Let we struggle our way

Archive for January, 2011|Monthly archive page

Balochistan – Army & Judicial System

In Baloch Freedom movement, Baloch genocide, Disappearences, FC, justice on January 30, 2011 at 3:43 am

Army Officers acknowledged that a disappeared person was in their custody but the courts failed to recover him.

The Asian Human Rights Commission has received the details of the saga of disappearance of a master tailor who was arrested on two occasions by army personnel and how since October 2001 his whereabouts are unknown. The high officials of the Pakistan army including Corps Commander of Balochistan province, a major general, the governor of the province and above all of them, the chief of the Inter Services Intelligence agency (ISI) had confessed on the holy Quran in 2003 that the victim was in the custody of the ISI and that he would be released after the investigation.

The Judicial Commission to probe the cases of missing persons has also submitted a report to the Supreme Court of Pakistan that Mr. Bangulzai, the master tailor, was in the custody of secret services of Pakistan.

The dilemma is that since 2001 to date, the higher courts, the governments of the federation and Balochistan have failed to recover him because of the involvement of the army and its intelligence agencies in his disappearance.

Mr. Ali Asghar Bangulzai 50, the son of Ghulam Nabi was arrested the first time by secret services on June 1, 2000 from his tailoring shop. After 14 days he was released. After his release it was found that he had lost his memory because of the severe torture he had endured. He could not even recognise his own house where he was born. After his recovery he revealed to his family that he was kept in a torture cell at the basement of army’s Kulli camp situated at Quetta cantonment. During his confinement he was kept blindfolded at all times; his hands were cuffed and he was frequently suspended by the wrists by officials of ISI. This is according to his family members from he later told them. After his release for almost one year he was not able to run his tailoring shop.

Mr. Bangulzai was the resident of Chaki Shahwani, Sariab Road, Quetta, capital of Balochistan province. His tailor shop was in walking distance from his home. The army was suspicious that many people were visiting his shop and that he must be involved in militant activities.

Again, on October 18, 2001 Bangulzai was arrested along with his friend Mohammad Iqbal by men who came in army vehicles. Iqbal was released after 22 days he told Bangulzai’s family members that he was in an army torture cell. The family tried to contact the local officials and army command office for his whereabouts but they refused to meet the family. In early 2002, a constitutional petition was filed in the Balochistan high court, during hearing Mr. Iqbal recorded his statement that Bangulzai was in Kulli Army camp. He also took part in a press conference in Quetta Press Club with Bangulzai family members with regard to his arrest .The family members also submitted an application to SHO (Station head officer) Sariab Police Station with a request to lodge an FIR (First information report) about his illegal arrest and disappearance but the police refused to file the FIR because of the involvement of military intelligence agencies. The family of the victim also filed an application before the High Court to order police to file the FIR but the court could not help the family.

On April 27, 2002 family members of Bangulzai met the then Major General Abdul Qadir Baloch , who was Corp Commander of the province to inquire about the whereabouts of the Bagulzai. The family was given assurance that they would be informed about his whereabouts. The Corps Commander sent two officers from military intelligence to the house of victim on May 15, 2002 who told the family that Bangulzai was safe and in the custody of the ISI. As the interrogation is completed he would be released but officials refused to allow the family members to meet him.

In the meantime the family members in desperation tried to meet members of the parliament. They were able to meet Mr. Hafiz Hussain Ahmad MNA (Member of National Assembly) who took the family members to meet with the head of ISI (Inter services intelligence) Baluchistan, Brigadier Siddique. During the meeting Brigadier called Colonel Bangush and asked him to bring the file of Bangulzai. After seeing the file Brigadier Siddique congratulated the family and said that Banguzai was in their custody. During different meetings the family members of Bangulzai insisted that they wanted to meet with him but every time they were told that there was no need as he would be released soon.

On October 4, 2003 Brigadier Siddique asked the family members of the victim to provide clothes for him because all arrangements had been made for his release.

For the whole one year family members waited for his release and then they adopted the peaceful protest. Bangulzai’s children left their studies and went on a token hunger strike camp in front of Quetta Press Club for the safe recovery of their father and to record their peaceful protest. The camp was there for one year.

On July 14, 2005 the Baluchistan High Court on the pressure from lawyers and civil society took suo motto notice and directed the Superintendent of Police (SP) of Chilton Town, Mr. Wazeer khan, to investigate and register an FIR for Bangulzai’s disappearance by the state intelligence agencies. During the hearing seven persons recorded their statements that army personnel had arrested him and that had assured them many times he would be released from army custody. As usual on the pressure from army Sariab Police Station Quetta refused to register the FIR.

On March 2006 Hafiz Hussain Ahmad, the member of national assembly, visited the token hunger strike camp of family members of Bangulzai and told the local news papers representatives that the head of ISI (Inter services intelligence) Brigadier Siddique has himself acknowledge before him that Bangulzai is in their custody and also assured him that he will be released soon. Hafiz deplored the attitude of ISI officers for lying and misguiding the people.

On February 2007 the family members of Bangulzai submitted a petition in Supreme Court of Pakistan, in which Hafiz Hussain Ahmad’s written statement was submitted in the Supreme Court of Pakistan.

In continuation of their efforts the family members filed a petition in the Supreme Court of Pakistan in February 2007 where Mr. Hafiz Hussain Ahmad, the MNA, has submitted his written statement that ISI had assured him several times that Bangulzai is in their custody. The Supreme Court then ordered on January 31, 2010 that the FIR of his disappearance should be filed. The court also directed the police to file the FIRs of other disappeared persons also.

The Joint Investigation Team to probe the cases of disappeared persons, formed by the government of Pakistan, has also submitted a report to the Supreme Court that according to the testimonies of the eye witnesses and other supportive statements Bangulzai was in the custody of state intelligence agencies.

A Judicial commission to probe the cases of the missing persons, formed by the Federal Government on the instruction from Supreme Court has also came to the conclusion in the March 2010 that after recording all the witnesses that Bangulzai was arrested by the Pakistan secret services and that he was in its custody. The report was duly submitted to the Supreme Court of Pakistan.

During the hearing of the Judicial Commission, Mr.Hafiz Hussain Ahmad (MNA) has recorded his statement that the Brigadier Siddique, head of the ISI in Balochistan province, has acknowledge to him that Bangulzai was in their custody and soon he would be released. Mohammad Iqbal who was arrested with Bangulzai also recorded his statement that they were arrested by secret services and that Bangulzai was in their custody. The other witnesses as well recorded their statements that Brigadier has several times accepted in front of them, and Corps commander Qadir Baloch sent his two (MI) (Military intelligence) personnel to the victim’s family and said that he was in the custody of an Intelligence Agency.

It is appalling that 11 years after his arbitrary arrest and incommunicado detention by the intelligence agencies Bangulzai’s whereabouts are still unknown. None of the institutions and officials who were involved in his disappearance has been put on trial despite the fact that they have admitted his detention 11 years ago! Judges hearing disappearances cases have stated in court that any intelligence officer involved in the disappearance of an individual should be placed on trial but this has never happened. Not one has ever been punished.

In the presence of all the evidence that he was illegally arrested and kept incommunicado in an army torture cell by the ISI, the weakness of the country’s justice system is blatantly evident before the powerful military and security agencies. His disappearance by the military is contravention of the basic rights guaranteed by the constitution of Pakistan for example:

Article 4 — The right of individuals to be dealt with by law, Article 10–safe guards as to arrest and detention — the arrested person should be produced within 24 of his arrest before the magistrate, Article 14 — no person should be tortured, Article 15 — freedom of movement and Article 25- all citizens are equal before the law.

The case of Bangulzai is a clear demonstration that the laws of the country do not apply to the military and intelligence agencies. When it comes to providing justice to the ordinary citizen in the face of these institutions the judiciary remains silent.

The Asian Human Rights Commission urges that Mr. Bangulzai should be released immediately from the captivity by the army and its intelligence agencies and that the officials responsible for this arrest and disappearance are prosecuted. Furthermore, the compensation must be paid to his family for the ordeal suffered by him and his family members.

http://www.humanrights.asia/news/ahrc-news/AHRC-STM-014-2011

 


Advertisements

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, war game on January 26, 2011 at 2:09 am

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

حصّہ (VI )

مترجم نواز بگٹی

 

چھاپہ مار جنگجو کی ایک اور اہم خصوصیت ہوتی ہے اس کا لچکدار رویہ، ہر طرح کے حالات سے ہم آہنگ ہونے کی اس کی صلاحیت ، اور اپنی خدمات کو کاروائی کے دوران کسی بھی حادثے کی روشنی میں تبدیل کرنا- روایتی جنگی طریقوں پر اڑے رہنے کی بجاۓ، چھاپہ مار جنگجو جنگ کے ہر لمحے نت نۓ حربے استعمال کرتے ہوۓ دشمن کو مسلسل حیرت زدہ کیے رکھتا ہے –

ابتدائی مرحلے میں حالات لچکدار ہوتے ہیں ، ایسے مخصوص مقامات جہاں سے دشمن نہیں گزر سکتا، یا پھر ایسے مقامات جہاں سے دشمن کی توجہ بٹائی جاۓ- راستے کی مشکلات سے بتدریج آسان انداز میں نمٹتے ہوۓ ، آگے بڑھتا دشمن اکثر اپنے آپ کو اچانک مضبوط حصار میں گھرا ، آگے بڑھنے کے کوئی امکانات نہ  دیکھ کر ششدر رہ جاتا ہے- ایسا سرہ تبھی ممکن ہے جب چھاپہ مار میدان کے گہرے مشاہدے کے بعد ایسے مقامات کا انتخاب کرتے ہیں جو ناقابل تسخیر ہوں- یہاں حملہ آور سپاہ کی تعداد کے بر عکس دفاعی سپاہ کی تعداد فیصلہ کن حیثیت اختیار کرتی ہے- مناسب دفاعی تعداد کی تعیناتی سے ایک پورے بٹالین کو کامیابی سے شکست دی جا سکتی ہے-یہ عمائدین کی ایک بڑی ذمہ داری ہوتی ہے کہ موزوں طور پر صحیح  وقت اور جگہ کا انتخاب کریں جسکا دفاع بغیر پسپائی اختیار کیۓ ممکن ہو –

چھاپہ مار فوج کے حملہ کرنے کا انداز بھی جداگانہ ہے ، دشمن کو ششدر و حیرت زدہ کرتے ہوۓ جارحانہ انداز کا آغاز ، نا قابل مزاحمت، اور پھر اچانک مکمل سکوت – بچا کھچا دشمن اس یقین سے کہ فریق مخالف میدان سے فرار ہو چکا ہے ، آرام دہ محسوس کرنا شروع کرتا ہے ، معمولات زندگی کی انجام دہی کے لیۓ اپنے قلعے یا چھاؤنی میں آرام کرتے دشمن کو اچانک  دوسری جانب سے ایک نۓ مقام سے حملہ کر کے جنجھوڑا جاتا ہے، جبکہ چھاپہ ماروں کی اصل قوت چھپ کر کسی بھی طرح کے رسد و کمک کو نشانہ بنانے کا انتظار کر رہی ہوتی ہے- پھر کسی وقت چھاؤنی کی کسی دفاعی چوکی پر چھاپہ ماروں کی طرف سے  اچانک حملہ کیا جاتا ہے ، اور اسے مغلوب کر کے اس پر قبضہ کیا جاتا ہے – بنیادی چیز  اچانک اور حیران کن حکمت عملی ، اور حملوں کا تیز تسلسل ہے-

سبوتاژ کا عمل بھی انتہائی اہم ہے – بہت ضروری ہے کہ ایک انقلابی اور انتہائی پر اثر جنگی طریقے “سبوتاژ” اور دہشت گردی کے فرق کو سمجھا جاۓ، کہ دہشت گردی بذات خود ایک بے اثرعمل ہے ، جس میں بغیر امتیاز ، معصوم انسان نشانہ بنتے ہیں ، وو لوگ بھی جو آگے چل کر انقلاب کا اہم حصّہ ثابت ہو سکتے ہیں-  جب کسی انتہائی اہم انقلاب دشمن فرد/ گروہ کو نشانہ بنانہ مقصود ہو ، اسکی انقلاب دشمن سرگرمیوں ، اسکی جانب سے روا رکھی جانی والی مظالم ،یا پھر نا گزیر وجوہات کہ جن کی بناء پر ایسے شخص/ افراد کو راستے سے ہٹانا سودمند ہو ، تب دہشت گردی کا حربہ سودمند ثابت ہو سکتا ہے – مگر کم اہم لوگوں کو مارنے کا مشوره نہیں دیا جا سکتا ، کیونکہ اس سے صرف شدید رد عمل ہی کی توقع کی جا سکتی ہے ، جس کے نتیجے میں اموات میں مزید اضافے کا امکان ہوتا ہے-

دہشت گردی کے مختلف متنازعہ آراء میں ایک نقطہء اکثر پایا جاتا ہے – اکثر خیال کیا جاتا ہے کہ اس سے پولیس کے ظلم و جبر کو شہ ملتی ہے ، عوام کے ساتھ قانونی یا نیم خفیہ رابطوں میں رکاوٹ آتی ہے، اور مجموعی اتحاد نا ممکن بن جاتا ہے  جو کہ نازک موقعوں پر انتہائی اہم ہے – یہ درست ہے ، لیکن خانہ جنگی میں ایسا کیا جاتا ہے ، کیونکہ مخصوص شہروں / قصبوں میں  ریاستی افواج / اداروں کا جبر اس حد تک بڑھ چکا ہوتا ہے کہ ہر طرح کی قانونی کوششوں کو پہلے ہی دبایا جاتا ہے ، اور ایسی کوئی بھی عوامی تحریک کو نا ممکن بنایا جا چکا ہوتا ہے جسے مسلح اعانت حاصل نہ ہو -اس لئے بہت ضروری ہے کہ اس طرح کی کسی بھی کاروائی کی منصوبہ بندی انتہائی محتاط انداز میں کرتے ہوۓ  ، ممکنہ نتائج ، اور اس کے انقلاب پر ممکنہ اثرات کا بغور جائزہ لیا جاۓ- کسی بھی طرح منظم سبوتاژ ہمیشہ ایک بہترین اور پراثر  ہتھیار ہوتا  ہے ، اگرچہ یہ اس انداز میں ہو کہ پیداواری ذرائع متاثر نہ ہوں ، آبادی کے ایک بڑے حصّے کو مفلوج کیا جاۓ ، تا وقتیکہ اسکا مفلوج ہونا معاشرے کے عام زندگی پر اثر انداز نہیں ہوتا- مشروبات کے کارخانے کو سبوتاژ کرنا ایک ظالمانہ اقدام ہوگا ، مگر کسی پاور پلانٹ کے لئے یہ سب نہ صرف درست ہوگا بلکہ اس کا مشوره بھی دیا جاتا ہے- پھی صورت میں صرف مزدوروں کی ایک مخصوص تعداد ہی بیروزگاری کا شکار ہو گی ، جبکہ مجموعی صنعتی زندگی میں کوئی اتار چڑھاؤ نہیں آنے والا -مگر دوسری صورت میں مزدور تو بیروزگار ہونگے ہی ، اس کے ساتھ ساتھ خطّے کی مجموعی زندگی بھی مفلوج ہو کر رہ جاۓ گی- سبوتاژ کے طریقوں کو ہم آگے چل کر دوبارہ زیر بحث لائیں گے-

دشمن افواج کا ایک پسندیدہ  ہتھیار ، جسے جدید جنگوں میں فیصلہ کن حیثیت کا سمجھا جاتا ہے ، وہ ہے فضائیہ- کچھ بھی ہو جاۓ چھاپہ مار جنگ کے ابتدائی مرحلے میں ، بکھرے علاقوں میں ، جوانوں کے چھوٹے چھوٹے اجتماعات پر  اس کا کوئی فائدہ نہیں ہوتا-فضائیہ کا استعمال  نظر آنے والی منظم دفاع کو منظم طریقے سے ختم کرنے کے لئے کیا جاتا ہے ، ایسی دفاعی تعمیرات کے لیۓ بڑی فوجی اجتماعات کا ہونا ضروری ہے جو بہر حال اس طرح کی لڑائیوں میں ممکن نہیں-دور دراز میدانی علاقوں میں چھاپہ مار افواج کی بکھری ہوئی ٹکڑیوں کے پیش قدمی کو روکنے کے لیۓ بھی فضائیہ کسی خاص کارکردگی کا مظاہرہ کرنے سے قاصر ہے ، اس طرح کے خطرے سے بچنے کے لیۓ چھاپہ مار رات کے وقت اپنی نقل و حرکت جاری رکھ سکتے ہیں-

دشمن کے کمزور ترین پہلوؤں میں ایک نقلو حرکت کے لیۓ زمینی اور ریل راستوں کا استعمال ہے- زمینی راستوں یا ریل کے گزرگاہوں پر اپنے کمک و رسد کی قدم بہ قدم حفاظت با لکل نا ممکن ہے- گزرگاہ کے کسی بھی مقام پر بارودی مواد کا مناسب مقدار لگا کر راستے کو مسدود کیا جا سکتا ہے، یا پھر کسی گاڑی کے گزرتے وقت دھماکہ کر کے بیک وقت راستہ کاٹنے کے ساتھ ساتھ دشمن کو شدید مالی و جانی نقصان بھی پہنچایا جا سکتا ہے -دھماکہ خیز مواد کی بھی مختلف اقسام ہیں ، انہیں بیرونی ذرائع سے خریدا  بھی جا سکتا ہے ، یا پھر آمر افواج سے چھینے گۓ بم بھی استعمال کیۓ جا سکتے ہیں ، لیکن ایسا ہمیشہ نہیں ہوتا – باہر سے تیار بم بھی برآمد کیے جا سکتے ہیں ، اور انہیں تحریک کے زیر تسلط علاقے میں کسی خفیہ تجربہ گاہ میں بھی تیار کیا جا سکتا ہے ، لیکن اس کا دارومدار چھاپہ ماروں کی صلاحیتوں اور حالات پر ہوتا ہے-

ہم اپنی تجربہ گاہوں میں پاؤڈرتیار کرتے تھے جسے دھماکہ خیز  ٹوپی کی جگہ استعمال کیا جاتا تھا ، ہم نے بوقت ضرورت بارودی سرنگوں کے دھماکوں کے لیۓ  مختلف اقسام کی دھماکہ خیز اشیاء بھی کامیابی سے بنا لی تھیں – ان میں بہتر نتائج الیکٹرک  ذرائع استعمال کرنے والے آلات سے حاصل ہوئیں- ہم نے جو پہلا بم پھوڑا وہ آمر افواج کے جہازوں سے گرایا گیا  تھا- ہم نے اس کے گرد کئی دھماکہ خیز ٹوپیاں لپیٹیں ، پھر ایک بندوق کو گھوڑے کی جگہ استعمال کیا ، بندوق کے گھوڑے کو ایک رسی باندھ کر قدرے فاصلے پر رہتے ہوۓ کھینچا گیا ، جب دشمن کا ایک ٹرک اس کے قریب سے گزر رہا تھا ہم نے یہ دھماکہ کیا-

ان طریقوں کو بہت بہتر حد تک ترقی دی جا سکتی ہے- ہمیں ایسی اطلاعات بھی مل رہی ہیں کہ الجیریا میں فرانسیسی قبضہ گیروں کے خلاف ریڈیائی لہروں کی مدد سے دور رہتے ہوۓ بارودی سرنگوں کو پھوڑا جا رہا ہے –

سڑک کنارے گھات لگا کر دشمن کے کارواں کو بارودی سنگ سے نشانہ بنانے  کے بعد بچے کھچے سپاہیوں کی تباہی ، ہتھیاروں اور گولہ بارود کے حصول میں بہت ثمر آور ثابت ہوتی ہے- متحیر دشمن اپنا اسلحہ استعمال کرنے کے قابل نہیں رہتا ، نہ ہی اسکے پاس فرار کا وقت ہوتا ہے، لہٰذا تھوڑا سا بارود خرچ کر کے بڑے نتائج حاصل کیۓ جاتے ہیں- مسلسل جھٹکوں کے بعد دشمن بھی اپنی حکمت عملی تبدیل کرتا ہے ، تنہا ٹرکوں کے بجاۓ تیز رفتار گاڑیاں قافلوں کی شکل میں استعمال کرنا شروع کرتا ہے . بہر حال  درست میدان کا انتخاب کر کے ، کارواں کو بارودی سرنگ کے ذریعے منقسم کرنے کے بعد کس ایک گاڑی پر اپنی تعام تر قوت مرکوز کر کے اسی طرح کے نتائج حاصل کیۓ جا سکتے ہیں- اس طرح کی کاروایوں کے لیۓ چھاپہ ماری کی ضروری حربوں کو ذہن میں رکھنا چاہیے ، وہ کچھ یوں ہیں ، میدان کی مکمل معلومات ، فرار کے راستوں کو پیشگی نظر میں رکھتے ہوۓ محفوظ بنانا، تمام ثانوی راستوں پر کڑی نگاہ رکھنا جن سے حملے کی جگہ تک کسی بھی قسم کی رسد پہنچانا ممکن ہو، مقامی آبادی سے قریبی تعلقات ، تا کہ بوقت ضرورت ، رسد ، نقل و حرکت اور اور زخمیوں کے لیۓ عارضی یا مستقل پناہ میں مدد کو یقینی بنایا جا سکے، منتخب مقام پر عددی برتری ،نقل و حرکت کی یقینی آزادی  اور ممکنہ حد تک تازہ دم سپاہ پر انحصار –

اگر ان تمام شرائط یقینی طور پر پورا کیا جاتا ہے تو دشمن کے کاروان رسد پر حملے کے نتیجے میں سامان رسد میں قابل قدر حصّے داری بن  سکتی ہے-

چھاپہ مار جنگ کی بنیادی اصولوں  میں سے ایک علاقے کے عوام سے مکمل ہم آہنگی ہے -حتیٰ کہ دشمن سے ہم آہنگ ہونا بھی بہت ضروری ہے ،حملے کے وقت  دشمن سے مکمل غیر لچکدار رویہ رکھنا چاہیے ، تمام چھوٹے سے چھوٹے عناصر  کے بارے میں غیر لچکدار رویہ جنھیں  جاسوسی ، یا قتل و غارت میں  ذرا بھی استعمال کیا جا سکتا ہو ، اور دشمن کے سپاہیوں یا ممکنہ عسکری فرائض انجام دینے والوں سے ممکنہ حد تک رحم سے پیش آنا چاہیے – یہ ایک اچھی حکمت عملی ہوگی کہ جب تک محفوظ ٹھکانے دستیاب نہ ہوں کسی کو قیدی نہ بنایا جاۓ – بچ جانے والوں کو آزاد کیا جاۓ – زخمیوں کی دستیاب وسائل کے دائرہ کار میں رہتے ہوۓ خوب دیکھ بھال کی جاۓ – مؤثر انداز میں سرگرم رہنے کے لیۓ عام آبادی سے انتہائی قابل احترام سلوک کیا جانا چاہیے ، انکے رسم و رواج کی پاسداری نہایت ضروری ہے – اپنے عمل سے جابر افواج کے مقابلے میں اپنی اخلاقی برتری ثابت کرنی ہے- مخصوص حالات کے علاوہ کسی کو بھی اپنی صفائی کا موقع دیے  بغیر سزا نہیں دینی چاہیے-

 

 

شہید علی جان بلوچ – میں کس کے ہاتھ پہ اپنا لہو تلاش کروں

In Baloch Freedom movement, Baloch genocide, FC, isi, mi on January 24, 2011 at 3:52 am
شہید علی جان بلوچ – میں کس کے ہاتھ پہ اپنا لہو تلاش کروں
تحریر نواز بگٹی
آج پھر بلوچ شہداء کے قافلے میں ایک اور معصوم علی جان بلوچ کا اضافہ ہوا – اطلاعات کے مطابق ، آج صبح کوئٹہ کے نواحی علاقے اختر آباد کے قریب ایک اٹھارہ سالہ نوجوان کی مسخ شدہ لاش ملی ، جسے مقامی پولیس نے بولان میڈیکل کالج ہسپتال منتقل کیا – ہسپتال ذرائع کے مطابق متوفی کے جسم پر شدید تشدد کے شواہد ملے ہیں ، اور سر میں گولی کا واضح نشان بھی دیکھنے میں آیا ہے – بعد ازاں متوفی کی شناخت مچھ کے رہائشی  بی-ایس-او آزاد کے شہید راہنما ممتاز کرد کے چھوٹے بھائی کی حیثیت سے ہوئی – متوفی کو خفیہ اداروں نے  گزشتہ سال 23 نومبر کو سبی سے گرفتار کیا تھا – واضح رہے کہ متوفی کے بڑے بھائی ممتاز کرد کو بھی اسی انداز میں خفیہ اداروں نہیں گرفتار کر کے اپنی عقوبت گاہوں میں شدید تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد اس کی مسخ شدہ لاش بے گور و کفن سڑک کنارے پھینک دیا تھا –
18 سالہ علی جان کا گناہ شاید بلوچ ہونا ہی تھا ، ورنہ ایک معصوم بچہ پاکستان کے تخت و تاج کے لئے اتنا خطرناک تو یقیناً نہ تھا کہ بغیر کسی عدالتی کاروائی کے اسے یوں قتل کر کے لب سڑک پھینکنے کی ضرورت محسوس ہوتی – نام نہاد پاکستانی میڈیا بلوچ نوجوانوں کے گمراہ ہونے اور انکا غیر ملکی ہاتھوں میں کھیلنے کا پروپگینڈہ بہت زور شور سے کرتی ہیں – کیا ان کے پاس اس طرح کے بہیمانہ نسل کش اقدامات کے بعد کوئی توجیہ موجود ہے کہ علی جان بلوچ کے ورثاء و رفقاء کیونکر پاکستان زندہ باد کا نعرہ لگائیں- علی جان بلوچ کے ہم جماعت کیونکر اپنے اسکول میں پاکستان کا قومی ترانہ گائیں، اور پاکستان کے پرچم کو سربلند دیکھنا ان کے لئے نا ممکن نہیں؟ یہ قتل ہندوستان کی را یا امریکی سی-آئی-اے کا کارنامہ نہیں بلکہ آپ کے ریاستی اداروں کی سیاہ کاری ہے-
آج حضرت داتا گنج بخش کا عرس منانے والے منافق کیا جانتے ہیں کہ داتا صاحب انکے کارناموں سے کتنے خوش ہو کر فردوس برین میں بھنگڑے ڈال رہے ہونگے – شاید اس بے حس قوم پر لعن تعن کرنا بھی شاید فضول ہی ہے –
علی جان  بلوچ کی والدہ کے غم میں شریک ہونا اور اسے کم کرنا تو شاید کسی زی روح کے بس کی بات نہیں ، اور اسے زمانے کی ستم ظریفی کہیے کہ اس موقع پر بھی اسے بیساختہ مبارکباد دینے کو جی کر رہا ہے کہ یہ اسی ماں کا اعزاز ہے جس کی کوکھ سے دو دو شہیدوں نے جنم لیا –  ہم ایسے بے وقعت لوگوں کے سلام کی وہ محتاج تو نہیں ، پھر بھی انھیں فرشی سلام –
الله کرے بلوچ قوم اپنے اس معصوم لہو کا پاس رکھتے ہوے اپنی جدوجہد کو مزید تیز کر دے ، تا کہ پاکستان کی وحشی ، درندہ صفت ، غیر انسانی ریاست سے نجات حاصل کر پائیں – تا کہ اپنی آئندہ نسلوں کو ان کی چیرہ دستیوں سے محفوظ رکھ سکیں –

ھون زرور کار ءَ کئیت یک روچے مئے قوم ءِ –  تاوان نہ بنت ھچبر نازیک مئے ماسانی

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare, war game on January 24, 2011 at 3:03 am
 

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

حصّہ ( V  )

مترجم نواز بگٹی

چھاپہ مار جنگ کے حربے

( چہ بولیویا کے پہاڑوں میں پائپ پیتے ہوۓ ) عسکری زبان میں حربہ ، اس عملی طریقہء کار کو کہتے ہیں ، جس کے ذریعے عظیم سٹریٹیجک مقاصد کو حاصل کیا جاتا ہے –
ایک پہلو سے تو یہ حکمت عملی کی تکمیل ہیں جبکہ دوسرے پہلو سے دیکھا جاۓ تو یہ اپنے اندر مخصوص  قوانین کا درجہ رکھتی ہیں- معنوی اعتبار سے حربے حتمی مقاصد کے مقابلے میں متغیر ہوتے ہیں ، ان میں نسبتاً زیادہ لچک ہوتی ہے اور انہیں جدوجہد کے دوران مسلسل اصلاحی عمل سے گزارناچاہیے – حکمت عملی پر مبنی حربے مستقل رہتے ہیں ، جبکہ دوسرے تمام حربے لچکدار اور متغیر ہوتے ہیں- پہلی چیز جسے مد نظر رکھنا چاہیے وہ ہے چھاپہ مار کاروائی کو دشمن کی کاروائیوں سے ہم آہنگ کرنا-
چھاپہ مار گروہ کی بنیادی خصوصیت ، مسلسل متحرک رہنا ہے -اسی کی وجہ سے چھاپہ مار اس اہل ہوتے ہیں کہ تھوڑے سے وقت میں کسی بھی مخصوص جگہ سے دور ہٹ جائیں ، یا پھر مختصر وقت میں پورے خطّے سے دور نکل جائیں ، اگر ضروری ہو تو وہ اس اہل بھی ہوتے ہیں کہ کسی بھی محاصرے سے بچنے کے لیۓ لڑائی کی سمت  مسلسل تبدیل کرتے رہیں-اگر حالات کا تقاضہ ہو تو چھاپہ مار گروہ اپنی تمام تر قوت محاصرے کو توڑنے کے لیۓ وقف کر سکتی ہے ،محاصرہ ہی دشمن کا واحد ہتھیار ہے جو چھاپہ مار گروہ کو دو بدو لڑائی پر مجبور کر سکتی ہے ، اور ممکنہ طور پر ایسی لڑائی چھاپہ ماروں کے حق میں بہتر نتائج کا حامل نہیں ہوتی ، ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ محاصرے  کے نتیجے میں دشمن خود محاصرے میں آ جاۓ ، ( یعنی ایک طاقتور فوج کے محاصرے میں آۓ ہوۓ چند چھاپہ مارشکار کے سامنے پھیکے ہوۓ چارے کا کام دیتے ہیں ، اور پشت پر موجود انکے مددگار دشمن کا محاصرہ کر لیتے ہیں اور یوں  دشمن افواج  کا ایک بڑا حصّہ چند ایک چھاپہ ماروں کے رحم و کرم پر ہو ، جسے چھاپہ مار مکمل طور پر بربادی سے دوچار کر لیں یا پھر انکے رسد کو کاٹ کر انہیں بے یار و مددگار کر دیں)- ایسے لڑائیوں میں متحرک رہنے کی اس خاصیت کو نام نہاد ” منٹ ” یعنی “لمحہ ”  کہا جاتا ہے ، یہ استعارہ رقص سے لیا گیا ہے ، چھاپہ مار گروہ دشمن کے کسی مقام یا پیش قدمی کرتے مسلح ٹکڑی کا محاصرہ کر لیتے ہیں ، مثال کے طور پر یہ دشمن کا ہر چار جانب سے مکمل گھیراؤ کرتے ہیں ، ہر مقام پر پانچ سے چھہ جنگجو تعینات کر کے ، اپنے لیۓ محاصرے سے بچنے کے لیۓ مناسب فاصلہ رکھتے ہوۓ ، اب کسی ایک مقام سے لڑائی کا آغاز ہوتا ہے ، اور فوج اسی مقام کی طرف پیشقدمی شروع کرتی ہے ، وہاں موجود چھاپہ مار پیچھے ہٹتے ہیں ، بصری رابطہ رکھتے ہوۓ ، اب دوسرے مقام پر موجود چھاپہ ماروں کی طرف سے لڑائی شروع ہوتی ہے – فوج اپنی کاروائی کو دوہراتی ہے اور چھاپہ مار تحریک بھی یہی کرتی ہے – پاس کامیابی سے دشمن فوج کی ایک ٹکڑی کے حرکت کرنے کی صلاحیت صلب کرنا ممکن ہو جاتا ہے ، اسے بھاری تعداد میں گولہ بارود کے استعمال پر مجبور کرتے ہیں ، اور زیادہ خطرہ مول لیۓ بغیر دشمن افواج کے حوصلوں کو پست کرنے کا سبب بن جاتے ہیں-
بالکل یہی حکمت عملی رات کو بھی استعمال کیا جا سکتا ہے ، زیادہ قریب رہتے ہوۓ زیادہ جارحانہ انداز میں ، کیونکہ (تاریکی ) کی صورت میں چھاپہ ماروں کا محاصرہ کرنا بہت مشکل ہو جاتا ہے –  چھاپہ مار گروہ کی ایک اور اہم خصوصیت  رات کے اوقات میں نقل و حرکت کی صلاحیت ہے -جس کی وجہ سے وہ حملے کے لیۓ آگے بڑھ سکتے ہیں اور اگر دھوکے یا غداری کا خطرہ ہو تو اس مخصوص علاقے سے نکل کر دوسرے علاقے تک بھی چلے جاتے ہیں- چھاپہ مار گروہ میں افرادی قوت کی کمی اس بات کی متقاضی ہوتی ہے کہ تمام حملے اچانک کیے جائیں کہ دشمن حیرت زدہ رہ جاۓ ، یہ صلاحیت چھاپہ مار گروہ کو اس قابل بناتی ہے کہ کوئی بڑا نقصان اٹھاۓ بغیر دشمن کو بہت بڑے نقصان سے دو چار کر دیں- چھاپہ مار گروہ کے نقصانات کو پورا کرنے کے لیۓ بہت زیادہ وقت چاہیے ، کیونکہ ایک چھاپہ مار جنگجو کی تیاری میں بہت زیادہ مہارت کا عمل دخل ہوتا ہے ، اور مد مقابل افواج کے مقابلے میں کم از کم دس گنا زیادہ-
چھاپہ مار گروہ کے کسی شہید کی نعش کو اسلحہ و گولہ بارود کے ساتھ نہیں چھوڑنا چاہیے ، یہ ہر چھاپہ مار کا بنیادی فرض ہے کہ پہلا موقع پاتے ہی جنگی لحاظ سے انتہائی قیمتی اشیاء کو شہید کی نعش سے الگ کر کے اپنے قبضے میں لے لے- دراصل اسلحہ و گولہ بارود کی دیکھ بھال ، اور اس کا مخصوص طریقہء استعمال چھاپہ مار جنگجوؤں کی ایک اور خصوصی صلاحیت ہوتی ہے – چھاپہ مار گروہ اور باقاعدہ فوج کے درمیان کسی بھی لڑائی کے دوران صرف فائرنگ کے مخصوص طریقے کی بناء پر دونوں میں واضح فرق کرنا ممکن ہو جاتا ہے ، باقاعدہ فوج کی طرف سے بھاری فائرنگ اور چھاپہ ماروں کی جانب سے بہت کم اور بہت ہی درست نشانے پر فائرنگ –
ایک مرتبہ ہمارے ایک ہیرو نے جو اب اس دنیا میں نہیں رہے ، اپنی مشین گن کو چار سے پانچ منٹ تک مصروف کار رکھا ، برسٹ پر برسٹ فائر کرتا رہا تا کہ دشمن کی تیز رفتار پیشقدمی کو روک سکے – اس کے اس عمل کی وجہ سے ہماری سپاہ شدید تذبذب کا شکار ہوۓ ، فائرنگ کے انداز سے وہ سمجھ رہے تھے کہ اس اہم مقام پر دشمن کا قبضہ ہو گیا ، کیونکہ یہ ان بہت کم اور مخصوص مواقع میں ایک تھا ، جب کسی انتہائی اہم مقام کے دفاع میں ،  گولیوں کو بچاۓ رکھنے کے بنیادی قانون سے روگردانی کی جاتی ہے-

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare, war game on January 23, 2011 at 4:10 pm

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

حصّہ ( IV )

مترجم نواز بگٹی

 

چھاپہ مار حکمت عملی

چھاپہ مار اصطلاح میں  حکمت عملی ، مجموعی فوجی صورتحال کی روشنی میں مقاصد کے حصول ، اور منزل تک پہنچنے کے تمام راستوں کے تجزیے کو کہا جاتا ہے-
ایک چھاپہ مار گروہ کے نقطہء نظر سے حکمت عملی کی درست تعریف جاننے کے لیۓ ضروری ہے کہ بنیادی طور پر دشمن کی اختیار کردہ طریقہء کار کا جائزہ لیا جاۓ- اگر حتمی مقصد فریق مخالف کی مکمل تباہی ہے تو دشمن کو اس طرح کی خانہ جنگی میں دھکیل دیا جاۓ جس سے چھاپہ مار گروہ کے تمام اجزاء ترکیبی کو مکمل تباہ کرنے کا مقصد حاصل ہو جاۓ – دوسری طرف چھاپہ مار گروہ کے لیے ضروری ہے کہ وہ  ان تمام ذرائع کا بغور جائزہ لیں جن کے ذریعے دشمن اپنے ان مقاصد کو حاصل کر سکتا ہو – افرادی قوت کے ذرائع ، نقل و حرکت ، مقبول معاونت ، ہتھیار ، قائدین کی صلاحیت ، غرضیکہ ہر شے جس پر اسکا انحصار ہو سکتا ہے -لازمی ہے کہ ، دشمن کی مکمل شکست کے حتمی منزل کو ذہن میں رکھتے ہوۓ ،اسی مطا لعہ کی بنیادوں پر ہم اپنی حکمت عملی کو وضح کریں-
کچھ بنیادی پہلو ایسے ہیں جن کا مطا لعہ کرنا چاہیے ، مثال کے طور پر ہتھیار ، اور ان ہتھیاروں کے استعمال کا طریقہء کار – انتہائی اہم ہے کہ اس طرح کی لڑائیوں میں ایک ٹینک ، اور ایک جہاز کی اہمیت کو بھی پرکھا جاۓ- دشمن کے ہتھیار ، اسکا گولہ بارود اس کی عادات کو مد نظر رکھا جاۓ ، کیونکہ چھاپہ مار گروہ کے رسد کا اصل ذریعہ دشمن کے ہتھیار ہی ہوتے ہیں- اگر انتخاب کا ذرا سا بھی امکان ہو تو ہم وہی اقسام استعمال کرنا پسند کریں گے جو کہ دشمن کے زیر استعمال ہیں- چونکہ چھاپہ مار جنگجو کی سب سے بڑی کمزوری ہتھیاروں کی کمی ہوتی ہے ، اسے یقیناً دشمن کی صفوں سے پورا کرنا ہوگا-
جب مقاصد کا تجزیہ و تعین ہو جاۓ تو ضروری ہے کے حتمی مقاصد کے حصول تک کی جانے والی اقدامات کا  ترتیب وار جائزہ لیا جاۓ – اسکی پیشگی منصوبہ بندی کی جانی چاہیے ، اگرچہ اس میں بڑھتی لڑائی کے نتیجے میں غیر متوقع حالات کے مطابق  ترمیم و توازن کی گنجائش ہونی چاہیے –
ابتدائی طور پر چھاپہ ماروں کی تمام تر توجہ اپنے آپ کو تباہی و بربادی سے محفوظ رکھنے پر مرکوز رہنی چاہیے – آہستہ آہستہ چھاپہ مار گروہ کے اراکین عام طرز زندگی سے ہم آہنگی  پیدا کر لیتے ہیں- یہ نسبتاً آسانی سے جارح افواج کو جل دے کر فرار ہونے میں کامیاب ہوتے ہیں کیونکہ اب یہ روز مرّہ کا معاملہ بن جاتا ہے- اس مقام تک پہنچنے کے بعد چھاپہ مار ، ناقابل رسائی مقامات پر دشمن کی پہنچ سے دور رہتے ہوۓ ، یا دشمن کے حملوں کو روکنے والی قوت کو جمع کر کے، دشمن کو بتدریج کمزور کرنے کی جانب پیش قدمی کرتا ہے -ابتدائی طور پر ایسی کاروائی کا آغاز چھاپہ ماروں کے خلاف جنگ کے  قریبی مقامات سے ہوتا ہے ، بعد میں اسے  دشمن کی جغرافیائی حدودمیں گہرائی تک  وسیع کیا جاتا ہے ، اسکے مواصلات پر حملے کر کے ، بعد میں اسکے فعال مراکز کو ہراساں کر کے یا ان پر حملے کر کے ،غرضیکہ چھاپہ مار قوت کی تمام تر صلاحیتوں کو بروۓ کار لاتے ہوۓ دشمن پر عذاب نازل کیا جاۓ –
جھٹکے جاری رہنے چاہیئں – میدان جنگ میں دشمن سپاہ کی نیندیں حرام ہوں ، اس کی چوکیوں پر حملے کیے جانے چاہیئں اور انھیں منظم طریقے سے ختم کرنا چاہیے – ہر لمحہ دشمن اس خوف میں مبتلا ہو کہ وہ محاصرے میں ہے – جنگلوں ، اور دشوار گزار علاقوں میں تو اس طرح کی کاروائیاں دن رات کرنی چاہیئں ، جبکہ کھلے یا میدانی علاقوں میں جہاں دشمن افواج کی گشتی سپاہ کے مداخلت کے امکانات ہوں وہاں ایسی کاروائیاں رات کے اوقات میں ہوں- یہ سب کرنے کے لیۓ علاقے کے عوام کا مکمل تعاون اورکامل جغرافیائی معلومات کا ہونا بے حد ضروری ہے- یہ دو ضروریات چھاپہ مار کی زندگی کے ایک ایک لمحے پر اثر انداز ہوتی ہیں- اسی لیۓ حال و مستقبل کے مراکز کے مطالعہ کے ساتھ ساتھ پر جوش عوامی مقبولیت کے کام پر بھی زور دینا چاہیے –  انقلاب کے محرکات کی وضاحت ، اسکے اختتامی مقاصد ، اور اس ناقابل تردید حقیقت کی تشہیر کہ دشمن کا عوامی قوت پر فتح حاصل کرنا  نا ممکن ہے ، ایسی سرگرمیاں ہیں جن سے وسیع تر عوامی مقبولیت حاصل کی جا سکتی ہے –  جو اس حقیقت کو تمام شکوک و شبہات سے بالا تر نہیں سمجھتا ، چھاپہ مار جنگجو نہیں بن سکتا-
ابتدائی طور پر عمومی مقبولیت کے اس کام کو انتہائی رازداری سے انجام دینا چاہیے – وہ کچھ اس طرح کہ ہر کسان ، جس سماج میں کاروائی ہو رہی ہے اس سماج کے ہر رکن کو بتا دینا چاہیے کہ جو کچھ وہ دیکھتے یا سنتے ہیں اس کا ذکر کسی سے نہ کریں ، مقامی آبادی سے مدد طلب کرنی چاہیے ، کہ انکی وفاداری چھاپہ ماروں کو وسیع تر ضمانتیں فراہم کر سکتا ہے، اسکے بعد ان افراد کو باہمی رابطوں کے مہم میں استعمال کیا جا سکتا ہے ، ہتھیاروں کے نقل و حمل کے ساتھ ساتھ یہ اپنے جانے پہچانے علاقوں میں بہترین رہبر کا کام بھی دیتے ہیں – اسکے بعد ممکن ہے کہ منظم اجتماعی کاروائیوں کے مرحلے تک پہنچا جاۓ، جیسے کہ عام ہڑتال –
خانہ جنگی میں ہڑتالوں کو کلیدی اہمیت حاصل ہے ، لیکن ہڑتالوں کو  ضروری سلسلوں تک توسیع دینا ضروری ہے ، کیونکہ ایسا ہمیشہ نہیں ہوتا بلکہ فطری طور پر بہت کم ہوتا ہے –  اس لئے ضروری ہے کہ تمام بنیادی حالات پیدا کیے جائیں ، بنیادی طور پر انقلاب کے مقاصد کی وضاحت یا عوامی قوت کا مظاہرہ کر نے سے ایسے حالات پیدا کیے جا سکتے ہیں-
چھاپہ مار جنگ کے دوسرے خطرناک ہتھیار ،  “سبوتاژ” کی کاروائیوں کے لیۓ ، یہ بھی ممکن ہے کہ یکساں خصوصیات رکھنی والے ایسے گروہوں کا سہارا لیا جاۓ ، جنھوں نے ماضی میں کم خطرناک مہمات میں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہو –  یہ بھی ممکن ہے کہ ، علاقے کی صنعتی زندگی کو معطل کر کے ،کسی شہر کی  آبادی کو،  صنعتوں سے محروم کر کے ، بجلی ، پانی ، اور ہر طرح کے مواصلاتی رابطوں سے  محروم کر کے ، سواۓ مخصوص اوقات کے شاہراہوں کے سفر کو غیر محفوظ بنا کے ، پوری کی پوری فوج کو ہی مفلوج کیا جاۓ – اگر یہ سب حاصل ہو جاتا ہے تو دشمن افواج کے حوصلے پست ہو جائیں گے ، مخالف کے لڑنے والے حصوں کے سپاہ بے حوصلہ ہو جائیں گے ، اور یوں مختصر سے عرصے میں پھل پک کر توڑے جانے کے لیۓ تیار ہو جاتا ہے- اس سے لگتا ہے کہ چھاپہ مار جنگ کا میدان وسیع تر ہوا جاتا ہے ، لیکن غیر ضروری طور پر میدان جنگ کو وسعت دینے سے گریز کرنا چاہیے- ہمیشہ ضروری ہے کہ کاروائیوں کے مرکز کو مضبوط رکھا جاۓ ، اور دوران جنگ اس مرکز کے استحکام کی مسلسل کوششیں جاری رکھنی چاہیئں – زیر تسلط علاقے کی آبادی کے نظریات کا پاس رکھنے کے ضروری اقدامات  ، اور ان سے فائدہ اٹھانا بھی ضروری ہوتا ہے –  نہ سدھرنے والے انقلاب مخالفین کا یقینی قلع قمع کیا جانا بھی اشد ضروری ہوتا ہے- خالص دفاعی اقدامات ، جیسے کہ بارودی سرنگیں ، جنگجو ٹکڑیاں، اور ذرائع مواصلات ، کا کامل ہونا بھی نہایت ضروری ہے –
جب چھاپہ مار گروہ مسلح طاقت اور جنگجوؤں کی تعداد کے معاملے میں قابل قدر مقام حاصل کر لے ، تو اسے نئی گروہ بندیاں کرنی چاہیئں ، یہ بلکل اسی طرح ہے جیسے شاہد کی مکھیوں کے چھتے میں ایک نئی ملکہ مکھی پیدا ہوتی ہے ، اور پھر مکھیوں کے جھرمٹ کے ایک حصّے کے ساتھ نۓ علاقے کی طرف چلی جاتی ہے -بنیادی چھتے کو کم خطرناک علاقے میں چند وفادار چھاپہ ماروں کے جھرمٹ میں رہنا چاہیے، جبکہ نیا جھرمٹ دشمن کے حدود میں داخل ہو کر اپنی کاروائیاں جاری رکھے ، اور نئی گروہ بندیوں کا یہ چکر اسی طرح چلتا رہے-
ایک وقت ایسا آ جاتا ہے جب زیر تسلط علاقہ ان چھاپہ مار گروہوں کے لیۓ کم پڑتا ہے ، اور دشمن کے مظبوط دفاع والے علاقوں کی جانب پیش قدمی ، اور طاقتور دشمن کا دو بدو مقابلہ ضروری ہو جاتا ہے – ایسے وقت میں یہ گروہ مل کر ایک متحدہ محاظ تشکیل دیتے ہیں ، اور جنگ کی سی صورتحال پیدا ہو جاتی ہے ، ایسی جنگ جو باقاعدہ فوجوں کے بیچ لڑی جاۓ – بہر حال نئی وجود میں آنے والی فوج اپنے سابقہ چھاپہ مار مرکز سے لا تعلق نہیں رہ سکتی ، اور اسے ، اسی انداز میں نۓ گروہ تیار کر کے مد مقابل افواج کی پشت پر تعینات کرنی چاہیئں ، جو کہ پرانی طریقہء کار کے مطابق دشمن کے زیر تسلط علاقوں میں اپنی کاروائیاں جاری رکھیں گے ، تاوقتیکہ مکمل غلبہ نہیں حاصل ہوتا-
پس یوں چھاپہ مار عام حملے کے مرحلے تک پہنچ جاتے ہیں – مضبوط مراکز کے محاصرے ، دشمن کے کمک کی شکست  کے سبب ، اجتماعی کاروائیوں کی وجہ سے ، ہمیشہ سے کہیں زیادہ پرجوش ، پورے قومی خطّے میں ، اپنے حتمی مزل کے قریب پہنچ جاتے ہیں ، یعنی جنگ ؛ فتح-
(جاری ہے …….)

 

ثناء خوان تقد یس مشرق کہاں ہے ؟

In Baloch genocide, Role of Pakistani media, state on January 23, 2011 at 1:41 am
ثناء خوان تقد یس مشرق کہاں ہے ؟

تحریر نواز بگٹی

مشرق ، جسے اعلیٰ انسانی اقدار کے حوالے سے دنیا بھر میں ایک ممتاز مقام حاصل رہا ہے ، اور مشرقی تاریخ کے ہر شاعر نے ان روایات کی تعریف میں زمین و آسمان کے قلابے ملاۓ –  عظیم مشرقی روایات میں خواتین کے احترام کو آفاقی حیثیت حاصل رہی ہے – نام نہاد اسلامی جمہوریہ پاکستان ، مشرقی اقدار کے ساتھ ساتھ اسلامی اقدار کے وراثت کا بھی دعویدار ہے- یہاں نہ صرف سیاست دانوں ، بلکہ عوام اور نام نہاد سول سوسایٹی کی تن بھی اسلامی اقدار کے حوالوں پر ٹوٹتی ہے – ایک معصوم خاتون کو سر عام کوڑوں کی سزا دیتے ، دکھانے والے ویڈیو کے رد عمل میں پورے سوات کو تورا بورا بنا دیا جاتا ہے – یا پھر ایک آنٹی شمیم کو حبس بیجا میں رکھنے کے جرم میں لال مسجد کے ٢٢٠٠ طالبات کو بہیمانہ طور پر قتل کیا جاتا ہے ، اور یہ سب صرف اور صرف اسلام کے نام پر ہوتا ہے یا انسانی اقدار کی ڈھال کا سہارا لیا جاتا ہے – ڈاکٹر عافیہ صدیقی کی گرفتاری کو لے کر پورے پاکستان کی سیاسی ، سماجی اور مذہبی طبقے سرا پا احتجاج بن جاتے ہیں-
انہی روایت کے پاسدار ملک کی ریاستی افواج نے کوئٹہ شہر میں گزشتہ دنوں ایک شخص اول خان بگٹی کی رہائش گاہ پر دھاوا بول کر تمام تر انسانی و اخلاقی حدود کو پار کرتے ہوۓ ، خاتون خانہ کو نہ صرف تشدد کا نشانہ بنایا بلکہ بزور قوت اپنے ساتھ لے بھی گۓ – آج ٧٢ گھنٹے گزرنے کے باوجود  مذکورہ خاتون کو کسی عدالت میں پیش کرنا تو درکنار سرکار یہ بتانے سے بھی گریزاں ہے کہ اس پر کیا بیتی ، وو کہاں کس حال میں کیسس کی قید میں ہے- نام نہاد عدالتیں جو الو ، ٹماٹر کے نرخوں کو اعتدال میں رکھنے کے لئے تو از خود نوٹس لیتے ہیں ، لیکن انھیں بلوچ قوم پر اپنی افواج کے چنگیزی مظالم نظر نہیں آتے- سول سوسایٹی کو اپنے اللے تللوں سے فرصت نہیں ، اور عوام کو پاکستان زندہ باد کے نعروں سے-  اگر بلوچستان میں بلوچوں کی عصمتیں محفوظ نہیں رہ سکتیں تو کسی کو بلوچوں سے اخلاقیات کی امید بھی نہیں رکھنی چاہیے – اور بلوچ سرداروں کو ہر برائی کی جڑ قرار دینے والوں سے گزارش ہے کہ آنکھیں کھول کے اپنے پڑھے لکھے سرداروں کی انسانیت سوز مظالم کو بھی ایک نظر دیکھ لیں –
حقیقت ہے کے طاقت کسی اخلاقی ، آئینی ، یا مذہبی قاعدے قانون کی پابند نہیں ہوتی – طاقت تو صرف طاقت ہوتی ہے چاہے وہ کسی وحشی سانڈ کے پاس ہو یا کسی مہذب قوم کے تربیت یافتہ فوج کے پاس ، اور اس سے صرف کمزور کو کچلنے اور اپنی حیوانی جبلتوں کی تسکین کا کام لیا جاتا ہے –  بلوچ قوم کے نوجوانوں کے پاس اپنی عصمتوں کی حفاظت کے لئے ہتھیار اٹھانے کے علاوہ اگر کوئی مجوزہ راستہ کسی کے پاس ہے تو براہ کرم بتلا دیں-

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare, war game on January 22, 2011 at 11:26 am

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

حصّہ سوم

مترجم نواز بگٹی

ماؤ کے چینی تحریک کا آغاز اگرچہ جنوب کے منظم مزدوروں کی جدوجہد سےہوتا ہے ، جسے شکست سے دوچار ہونا پڑا ، اور قریب  تھا کہ تحریک تباہی سے دوچار ہوتی ، پھر اسے دوبارہ استحکام اور آگے بڑھنے کا موقع ینان کے لانگ مارچ کے بعد نصیب ہوتا ہے ، جب تحریک اپنی بنیادیں دیہی علاقوں میں رکھتی ہے اور زرعی اصلاحات کو اپنا بنیادی مقصد بناتی ہے – اسی طرح ہوچی منہ کی تحریک بھی چاول کے کاشتکاروں کی مرہون منت ہے ، جن کے حقوق فرانسیسی نو آبادیاتی دیو نے غصب کیے ہوۓ تھے -انہی کی طاقت کے سہارے وہ (ہوچی منہ ) نوآبادی نظام کو شکست دینے کے لیۓ آگے بڑھتا ہے – متذکرہ دونوں معاملات میں جاپانی حملہ آوروں کے خلاف ملی حمیت کا جذبہ تو کارفرما تھا ہی ، لیکن زمین کی ملکیت کا اقتصادی پہلو بھی یکسر ختم نہیں ہوتا- الجیریا ہی کی مثال کو سامنے رکھیں جہاں عظیم تر عرب قومیت کے پہلو میں بھی اقتصادیات کھڑی نظر آتی ہیں – درحقیقت دس لاکھ کے قریب فرانسیسی تقریباً الجیریا کے تمام قابل کاشت رقبے سے مستفید ہو رہے ہیں -چند ایک ملک ، جیسے کہ پورٹو ریکو ہے ، جہاں جزیرے کی مخصوص حالات چھاپہ مار جنگ کی اجازت نہیں دیتے ، یہاں بھی  روز مرّہ بنیادوں پر مجروح ہوتی ملی حمیت کے نتیجے میں قومی بیداری کی لہر کے پیچھے اقتصادی وجوہات کارفرما ہیں ، اس( قومی بیداری) کا ماخذ بھی کاشتکاروں (جنکی اکثریت پہلے ہی کھیت مزدور کی غلامانہ حیثیت میں رہتی ہے  ) کی ، “یانکی” حملہ آوروں کے زیر قبضہ زمینوں کو واگزار کروانے سے ہے  – یہی وہ مرکزی خیال ہے جو تیس سالہ جدوجہد آزادی کے دوران  مشرقی کیوبا کی ریاستوں کے چھوٹے کاشتکاروں ، کسانوں اور غلاموں کو حریت پسندوں کی جانب راغب کرتی ہے ، تاکہ وہ زمین کی ملکیتی حقوق کا مشترکہ دفاع کر سکیں

 

چھاپہ مار جنگ کی مرحلہ وار ترقی کے امکانات ، ( کہ آگے چل کر یہ باقاعدہ جنگ میں بدل سکتی ہے ) کو مد نظر رکھتے ہوے کہا جا سکتا ہے کہ اس طرح کی لڑائیاں اپنے مخصوص کردار کے باوجود دوسرے کے  لئے بار آور بیج  ، تعارفی مراحل کی حیثیت رکھتے ہیں- چھاپہ مار جنگ کے روایتی جنگ میں بدل جانے کے امکانات اتنے ہی ہوتے ہیں ، جتنے کہ ہر چھوٹی لڑائی ، مقابلے یا جھڑپ کے  بعد دشمن کی شکست کے بڑھتے ہوۓ امکانات، اسی لئے بنیادی اصول یہی ہے کہ کوئی بھی لڑائی ، جھڑپ ، یا مقابلہ اس وقت تک لڑی جاۓ جب تک  اس میں واضح فتح نہیں حاصل ہوتی- یہاں چھاپہ مار جنگ کی ایک شرارتی تعریف کا بھی ذکر کرتا چلوں ، کہ ” چھاپہ مار جنگجو ، جنگوں کے  پراسرار دیو مالائی دربار سے منسلک ہوتا ہے ” ، یہ رازداری، دھوکہ دہی ، اور متحیر کن خصوصیات کی طرف اشارہ ہے ، جنھیں چھاپہ مار جنگ کے بنیادی عناصر کے طور پر جانا جاتا ہے – یہ مخصوص  پراسرار آفاقی / دیومالائی  کیفیت فطری طور پر حالات کی پیدا کی ہوئی ہے، جنکے تحت مخصوص اوقات میں ، روایتی رومانوی یا حمایتی طریقہء کار کے برعکس عمل کی متقاضی ہوتی ہے ، جو ہمیں یقین دلانا چاہتی ہیں کہ جنگ لڑی جا چکی ہے

جنگ ہمیشہ ایک ایسی جدوجد کا نام ہے جس میں مدمقابل قوتیں ایک دوسرے کو نیست و نابود کرنے کی کوشش کرتی ہیں- وہ اپنی مقصد کو حاصل کرنے کے لئے تمام ممکنہ حکمت عملیوں اور حربوں سے استفادہ کرتے ہیں. عسکری حربے اور حکمت عملیاں گروہ کے  مجوزہ مقاصد اور انھیں حاصل کرنے کے ذرائع کو ظاہر کرتی ہیں- یہ ذرائع دشمن کی تمام کمزوریوں کے بغور جائزے کے بعد ان سے فائدہ اٹھانے کے ہوتے ہیں- کسی بھی بڑی فوج کے لڑنے والے انفرادی پلٹن کی خصوصیات بعینہ چھاپہ مار گروہ کی خصوصیات کو ظاہر کرتی ہیں- ایسی پلٹنیں بھی رازداری ، دھوکا دہی ، اور متحیر کرنے والی حکمت عملی کا استعمال کرتی ہیں ، اگر وو ایسا نہیں کر پاتیں تو اس سے دشمن کی بہترین جاسوسی کا نتیجہ ہی قرار دیا جاتا ہے – مگر چونکہ چھاپہ مار گروہ اپنے جوہر میں منقسم ہوتی ہے اور اسکا دائرہ عمل بہت بڑے خطّے کا احاطہ کرتی ہے ، جس پر دشمن کا مکمل اختیار نہیں ہوتا ، لہٰذا چھاپہ مار اپنے حملوں میں دشمن کو متحیر کرنے کے عنصر کو یقینی بنا لیتا ہے – اور ایسا کرنا اس کے لیۓ از حد ضروری ہے- مارنا اور فرار ہونا . بعض لوگ مزاحیہ طور پر بھی ایسا کہتے ہیں، اور یہی درست ہے – مارو اور بھاگ جاؤ ، انتظار کرو ، شبخون کے لئے بیٹھے رہو ، پھر مارو اور بھاگ جاؤ ، ہر بار کا اسی طرح کا عمل تاکہ دشمن کو سکون میسر نہ ہو سکے – اس میں یہی سب ہے ، ہو سکتا ہے یہ منفی خصوصیت ہو ، شکست تسلیم کرنے کا رویہ ، یا پھر دو بدو لڑائی سے گریز ہو – بہر حال یہ چھاپہ مار جنگ کی عمومی  حکمت عملی کا نتیجہ ہیں – جس کا مقصد ہرجنگ کی طرح اپنے منطقی انجام تک فتح اور دشمن کی مکمل تباہی ہی ہے

پس یہ واضح ہے کہ چھاپہ مار جنگ ایک ایسا مرحلہ ہے جو بذات خود فتح یاب ہونے کی صلاحیت نہیں رکھتا – یہ جنگ کا شروعاتی مرحلہ ہے ، جو مسلسل ترقی کرتا رہتا ہے ، حتیٰ کے ایک وقت ایسا آ جاتا ہے جب چھاپہ مار جنگجو گروہ ایک باققیدہ فوج کی شکل اختیار کر لیتی ہے – تب جا کر یہ اس قابل ہوتا ہے کہ دشمن کو آخری جھٹکا دے کر تباہی سے دوچار کرے ، اور فتح یاب ہو- کامیابی ہمیشہ باقاعدہ فوج کو ہی حاصل ہوتی ہے ، اگرچہ اس کا آغاز چھاپہ مار جنگجو گروہ ہی کرتے ہیں-
جیسے کہ کسی بھی جدید فوج کے کسی جرنیل کے لئے ضروری نہیں کہ وہ میدان جنگ میں اپنی سپاہ کے سامنے اپنی جان دے ، اسی طرح ایک چھاپہ مار جنگجو چونکہ خود ہی اپنا جرنیل ہوتا ہے اس لئے ضروری نہیں کہ وہ ہر لڑائی میں اپنی جان جان آفرین کے سپرد کر دے- وہ اپنی جان دینے کے لئے ہمہ وقت تیار رہتا ہے ، چھاپہ مار جنگ کا یہی مثبت پہلو ہوتا ہے کہ اس کا ہر سپاہی ، کسی نظریے کی تحفظ کے لئے نہیں بلکہ نظریے کو حقیقت کا روپ دینے کے لئے اپنی جان دینے کے لئے  تیار ہوتا ہے-یہی بنیادی بات ہے ، چھاپہ مار جنگ کا اصل جوہر – معجزاتی طور پر ، تھوڑے سے لوگوں کا یہ گروہ ، عظیم عوامی قوت کا ہراول دستہ ، فوری نتائج کے مروجہ حربوں سے بہت آگے نکل جاتا ہے ،نظریاتی مقاصد کے حصول کے لئے  فیصلہ کن فتح کی سرحدوں کو چھوتا ہوا ، ایک نئی سماج کی تشکیل کے لئے ، پرانی اور فرسودہ روایات کو توڑتے ہوۓ، اور انجام کار جس سماجی انصاف کے لئے وہ لڑتا رہا ، اسے حاصل کر لیتا ہے –
پس یہ  تمام کم مایہ خصوصیات حقیقی عظمت میں تبدیل ہو جاتی ہیں ، عظمت انجام جو ان کا مقصد ہوتا ہے ، یہ واضح ہوتا ہے کہ ہم مقاصد کے حصول کی خاطر کسی قابل مذمت ذرائع کے استعمال کی بات نہیں کر رہے – مقابلے کا یہی رویہ ، ایسا رویہ جس میں کسی بھی لمحے کے لئے خوف کا شائبہ تک شامل نہ ہو ، منطقی مقاصد کے حصول کی خاطر لڑنے کی یہی مستقل مزاجی ہی دراصل ایک چھاپہ مار جنگجو کی عظمت ہوتی ہے –

(جاری ہے …….)

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In BLA, bnf, bra, gurriella warfare, war game on January 22, 2011 at 3:54 am

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

(حصّہ دوئم )

 

مترجم نواز بگٹی

 

تیسرے عامل کا تعلق بنیادی حکمت عملی سے ہے – یہاں یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ جو لوگ چھاپہ مار جنگ کا مرکز شہروں کو سمجھتے ہیں وہ درحقیقت کم ترقی یافتہ امریکی دنیا کے طول و عرض میں روز مرہ معاملات کی انجام دہی کے لئے دیہی سماج کے بھرپور کردار کو بھول رہے ہوتے ہیں – یقیناً شہری سماج کے منظم مزدوروں کی جدوجہد کی اہمیت بھی کچھ کم نہیں ، لیکن حقیقی مسلح جنگ میں انکی عملی شمولیت کے امکانات کا محتاط جائزہ لینا از حد ضروری ہے، خصوصاً ایسے حالات میں جن شہریوں کے تحفظ کی روایتی  آئینی و ریاستی ضمانتیں معطل ہوں یا انھیں جان بوجھ کر نظر انداز کیا جا رہا ہو- ایسی صورت میں غیر قانونی مزدوروں کی تحریک کو شدید خطرات کا سامنا ہوتا ہے- انھیں چاہیے کہ رازداری سے غیر مسلح رہ کر اپنی سرگرمیاں جاری رکھیں- لیکن کھلے ڈلے دیہی ماحول میں حالات قدرے آسان ہیں ، یہاں غاصب قوتوں کی پہنچ سے دور ایک چھاپہ مار جنگجو مقامی آبادی کی مدد کر سکتا ہے- آگے چل کر ہم کیوبا کے انقلاب کے تجربات سے اخذ کیے گۓ ان تینوں نتائج کا بغور جائزہ لیں گے- فی الحال ہماری کوشش ہے کہ ان پر بنیادی عوامل کی حیثیت سے بحث کی جاۓ

 

چھاپہ مار جنگ ، جو کہ قوموں کی جدوجہد آزادی کی بنیاد ہے ، اپنے اندر متنوع خصوصیات اور متضاد حقائق رکھنے کے باوجود ہر جگہ قومی آزادی کی لازمی بنیادی اور مشترکہ خصوصیت رکھتی ہے- یہ ایک واضح حقیقت ہے کہ تمام جنگیں کچھ سلسلہاۓ سائنسی قوانین کی تابع ہونی چاہیئں ، اور اس موضوع پر لکھنے والے اکثر مصنفین بھی اس پر متفق نظر آتی ہیں- ان قوانین سے روگردانی کا انجام شکست کی گہری کھائیوں میں غرقاب ہونا ہی ہے- اگرچہ چھاپہ مار جنگ بھی جنگ ہی کا ایک مرحلہ ہے لہذٰا اسے بھی ایسی تمام قوانین کا تابع ہونا ضروری ہے، لیکن اپنی مخصوص پہلوؤں کی وجہ سے چھپا مار جنگ کو جاری رکھنے کے لئے ضروری ہے کہ چند حادثاتی اصولوں کو بھی تسلیم کیا جاۓ – کسی بھی خطّے کی انفرادی جغرافیائی و سماجی حالات ہی چھاپہ مار جنگ کی حتمی وضح قطع کا تعین کرتی ہیں ، لیکن کچھ عمومی قواعد ایسے بھی ہیں جو اس طرح کی تمام لڑائیوں پر یکساں لاگو ہوتی ہیں

 

یہاں ہمارا مقصد ، اس طرح کی لڑائیوں کے لئے ، ان بنیادی قاعدے قوانین کی شناخت و تعین ہے کہ جنکی پیروی آزادی پسند لوگوں کی تحریکوں میں لازمی ہے ،  حقائق کی رو سے نظریات کی تشکیل ، اور اپنے تجربات کو متشکل کر کے دوسروں کے فائدے کی غرض سے عام کرنا ہے

 

پہلے تو ہم اس سوال پر غور کرتے ہیں کہ چھاپہ مار جنگ لڑنے والی سپاہ آخر کون ہیں؟ ایک طرف ہمارے سامنے غاصبوں اور انکے زرخریدوں کا گروہ ہے ، ایک پیشہ ور فوج ، خوب مسلح و منظم ، جو کہ اکثر اوقات بیرونی و اندرونی (اپنے ملازم نوکر شاہی ) امداد سے بھی مستفید ہوتی ہے – جبکہ دوسری طرف ایک خطّے یا قوم کے لوگ ہیں  یہاں یہ بتانا بہت اہم ہے کہ چھاپہ مار جنگ ایک اجتماعی جنگ ہے ، عوامی جنگ – چھاپہ مار جنگجو تو مسلح مرکزے کی حیثیت رکھتے ہیں ، لوگوں کے ہر اول دستے کی حیثیت – انکی طاقت کا بہت حد تک عوام پر ہی انحصار ہوتا ہے – چھاپہ ماروں کو کسی بھی مد مقابل فوج کے مقابلے میں صرف اس لئے کمزور نہیں سمجھنا چاہیے کہ انکی گولہ باری کی صلاحیتیں نسبتاً کم ہیں- چھاپہ مار جنگ وہی لڑتے ہیں جنکے پاس وسیع عوامی تائید ہونے کے باوجود اپنی دفاع کے لئے قلیل اسلحہ و بارود دستیاب ہوتا ہے

 

چھاپہ مار جنگجو کو علاقے کے عوام کی مکمل حمایت کی ضرورت ہوتی ہے – یہ ایک نا قابل تردید شرط ہے – اسے مزید واضح کرنے کے لئے کسی بھی علاقے میں سرگرم عمل مجرموں کے گروہ کی مثال لی جا سکتی ہے ، یہ چھاپہ مار جنگجوؤں کی تمام خصوصیات رکھتی ہیں ، اشتراکیت ، قیادت کا احترام ، جرأت ، علاقے کی بہترین معلومات ، اور اکثر سمجھداری سے وضح کی گئی حکمت عملی بھی اختیار کرتے ہیں – لیکن جس چیز کی کمی رہتی ہے ، وہ ہے واضح عوامی حمایت -اور انجام کار ایسے گروہ ریاستی طاقتوں کی جانب سے بہت جلد گرفتاری یا تباہی سے دوچار ہوتی ہیں

 

چھاپہ مار گروہ کی سرگرمیوں کی شکل و صورت کا جائزہ لینے ، اسکی جدوجہد کے وضح قطع کو دیکھنے ، عوام میں اسکی جڑوں کو سمجھنے کے بعد ہم اس سوال کا جواب دے پاتے ہیں کہ ایک چھاپہ مار جنگجو آخر لڑتا کیوں ہے ؟ ہم اس حتمی نتیجے پر پہنچتے ہیں کہ چھاپہ مار ایک سماجی اصلاح کار ہوتا ہے ، کہ وہ اپنے ناراض عوام کے احتجاج پر لبیک کہتے ہوۓ غاصبوں کے مقابلے کے لیۓ  ہتھیار اٹھاتا ہے ، اور وہ اس سماجی نظام کی تبدیلی کے لیۓ ہتھیار اٹھاتا ہے جس میں اس کے غیر مسلح بھائی بند تکلیف دہ اور قابل رحم زندگی گزارنے پر مجبور ہیں – وہ ایک مخصوص وقت میں راج کرنے والے اداروں کے خلاف ڈٹ جاتا ہے ، اور اپنی تمام تر قوت ایسے ادارے کی تباہی کے جنگ میں جھونک دیتا ہے

 

جب ہم چھاپہ مار جنگ کی حکمت عملیوں کا مزید باریکی سے  جائزہ لیتے ہیں تو پتہ چلتا ہے کہ چھاپہ مار جنگجو کے لیۓ ارد گرد کے علاقے کی جامع معلومات ہونا بہت ضروری ہیں –  چھاپہ مار کا ، داخلی و خارجی راستوں ، تیز نقل و حرکت کے امکانات ، بہتر کمین گاہوں  ، اور فطری طور پر عوامی اعانت پرہی انحصار رہتا ہے –  یہاں واضح ہوتا ہے کہ چھاپہ مار جنگجو وسیع و عریض بیابانوں میں سرگرم رہتا ہے ، جہاں آبادی نسبتاً بہت کم ہوتی ہے – بہرحال ان علاقے کے لوگوں کی شدید خواہش ہوتی ہے کہ زمین کی مالکانہ حقوق کے غاصبانہ قوانین تبدیل ہوں اور  چھاپہ مار جنگجو بلاشبہ ایک زرعی اصلاح کار ہوتا ہے – وہ کاشتکاروں کی غالب اکثریت کے  خواہشات کی نمائندگی کر رہا ہوتا ہے – ان خواہشات میں کاشتکاروں کی اپنی زیر کاشت زمین کی ملکیت کے حقوق ، اپنے پیداواری ذرائع کے مالکانہ حقوق ، اپنے چوپیاؤں اور ہر اس چیز کے مالکانہ حقوق  جسے وہ تنکا تنکا جوڑتے ہیں اور اپنا سمجھتے ہیں ، جن پر انکی زندگی  اور موت کا انحصار ہوتا ہے

 

یاد رہے کہ موجودہ تشریحات کی رو سے دو طرح کی چھاپہ مار جنگیں اپنا وجود رکھتی ہیں – جن میں سے ایک کا تعلق عظیم فوجی طاقتوں کی مدد سے ہے ، جیسا کہ روس کے معاملات میں یوکرینی جنگجوؤں کا کردار رہا ہے ، ہم ان کے تذکرے سے پہلو تہی کریں گے – ہماری دلچسپی کا مرکزدوسری قسم کے جنگجو ہیں ، ایسے مسلح جنگجو گروہ جو کسی مستحکم قوت (نو آبادیاتی ہو یا نہ ہو )  سے پنجہ آزمائی کر رہے ہوں ، ایسا گروہ جسکا ایک مرکز ہو اور وہ دیہی علاقوں میں سرگرم ہو – چاہے لڑائی کے مقاصد کا ماخذ کوئی بھی نظریہ ہو ، ایسے تمام معاملات میں اقتصادی پہلو کا تعلق ہمیشہ زمین کی ملکیت سے ہوتا ہے

 

(جاری ہے …….)

 

 

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا

In gurriella warfare on January 20, 2011 at 3:39 pm

چھاپہ مار جنگ – ارنسٹو چہ گوارا
مترجم نواز بگٹی
باب اول – چھاپہ مار جنگ کے عمومی قواعد

 

چھاپہ مار جنگ کا جوہر

بٹیسٹا آمریت پر کیوبا کے عوام کی فتح صرف سورماؤں کی بہادری کی داستان ہی نہیں جیسے کے دنیا بھر کے اخبارات میں کہا جا رہا ہے ، بلکہ اس سے لاطینی امریکہ کے عوام کے بارے میں تمام پرانی روایات کو بھی تبدیل کر دیا – اس سے واضح طور پر کسی بھی غاصب قوت سے چھاپہ مار جنگ کے ذریعے عوام کی آزادی حاصل کرنے کی صلاحیت کا اظہار ہوتا ہے
ہم سمجھتے ہیں کہ کیوبا کے انقلاب میں کار فرما تین بنیادی عوامل ، لاطینی امریکا کی تحریکوں کی لئے سبق آموز ہیں . وہ عوامل ہیں ،
– مقبول قوتیں فوج کی خلاف جنگ جیت سکتی ہیں- انقلاب کے لیے تعام تر موافق حالات کا انتظار نہیں کرنا چاہیے ، بغاوت خود با خود حالات پیدا کر لیتی ہے- غیر ترقی یافتہ امریکہ میں دیہی علاقے مسلح جنگ کا مرکزی میدان ہیں
درج بالا عوامل میں پہلے دو تو انقلابیوں ، ان نام نہاد انقلابیوں کے شکست خوردہ رویے کی نفی کرتے ہیں ، جو اس مفروضے کے پیچھے پناہ لیتے ہیں کہ ایک منظم فوج کے خلاف کچھ بھی نہیں کیا جا سکتا ،یا پھر وہ بیٹھ کر منتظر رہتے ہیں کہ انقلاب کی تمام موضوعی و معروضی ضروریات ، حالات کو مہمیز کرنے کی کوشش کیے بنا ، مشینی انداز میں خود بخود پوری ہوں- جیسے کہ یہ مسائل ایک وقت میں کیوبا کے مبا حثوں کا موضوع ہوا کرتے تھے ، تا وقتیکہ ان سوالات کا جواب دینے کے لئے حقائق دستیاب ہو پاۓ، انہی معاملات پر شاید اب بھی امریکا میں بڑے پیمانے پر بحث ہوتی ہے – فطری طور پر یہ بلکل نہیں سمجھنا چاہیے کہ انقلاب کے تمام لوازمات چھاپہ مار سرگرمیوں ہی سے پیدا کیے جا سکتے ہیں- یہ ہمیشہ ذہن میں رکھنی چاہیے کہ ہمیشہ کم از کم بنیادی ضروریات ہوتی ہیں ، جنکی موجودگی کے بغیر پہلی بنیاد رکھنا اور اسے مستحکم کرنا عملی طور پر ممکن ہی نہیں – لازم ہے کہ لوگ سماجی مقاصد کے حصول کے لئے واضح طور پر پرامن سماجی ذرائع سے مایوس ہو چکے ہوں – جب جابر و غاصب قوتیں مروجہ قوانین کے برعکس طاقتور ہوں تو سمجھ لینا چاہیے کہ امن ختم ہو چکا

ایسی صورت میں عدم اطمینان کا عنصر اپنا اظہار زیادہ بہتر سرگرمی سے کر سکتا ہے -آخرکار مزاحمت کا یہی رویہ لڑائی کی شکل اختیار کر لیتا ہے ، جسکا آغاز ( غاصب کے ) ذمہ داروں کے رویے نے ہی کیا-جہاں کوئی حکومت عوامی راۓشماری کے نتیجے میں وجود میں آئی ہو ، چاہے دھوکے اور فریب سے ہی سہی ، اور ذرا سی بھی قانونی جواز رکھتی ہو ، وہاں چھاپہ مار جنگ فروغ نہیں حاصل کر سکتی ، تاوقتیکہ پر امن جدوجہد کے تمام امکانات ختم نہ ہو چکے ہوں

(جاری ہے ………….)

شہید بالاچ مری – بلوچ چہ گویرہ

In Baloch Freedom movement, Baloch Martyers, BLA, bnf, bra, bso on January 18, 2011 at 11:16 pm

شہید بالاچ مری – بلوچ چہ گویرہ

تحریر نواز بگٹی

 

١٧ جنوری ١٩٦٥ کو بلوچستان کے معروف مری قبیلے کے سردار نواب خیر بخش مری کے ہاں بلوچ مستقبل کے درخشاں ستارے میربالاچ مری کی پیدائش ہوئی-  نواب صاحب نے بلوچ تاریخ کے مثالی بلوچ گوریلا بالاچ گورگیج کے نام پر اپنے بیٹے کا نام رکھتے ہوۓ شاید اپنے ذہن کے کسی گوشے میں اپنے فرزند کے مستقبل کے کردار کا کوئی تعین کر رکھا ہو ، لیکن انکے وہم و گمان میں بھی نہ ہو گا کہ انکا بالاچ بلوچ قوم کی آزادی کے راہ میں اپنے پیش رو بالاچ گورگیج کو بہت پیچھے چھوڑ دے گا

ابھی میر بالاچ کا بچپنا ہی نہیں گزرا تھا کہ نواب خیر بخش مری نے بلوچوں پر ہونے والے ریاستی مظالم کے خلاف بلوچ قومی آزادی کا علم بلند کیا – اپنے اس عظیم مقصد  کے لئے انھوں نے قید و بند کی صعوبتوں کے ساتھ ساتھ ہجرت کی اذیت بھی برداشت کی
کہتے ہیں کہ بچوں کی تربیت میں ماؤں کا کردار کلیدی اہمیت رکھتا ہے – اور بلوچ ماں کی لوری تو اپنے بچے کے لئے چاکرا عظم  سے کسی کم کردار پر رضا مند ہی نہیں ہوتی- میر بالاچ مری بھی بہادر ماں کی عظمت بھری لوریوں اور روایتوں کے امین ، عظیم باپ کے زیر تربیت پروان چڑھتے ہیں- انتہائی کم عمری ہی میں بلوچ اپنے گھر میں بلوچ آزادی کے شمع سے روشنی حاصل کرنے کا شرف بھی حاصل رہا – بلوچ قوم پر روا رکھے جانے والے انسانیت سوز مظالم اور بلوچوں کی جبری ہجرت ، دوران جدوجہد یش آنے والے دلخراش واقعات کے چشم دید گواہ بھی رہے

اپنی ابتدائی تعلیم بلوچ گلزمین سے دور افغانستان میں حاصل کی ، جبکہ اعلیٰ تعلیم روس کے دارلحکومت ماسکو  اور برطانیہ کے دارلحکومت لندن سے حاصل کی – پاکستان کی پارلیمانی سیاست میں بھی جلا وطن رہ کر حصّہ لیا – بلوچستان صوبائی اسمبلی کے رکن منتخب ہوۓ – اور حلف برداری کی تقریب میں ” پاکستان سے وفاداری ” کے منافقانہ الفاظ استعمال کرنے سے یکسر انکار اور بلوچستان سے وفاداری کے تاریخی الفاظ کی گونج  ریاستی اسمبلی میں سنائی دی

جب ریاستی نظام میں رہتے ہوۓ بلوچ قومی حقوق کے حصول کو نا ممکن جانا تو نواب اکبر خان بگٹی شہید کی معیت میں بلوچ آزادی و خود مختاری کے لئے ہتھیار اٹھاتے ہوۓ یہ تاریخی کلمات کہے ” میں نے اپنے لئے جس راہ کا انتخاب کیا ہے اس کے لئے اکثر و بیشتر ون وے  ٹکٹ ہی دستیاب ہوتا ہے ” . بلوچ قوم کی جدوجہد آزادی میں جس محنت اور جانفشا نی  سے حصّہ لیا اسکی بدولت انھیں بلوچ تاریخ کے چہ گویرہ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے

ریاستی چیرہ دستیوں کے خلاف مسلح جدوجہد منظم کرنے کی وجہ سے ریاستی ادارے بہت عرصے سے میر بالاچ کی جان کے درپے تھے ، اور آخر کار ٢١ نومبر ٢٠٠٧ کو ریاست اپنے اس مذموم مقصد میں کامیاب ہوا ، اور بلوچ مجاہد میر بالاچ شہادت سے سرفراز ہوۓ – ریاستی افواج میر بالاچ مری کی شہادت کو اپنے لیۓ بہت بڑی فتح سمجھتی ہے ، ہر سال خصوصاً  میر بالاچ شہید کی روز پیدائش ١٧ جنوری ، اور روز شہادت ٢١ نومبر کو ریاستی افواج بلوچ قوم پر ظلم و بربریت کی انتہا کر دیتے ہیں . اپنی اسی روایت کو برقرار رکھتے ہوۓ اس سال بھی ١٧ جنوری کے دن ٥ بلوچ نوجوانوں کو اغوا کر کے اذیت ناک تشدد کے بعد انکی مسخ شدہ لاشیں وطن عزیز کے طول و عرض میں پھینک دی گئیں- بلوچ قوم پر چڑھائی کر کے گھروں کو جلایا گیا ، نوجوان شکل بگٹی کو شہید اور ٤٠ سے زائد بزرگوں اور جوانوں کو گرفتار کر کے نا معلوم اذیت گاہوں میں منتقل کیا گیا- تا کہ بلوچ قوم اپنے قومی ہیرو کو خراج تحسین پیش نہ کر سکیں

بالاچ شہید کی شہادت کا واقعہ اگرچہ بلوچ تحریک آزادی کے لئے انتہائی بڑا نقصان ہی رہا ، لیکن انکی شہادت نے بلوچ تحریک کو مزید مہمیز کر دیا . آج بلوچستان کے کونے کونے سے بلوچ نوجوان اپنا سر ہتھیلی پر رکھے میر بالاچ کے مقصد کی تکمیل کے راہ پر گامزن ہیں