ کی بنیادی و مسلمہ  حقائق کی بناء پر عمومی حکمت عملی ہمیشہ ایک سی ہونی چاہیئں – یہاں  ایک اہم اور غور طلب نقطۂ ہے دشمن سے سامنا ہونے  کا – اگر علاقہ اتنا گنجان ہے یا پھر اس قدر دشوار گزار ہے کہ وہاں کسی منظم فوج کا گزر مشکل ہو جاتا ہے تو چھاپہ ماروں کو چاہیے کہ وہ ان علاقوں کی جانب پیش قدمی کریں جہاں دشمن افواج کی رسائی اور اس سے  مقابلے کے امکانات ہوں-
جیسے ہی چھاپہ ماروں کی بقاء یقینی بن جاۓ ، انھیں چاہیے کہ لڑنے کے لیۓ اپنی کمین گاہوں سے مسلسل باہر نکلیں – غیر موافق میدانوں میں انکی نقل و حرکت یقیناً اتنی بہتر نہیں ہوگی ، لیکن انہیں اپنے آپ کو دشمن کی صلاحیتوں سے یقینی طور پر ہم آہنگ کرنا ہوگا ، لیکن یہ بھی ضروری نہیں کہ ایسے علاققوں کی جانب پیش قدمی میں پھرتی دکھائی جاۓ جہاں دشمن انتہائی کم وقت میں اپنی سپاہ کو بڑی آسانی کے ساتھ ، بڑی تعداد میں جمع کرنے کی صلاحیت رکھتا ہو – چھاپہ مار جنگ کی تاریکی سے فائدہ اٹھانے کی روایت اتنی اہمیت کی حامل نہیں ، بہت سارے معاملات میں، دن کے وقت بھی کاروائی کے امکانات موجود ہوتے ہیں ، خصوصاً دن کے وقت نقل و حرکت ، اگرچہ اسے دشمن کی فضائی و زمینی نگرانی سے مشروط ہی کیا جاۓ – یہ بھی ممکن ہے کہ کسی جھڑپ کو لمبے وقت تک طول دیا جاۓ ، خصوصاً پہاڑوں میں ، جوانوں کی تھوڑی سی تعداد بھی لڑائی کو لمبے وقت تک طول دے سکتی ہے ، اور بہت حد تک ممکن ہے کہ دشمن کے کمک کو میدان جنگ تک پہنچنے ہی نہ دیا جاۓ –
تمام قابل رسائی جگہوں پر قریبی نظر رکھنا ایک ایسی بنیادی و آفاقی حقیقت ہے جسے چھاپہ مار کسی بھی طور پر نہیں بھول سکتے – دشمن کے کمک کو درپیش مشکلات کے سبب انکی (چھاپہ ماروں کی ) جارحیت حد درجہ بڑھ جاتی ہے ، وہ دشمن کے زیادہ قریب تک جا سکتے ہیں ، دو بہ دو اور زیادہ وقت تک لڑنا ممکن ہو سکتا ہے – اگرچہ ان قوائد کو   ، دوسرے پہلوؤں سے بھی پرکھنا لازمی ہوتا ہے ، جیسے کہ دستیاب گولہ بارود وغیرہ –
موافق میدان جنگ کی آسانیاں اپنی جگہ ، لیکن اس میں بہت سی مشکلات کا سامنا ہوتا ہے ، وہ ہیں ،  دشمن کے احتیاطی تدابیر کی وجہ سے  کہ کسی بھی کامیاب جھڑپ کے نتیجے میں خاطر خواہ گولہ بارود کا ہاتھ نہ آنا ، ( چھاپہ مار جنگجو کو یہ حقیقت کبھی بھی فراموش نہیں کرنی چاہیے کہ انھیں ہتھیاروں کی فراہمی کا سب سے بڑا ذریعہ دشمن افواج ہی ہیں .) لیکن نا موافق میدان کے برعکس ،دشمن کے بھاری توپخانے کی پہنچ سے دور ، فضائی حملوں سے محفوظ ، یہاں چھاپہ مار سرعت سے اپنی جڑیں مضبوط کر سکتے ہیں ، یہاں ایک مضبوط مرکز کا قائم کیا جاسکتا ہے  جس کے ذریعے دشمن کو جنگ میں مصروف رکھا جا سکے ، جہاں حسب ضرورت چھوٹی صنعتیں قائم کی جائیں ، جیسے ہسپتال ، تعلیمی و تربیتی مراکز ، ذخیرہ اندوزی کی سہولیات ، اور پروپگینڈہ کی بنیادی تنصیبات وغیرہ –
ان (موافق ) میدانوں میں چھاپہ مار اپنی افرادی استعداد بھی بڑھا سکتے ہیں ، اس افرادی قوت میں ایسے افراد بھی شامل ہو سکتے ہیں جن کی ذمہ داریاں براہ راست جنگجوانہ نہیں ہوتیں ، اور ایسے افراد کو بھی  ہتھیاروں کے استعمال کی تربیت دی جا سکتی ہے جواچانک  چھاپہ ماروں کی قوت میں اضافے کا سبب بنے ہوں-
چھاپہ مار گروہ اپنے ساتھ کتنے افراد رکھ سکتا  ہے ، اس کا انحصار علاقے میں موجود عوامل کے  انتہائی لچکدار تخمینوں کی بنیاد پر ہوتا ہے ، حصول  رسد کے دستیاب ذرائع ، دوسرے علاقوں سے مظلوموں کی بھاری تعداد میں آمد ، دستیاب اسلحہ ، تنظیمی ضروریات ، وغیرہ – لیکن ہر طرح کے معاملے میں ، نئی آمدہ جنگجوؤں کے تعاون سے وسعت کے عملی  امکانات  بہت حد تک موجود ہوتے ہیں- ایسے گروہ کی کاروائیوں کے لیۓ میدان کی وسعت اس قدر زیادہ ہوتی ہے جتنی کہ  حالات ، اور منسلکہ علاقوں میں مصروف عمل دوسرے گروہوں کا دائرہ کار اجازت دیتے ہوں – چھاپہ مار گروہوں کے عملی دائرہ کار کے تعین میں ، مصروف عمل علاقے اور محفوظ مرکز کے درمیان فاصلے کا بھی خاطر خواہ کردار ہوتا ہے- رات کی تاریکی میں نقل و حرکت کے عمومی اصول کو مد نظر رکھتے ہوۓ کہا جا سکتا ہے کہ ان کا (چھاپہ ماروں کا ) عملی دائرہ کار ، اپنے محفوظ مرکز سے چھہ – سات گھنٹوں کے فاصلے تک ہی محدود ہوتا ہے – چھوٹے چھاپہ مار گروہ جو مسلسل کسی مخصوص علاقے میں دشمن کو کمزور کرنے میں مصروف ہوں ، اپنے محفوظ مرکز سے نسبتاً زیادہ دور تک جا سکتے ہیں-
ایسی لڑائیوں کے لیۓ ہتھیاروں کی ترجیحی  اقسام ، طویل فاصلے تک مار کرنے والے ایسے ہتھیاروں کی ہوتی ہے  جن کی گولیوں پر اٹھنے والے اخراجات کم ہوں ، اور مدگار ہتھیاروں کے طور پر خود کار و نیم خودکار ہتھیاروں کی مناسب تعداد بھی ساتھ رکھی جا سکتی ہے -اگر رائفلوں یا مشن گنوں کی بات کی جاۓ تو ،   امریکی منڈیوں میں دستیاب  گرینڈ کے نام سے مشہور (M -1 ) رائفل ایک بہتر انتخاب ہو سکتا ہے –  بہر حال اسے صرف مناسب تربیت یافتہ افراد کو ہی استعمال کرنا چاہیے ، کیونکہ اس کے غیر مناسب استعمال میں گولیوں کے بڑی تعداد میں غیر ضروری استعمال  کا خطرہ مضمر ہوتا ہے – بھاری ہتھیاروں کی درمیانی اقسام ، جیسے ٹرائی پاڈ مشین گن وغیرہ کو موافق میدان میں استعمال کیا جا سکتا ہے جسکے استعمال سے جنگجو اور ہتھیار  کی حفاظت کو بڑی حد تک یقینی بنایا جا سکتا ہے ، لیکن ایسے ہتھیار دشمن کو خود سے دور رکھنے کے لیۓ تو کارگر ہوتے ہیں ، حملے کے لیۓ نہیں –
٢٥ (پچیس ) افراد پر مشتمل ایک چھاپہ مار گروہ میں ہتھیاروں کی مثالی تقسیم کچھ یوں ہو سکتی ہے کہ ، دس سے پندرہ سنگل شاٹ رائفل لیۓ جائیں ، اور کم و بیش دس عدد خود کار ہتھیار ہوں ، گرینڈس یا دستی مشین گن ، بشمول ہلکے اور بآسانی اٹھاۓ جانے والے خود کار ہتھیاروں کے ، جیسے کہ ” براؤننگ ” یا زیادہ جدید بیلجین ایف – اے – یل (FAL ) یا ایم – ١٤ ( M -14 ) خود کار رائفل –
دستی مشین گنوں میں بہترین ہتھیار  وہی  ٩ ملی میٹر والے ہی ہیں ، جن کے گولیوں کی بھاری مقدار کو لانا لے جانا آسان ہوتا ہے – جس قدر سادہ ہتھیار ہوں اتنے ہی بہتر ہوتے ہیں ، کیوں کہ اپنی سادہ جوڑ جکھ کی بناء پر انکے پرزوں کی تبدیلی بہت آسان ہوتی ہے – یہ تمام دشمن کے زیر استعمال ہتھیاروں کے ساتھ ہم آہنگ ہوں ، ایسا تبھی ہو سکتا ہے جب ہم اسی سے چھینے ہوۓ ہتھیار اس کے خلاف استعمال کر رہے ہوں – بھاری ہتھیاروں کا استعمال عملی طور پر نا  ممکن ہوتا ہے – جہاز کچھ دیکھ نہیں پاتے اور اپنی کاروائی روک دیتے ہیں ، ٹینک اور توپ دشوار گزار علاقوں میں کسی کام نہیں آتے –
ایک انتہائی غور طلب نقطۂ ہوتا ہے رسد کا – اپنی دشوار گزاری کی وجہ سے  ایسے علاقے واقعی مشکلات کا سبب بنتے ہیں ، چونکہ  ایسے علاقوں میں کاشتکاروں کی قلیل تعداد ہوتی ہے ، یہی وجہ ہے کہ جانوروں اور خوراک کی فراہمی بھی تکلیف دہ حد تک کم ہی ہوتی ہے – اس لیۓ بے حد ضروری ہوتا ہے کہ  ذرائع رسد و رسائل کو مستحکم کیا جاۓ تا کہ خوراک کی کم سے کم ضروری مقدار کو ذخیرہ کیا جا سکے جو کسی بھی برے وقت میں بہت اہمیت اختیار کر سکتی ہے – نا قابل رسائی ہونے کی بناء پر ایسے علاقوں میں سبوتاژ کی کوئی بھی بڑی کاروائی کرنے کے امکانات نہیں ہوتے ،  کیونکہ یہاں تعمیرات ، مواصلات اور کاریزوں کی تعداد بہت کم ہوتی ہے ، جنھیں براہ راست کروائی سے تباہ کیا جا سکتا ہو-
رسد کے لیۓ بار برداری کے  جانور رکھنا بہت اہم ہوتا ہے ، اس مقصد کے لیۓ  دشوار گزار علاقوں میں خچر ایک بہترین جانور ہے – جانوروں کے لیۓ خوراک کے حصول کی خاطر مناسب چراگاہ بھی اپنی دسترس میں ہونی چاہیے – خچر ان دشوار گزار پہاڑی راستوں سے بآسانی گزارنے کی صلاحیت رکھتے ہیں جہاں سے دوسرے جانوروں کا گزرنا نا ممکن ہوتا ہے – انتہائی نا مساعد حالات میں بار برداری کے انسانی ذرائع بھی استعمال کرنے کی ضرورت پڑ سکتی ہے ، ہر شخص ٢٥ (پچیس ) کلو گرام تک کا وژن ، کئی گھنٹوں تک ، کئی روز کے لیۓ اٹھا سکتا ہے –
رسد کے راستے میں مناسب تعداد میں درمیانی مقامات کا تعین ہونا بھی ضروری ہے ،ان درمیانی مقامات پر مکمل طور پر قابل بھروسہ لوگ تعینات ہوں  ، تا کہ  ان مقامات پر مشکل حالات میں نہ صرف سامان کو ذخیرہ کیا جا سکے بلکہ اپنے ( سامان کے نقل و حمل کے ذمہ دار ) جوانوں کو چھپنے کی سہولت بھی مہیا ہو- سامان رسد کی نقل و حمل کے لیۓ چھاپہ مار گروہ کے ما بین داخلی راستے بھی بناۓ جاۓ سکتے ہیں ، ان کو چھاپہ مار گروہ کی بڑھتی ہوئی استعداد کو مد نظر رکھتے ہوۓ وسعت دی جا سکتی ہے- حالیہ کیوبا کی لڑائی میں ، کئی کلو میٹر لمبی ٹیلیفون لائنیں بچھائی گئیں ، سڑکیں بنائی گئیں اور پیغام رسانی کا مناسب انتظام کیا گیا ، تا کہ تمام علاقوں تک رسائی کو کم سے کم وقت میں ممکن بنایا جا سکے –
رابطوں اور پیغام رسانی کے دوسرے ذرائع بھی ہیں ، جنھیں اگرچہ کیوبا کی لڑائی میں استعمال تو نہیں کیا گیا لیکن انکی افادیت مسلمہ ہے ، جیسے کے دھویں کے اشارے (Smoke Signalz )، آئینے کے ذریعے سورج کی شعاؤں کو منعکس کر کے یا پھر پیغام رساں کبوتروں کا استعمال –
اپنے ہتھیاروں کو ہمیشہ اچھی حالت میں رکھنا ، گولہ بارود پر  قبضہ کرنا ، اور سب سے بڑھ کر مناسب جوتے ، چھاپہ ماروں کی اہم ضروریات میں شیمار ہوتی ہیں ، لہٰذا سب سے پہلے پیداواری صلاحیتوں کو ان ضروریات کے حصول پر مرکوز کرنا چاہیے –  جوتے بنانے کے لیۓ ابتدائی طور پر موچیوں کی روایتی تنصیبات سے مدد لیا جا سکتا ہے ، جو دستیاب جوتوں کی تلووں کو تبدیل کریں ، اس کے بعد جوتا سازی کی منظم صنعت کا انتظام کیا جاۓ جو روزانہ بنیادوں پر مناسب مقدار میں جوتوں کی پیداوار دے سکے – پاؤڈر ( بارودی مواد ) کا بنانا بہت سادہ ہے ، اسکے لیۓ ایک چھوٹے تجربہ گاہ کی ضرورت ہوتی ہے اور باہر سے ضروری اجزاء لے کر تجربہ گاہ میں پہنچانے کی – بارودی سرنگوں کا علاقہ دشمن کو شدید خطرات سے دو چار کر سکتا ہے ، بیک وقت بڑی تعداد میں دھماکوں کی غرض سے بہت بڑے علاقے میں بارودی سرنگیں بچھائی جا سکتی ہیں ، بارودی سرنگوں کے دھماکوں سے دشمن کے سینکڑوں سپاہیوں کو نشانہ بنایا جا سکتا ہے –